Biblical Questions Answers

you can ask questions and receive answers from other members of the community.

Does John 3:5 teach that baptism is necessary for salvation? کیا جان 3:5 سکھاتی ہے کہ نجات کے لیے بپتسمہ ضروری ہے

As with any single verse or passage, we discern what it teaches by first filtering it through what we know the Bible teaches on the subject at hand. In the case of baptism and salvation, the Bible is clear that salvation is by grace through faith in Jesus Christ, not by works of any kind, including baptism (Ephesians 2:8-9). So, any interpretation which comes to the conclusion that baptism, or any other act, is necessary for salvation, is a faulty interpretation. For more information, please visit our webpage on “Is salvation by faith alone, or by faith plus works?”

John 3:3-7, “Jesus answered and said to him, ‘Truly, truly, I say to you, unless one is born again, he cannot see the kingdom of God.’ Nicodemus said to Him, ‘How can a man be born when he is old? He cannot enter a second time into his mother’s womb and be born, can he?’ Jesus answered, ‘Truly, truly, I say to you, unless one is born of water and the Spirit, he cannot enter into the kingdom of God. That which is born of the flesh is flesh, and that which is born of the Spirit is spirit. Do not marvel that I said to you, ‘You must be born again.'”

When first considering this passage, it is important to note that nowhere in the context of the passage is baptism even mentioned. While baptism is mentioned later in this chapter (John 3:22-30), that is in a totally different setting (Judea instead of Jerusalem) and at a different time from the discussion with Nicodemus. This is not to say Nicodemus was unfamiliar with baptism, either from the Jewish practice of baptizing Gentile converts to Judaism, or from John the Baptist’s ministry. However, simply reading these verses in context would give one no reason to assume Jesus was speaking of baptism, unless one was looking to read into the passage a preconceived idea or theology. To automatically read baptism into this verse simply because it mentions “water” is unwarranted.

Those who hold baptism to be required for salvation point to “born of water” as evidence. As one person has put it, “Jesus describes it and tells him plainly how—by being born of water and the Spirit. This is a perfect description of baptism! Jesus could not have given a more detailed and accurate explanation of baptism.” However, had Jesus actually wanted to say that one must be baptized to be saved, He clearly could have simply stated, “Truly, truly, I say to you, unless one is baptized and born of the Spirit, he cannot enter into the kingdom of God.” Further, if Jesus had made such a statement, He would have contradicted numerous other Bible passages that make it clear that salvation is by faith (John 3:16; John 3:36; Ephesians 2:8-9; Titus 3:5).

We should also not lose sight of the fact that when Jesus was speaking to Nicodemus, the ordinance of Christian baptism was not yet in effect. This important inconsistency in interpreting Scripture is seen when one asks those who believe baptism is required for salvation why the thief on the cross did not need to be baptized to be saved. A common reply to that question is: “The thief on the cross was still under the Old Covenant and therefore not subject to this baptism. He was saved just like anyone else under the Old Covenant.” So, in essence, the same people who say the thief did not need to be baptized because he was “under the Old Covenant” will use John 3:5 as “proof” that baptism is necessary for salvation. They insist that Jesus is telling Nicodemus that he must be baptized to be saved, even though he too was under the Old Covenant. If the thief on the cross was saved without being baptized (because he was under the Old Covenant), why would Jesus tell Nicodemus (who was also under the Old Covenant) that he needed to be baptized?

If “being born of water and the Spirit” is not referring to baptism, then what does it mean? Traditionally, there have been two interpretations of this phrase. The first is that being “born of water” is being used by Jesus to refer to natural birth (with water referring to the amniotic fluid that surrounds the baby in the womb) and that being born of the “Spirit” indicates spiritual birth. While that is certainly a possible interpretation of the term “born of water” and would seem to fit the context of Nicodemus’ question about how a man could be born “when he is old,” it is not the best interpretation given the context of this passage. After all, Jesus was not talking about the difference between natural birth and spiritual birth. What He was doing was explaining to Nicodemus his need to be “born from above” or “born again.”

The second common interpretation of this passage and the one that best fits the overall context, not only of this passage but of the Bible as a whole, is the one that sees the phrase “born of water and the Spirit” as both describing different aspects of the same spiritual birth, or of what it means to be “born again” or “born from above.” So, when Jesus told Nicodemus that he must “be born of water and the Spirit,” He was not referring to literal water (i.e. baptism or the amniotic fluid in the womb), but was referring to the need for spiritual cleansing or renewal. Throughout the Old Testament (Psalm 51:2,7; Ezekiel 36:25) and the New Testament (John 13:10; 15:3; 1 Corinthians 6:11; Hebrews 10:22), water is often used figuratively of spiritual cleansing or regeneration that is brought forth by the Holy Spirit, through the Word of God, at the moment of salvation (Ephesians 5:26; Titus 3:5).

The Barclay Daily Study Bible describes this concept in this way: “There are two thoughts here. Water is the symbol of cleansing. When Jesus takes possession of our lives, when we love Him with all our heart, the sins of the past are forgiven and forgotten. The Spirit is the symbol of power. When Jesus takes possession of our lives it is not only that the past is forgotten and forgiven; if that were all, we might well proceed to make the same mess of life all over again; but into life there enters a new power which enables us to be what by ourselves we could never be and to do what by ourselves we could never do. Water and the Spirit stand for the cleansing and the strengthening power of Christ, which wipes out the past and gives victory in the future.”

Therefore, the “water” mentioned in this verse is not literal physical water but rather the “living water” Jesus promised the woman at the well in John 4:10 and the people in Jerusalem in John 7:37-39. It is the inward purification and renewal produced by the Holy Spirit that brings forth spiritual life to a dead sinner (Ezekiel 36:25-27; Titus 3:5). Jesus reinforces this truth in John 3:7 when He restates that one must be born again and that this newness of life can only be produced by the Holy Spirit (John 3:8).

There are several reasons why this is the correct interpretation of the phrase born of water and the Spirit. First of all, we should note that Nicodemus found his literal interpretation of born again to be incomprehensible. He could not understand how a grown man could re-enter his mother’s womb and be “born again” physically (John 3:4). Jesus restates what He had just told Nicodemus, this time making a distinction between flesh and spirit (verse 6). Interestingly, the Greek word translated “again” or “anew” in John 3:3 and 7 has two possible meanings: the first one is “again,” and the second one is “from above.” “Born again,” “born from above,” and “born of water and Spirit” are three ways of saying the same thing.

Second, the grammar in John 3:5 would seem to indicate “being born of water” and “being born of the Spirit” are thought of as one action, not two. Therefore, it is not speaking of two separate births, as Nicodemus incorrectly thought, but of one birth, that of being “born from above” or the spiritual birth that is necessary for anyone to “see the kingdom of God.” This need for one to be “born again,” or to experience spiritual birth, is so important that Jesus tells Nicodemus of its necessity three different times in this passage of Scripture (John 3:3, 3:5, 3:7).

Third, water is often used symbolically in the Bible to refer to the work of the Holy Spirit in sanctifying a believer, whereby God cleanses and purifies the believer’s heart or soul. In many places in both the Old and New Testaments, the work of the Holy Spirit is compared to water (Isaiah 44:3; John 7:38-39).

Jesus rebukes Nicodemus in John 3:10 by asking him: “Are you the teacher of Israel, and do not understand these things?” This implies that what Jesus had just told him was something Nicodemus should have known and understood from the Old Testament. What is it that Nicodemus, as a teacher of the Old Testament, should have known and understood? It is that God had promised in the Old Testament a time was coming in which He would: “sprinkle clean water on you, and you will be clean; I will cleanse you from all your filthiness and from all your idols. Moreover, I will give you a new heart and put a new spirit within you; and I will remove the heart of stone from your flesh and give you a heart of flesh. I will put My Spirit within you and cause you to walk in My statutes, and you will be careful to observe My ordinances.” (Ezekiel 36:25-27). Jesus rebuked Nicodemus because he failed to recall and understand one of the key Old Testament passages pertaining to the New Covenant (Jeremiah 31:33). Nicodemus should have been expecting this. Why would Jesus have rebuked Nicodemus for not understanding baptism considering the fact that baptism is nowhere mentioned in the Old Testament?

While this verse does not teach baptism is required for salvation, we should be careful not to neglect baptism’s importance. Baptism is the sign or the symbol for what takes place when one is born again. Baptism’s importance should not be downplayed or minimized. However, baptism does not save us. What saves us is the cleansing work of the Holy Spirit, when we are born again and regenerated by the Holy Spirit (Titus 3:5).

جیسا کہ کسی ایک آیت یا اقتباس کے ساتھ، ہم اس بات کا اندازہ لگاتے ہیں کہ یہ کیا سکھاتا ہے پہلے اسے فلٹر کرکے جو ہم جانتے ہیں کہ بائبل اس موضوع پر سکھاتی ہے۔ بپتسمہ اور نجات کے معاملے میں، بائبل واضح ہے کہ نجات یسوع مسیح پر ایمان کے ذریعے فضل سے ہے، بپتسمہ سمیت کسی بھی قسم کے کاموں سے نہیں (افسیوں 2:8-9)۔ لہٰذا، کوئی بھی تعبیر جو اس نتیجے پر پہنچتی ہے کہ بپتسمہ، یا کوئی اور عمل، نجات کے لیے ضروری ہے، ایک غلط تشریح ہے۔ مزید معلومات کے لیے، براہ کرم ہمارے ویب پیج پر جائیں “کیا نجات صرف ایمان سے ہے، یا ایمان کے علاوہ کاموں سے؟”

یوحنا 3: 3-7، “یسوع نے جواب دیا اور اس سے کہا، ‘میں تم سے سچ کہتا ہوں، جب تک کوئی نئے سرے سے پیدا نہیں ہوتا، وہ خدا کی بادشاہی کو نہیں دیکھ سکتا۔’ نیکدیمس نے اُس سے کہا، ‘جب آدمی بوڑھا ہو جائے تو کیسے پیدا ہو سکتا ہے؟ وہ ماں کے پیٹ میں دوسری بار داخل ہو کر پیدا نہیں ہو سکتا، کیا وہ؟’ یسوع نے جواب دیا، ‘میں تم سے سچ کہتا ہوں کہ جب تک کوئی پانی اور روح سے پیدا نہیں ہوتا، وہ خدا کی بادشاہی میں داخل نہیں ہو سکتا۔ جو جسم سے پیدا ہوا ہے وہ گوشت ہے اور جو روح سے پیدا ہوا ہے وہ روح ہے۔ تعجب نہ کرو کہ میں نے تم سے کہا، ‘تمہیں دوبارہ پیدا ہونا چاہیے۔’

جب پہلے اس حوالے پر غور کیا جائے تو یہ نوٹ کرنا ضروری ہے کہ حوالہ کے تناظر میں کہیں بھی بپتسمہ کا ذکر نہیں ہے۔ جب کہ بپتسمہ کا تذکرہ بعد میں اس باب (یوحنا 3:22-30) میں کیا گیا ہے، یہ بالکل مختلف ماحول میں ہے (یروشلم کی بجائے یہودیہ) اور نیکودیمس کے ساتھ بحث سے مختلف وقت پر۔ اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ نیکودیمس بپتسمہ سے ناواقف تھا، یا تو غیر یہودیوں کو یہودیت میں تبدیل کرنے کے یہودی عمل سے، یا جان بپتسمہ دینے والے کی وزارت سے۔ تاہم، صرف ان آیات کو سیاق و سباق میں پڑھنا کسی کو یہ فرض کرنے کی کوئی وجہ نہیں ملے گا کہ یسوع بپتسمہ کی بات کر رہے تھے، جب تک کہ کوئی اس عبارت میں پیشگی تصور یا الہیات کو پڑھنا نہ دیکھ رہا ہو۔ اس آیت میں بپتسمہ کو خود بخود پڑھنا صرف اس لیے کہ اس میں “پانی” کا ذکر ہے ناجائز ہے۔

جو لوگ نجات کے لیے بپتسمہ لینا ضروری سمجھتے ہیں وہ ثبوت کے طور پر “پانی سے پیدا ہونے والے” کی طرف اشارہ کرتے ہیں۔ جیسا کہ ایک شخص نے کہا ہے، ”یسوع اسے بیان کرتا ہے اور اسے صاف صاف بتاتا ہے کہ کیسے—پانی اور روح سے پیدا ہو کر۔ یہ بپتسمہ کی ایک بہترین وضاحت ہے! یسوع بپتسمہ کی زیادہ تفصیلی اور درست وضاحت نہیں کر سکتا تھا۔ تاہم، اگر یسوع دراصل یہ کہنا چاہتا تھا کہ نجات پانے کے لیے کسی کو بپتسمہ لینا چاہیے، تو وہ واضح طور پر کہہ سکتا تھا، “سچ، سچ میں، میں تم سے کہتا ہوں، جب تک کوئی بپتسمہ نہیں لیتا اور روح سے پیدا نہیں ہوتا، وہ بادشاہی میں داخل نہیں ہو سکتا۔ خدا کا.” مزید، اگر یسوع نے ایسا کوئی بیان دیا ہوتا، تو وہ بائبل کے متعدد اقتباسات کی تردید کرتا جو یہ واضح کرتے ہیں کہ نجات ایمان سے ہے (یوحنا 3:16؛ یوحنا 3:36؛ افسیوں 2:8-9؛ ططس 3:5) .

ہمیں اس حقیقت کو بھی نہیں بھولنا چاہیے کہ جب یسوع نیکودیمس سے بات کر رہے تھے، مسیحی بپتسمہ کا حکم ابھی تک نافذ نہیں ہوا تھا۔ کلام پاک کی تشریح میں یہ اہم تضاد اس وقت نظر آتا ہے جب کوئی ان لوگوں سے پوچھتا ہے جو نجات کے لیے بپتسمہ لینے کی ضرورت سمجھتے ہیں کیوں کہ صلیب پر چور کو نجات پانے کے لیے بپتسمہ لینے کی ضرورت نہیں تھی۔ اس سوال کا ایک مشترکہ جواب ہے: “صلیب پر چور اب بھی پرانے عہد کے تحت تھا اور اس لیے اس بپتسمہ کے تابع نہیں تھا۔ وہ پرانے عہد کے تحت کسی اور کی طرح بچایا گیا تھا۔” لہذا، جوہر میں، وہی لوگ جو کہتے ہیں کہ چور کو بپتسمہ لینے کی ضرورت نہیں تھی کیونکہ وہ “پرانے عہد کے تحت” تھا یوحنا 3:5 کو “ثبوت” کے طور پر استعمال کریں گے کہ نجات کے لیے بپتسمہ ضروری ہے۔ وہ اصرار کرتے ہیں کہ یسوع نیکودیمس سے کہہ رہا ہے کہ اسے نجات پانے کے لیے بپتسمہ لینا چاہیے، حالانکہ وہ بھی پرانے عہد کے تحت تھا۔ اگر صلیب پر چور کو بپتسمہ لیے بغیر بچایا گیا تھا (کیونکہ وہ پرانے عہد کے تحت تھا)، یسوع نیکودیمس (جو پرانے عہد کے تحت بھی تھا) کو کیوں بتائے گا کہ اسے بپتسمہ لینے کی ضرورت ہے؟

اگر “پانی اور روح سے پیدا ہونا” بپتسمہ کا حوالہ نہیں دے رہا ہے، تو اس کا کیا مطلب ہے؟ روایتی طور پر اس جملے کی دو تشریحات کی گئی ہیں۔ پہلا یہ ہے کہ “پانی سے پیدا ہونے” کو یسوع نے قدرتی پیدائش کے لیے استعمال کیا ہے (پانی کے ساتھ امنیٹک سیال جو رحم میں بچے کو گھیرے ہوئے ہے) اور یہ کہ “روح” سے پیدا ہونا روحانی پیدائش کی طرف اشارہ کرتا ہے۔ اگرچہ یہ یقینی طور پر “پانی سے پیدا ہونے والی” اصطلاح کی ایک ممکنہ تشریح ہے اور نیکوڈیمس کے اس سوال کے سیاق و سباق کے مطابق لگتی ہے کہ انسان کیسے پیدا ہو سکتا ہے “جب وہ بوڑھا ہو”، تو یہ بہترین تشریح نہیں ہے یہ حوالہ آخرکار، یسوع قدرتی پیدائش اور روحانی پیدائش کے درمیان فرق کے بارے میں بات نہیں کر رہے تھے۔ وہ جو کچھ کر رہا تھا وہ نیکودیمس کو سمجھا رہا تھا کہ وہ “اوپر سے پیدا ہونے” یا “دوبارہ پیدا ہونے” کی ضرورت ہے۔

اس حوالے کی دوسری عام تشریح اور جو کہ نہ صرف اس حوالے کے بلکہ مجموعی طور پر بائبل کے مجموعی سیاق و سباق سے مطابقت رکھتی ہے، وہ ہے جو “پانی اور روح سے پیدا ہونے والے” کے جملہ کو مختلف پہلوؤں کی وضاحت کے طور پر دیکھتی ہے۔ اسی روحانی پیدائش کے بارے میں، یا “دوبارہ پیدا ہونے” یا “اوپر سے پیدا ہونے” کا کیا مطلب ہے۔ لہٰذا، جب یسوع نے نیکودیمس کو بتایا کہ اسے ’’پانی اور روح سے پیدا ہونا چاہیے‘‘، وہ دوبارہ نہیں تھا۔

جیسا کہ کسی ایک آیت یا اقتباس کے ساتھ، ہم اس بات کا اندازہ لگاتے ہیں کہ یہ کیا سکھاتا ہے پہلے اسے فلٹر کرکے جو ہم جانتے ہیں کہ بائبل اس موضوع پر سکھاتی ہے۔ بپتسمہ اور نجات کے معاملے میں، بائبل واضح ہے کہ نجات یسوع مسیح پر ایمان کے ذریعے فضل سے ہے، بپتسمہ سمیت کسی بھی قسم کے کاموں سے نہیں (افسیوں 2:8-9)۔ لہٰذا، کوئی بھی تعبیر جو اس نتیجے پر پہنچتی ہے کہ بپتسمہ، یا کوئی اور عمل، نجات کے لیے ضروری ہے، ایک غلط تشریح ہے۔ مزید معلومات کے لیے، براہ کرم ہمارے ویب پیج پر جائیں “کیا نجات صرف ایمان سے ہے، یا ایمان کے علاوہ کاموں سے؟”

یوحنا 3: 3-7، “یسوع نے جواب دیا اور اس سے کہا، ‘میں تم سے سچ کہتا ہوں، جب تک کوئی نئے سرے سے پیدا نہیں ہوتا، وہ خدا کی بادشاہی کو نہیں دیکھ سکتا۔’ نیکدیمس نے اُس سے کہا، ‘جب آدمی بوڑھا ہو جائے تو کیسے پیدا ہو سکتا ہے؟ وہ ماں کے پیٹ میں دوسری بار داخل ہو کر پیدا نہیں ہو سکتا، کیا وہ؟’ یسوع نے جواب دیا، ‘میں تم سے سچ کہتا ہوں کہ جب تک کوئی پانی اور روح سے پیدا نہیں ہوتا، وہ خدا کی بادشاہی میں داخل نہیں ہو سکتا۔ جو جسم سے پیدا ہوا ہے وہ گوشت ہے اور جو روح سے پیدا ہوا ہے وہ روح ہے۔ تعجب نہ کرو کہ میں نے تم سے کہا، ‘تمہیں دوبارہ پیدا ہونا چاہیے۔’

جب پہلے اس حوالے پر غور کیا جائے تو یہ نوٹ کرنا ضروری ہے کہ حوالہ کے تناظر میں کہیں بھی بپتسمہ کا ذکر نہیں ہے۔ جب کہ بپتسمہ کا تذکرہ بعد میں اس باب (یوحنا 3:22-30) میں کیا گیا ہے، یہ بالکل مختلف ماحول میں ہے (یروشلم کی بجائے یہودیہ) اور نیکودیمس کے ساتھ بحث سے مختلف وقت پر۔ اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ نیکودیمس بپتسمہ سے ناواقف تھا، یا تو غیر یہودیوں کو یہودیت میں تبدیل کرنے کے یہودی عمل سے، یا جان بپتسمہ دینے والے کی وزارت سے۔ تاہم، صرف ان آیات کو سیاق و سباق میں پڑھنا کسی کو یہ فرض کرنے کی کوئی وجہ نہیں ملے گا کہ یسوع بپتسمہ کی بات کر رہے تھے، جب تک کہ کوئی اس عبارت میں پیشگی تصور یا الہیات کو پڑھنا نہ دیکھ رہا ہو۔ اس آیت میں بپتسمہ کو خود بخود پڑھنا صرف اس لیے کہ اس میں “پانی” کا ذکر ہے ناجائز ہے۔

جو لوگ نجات کے لیے بپتسمہ لینا ضروری سمجھتے ہیں وہ ثبوت کے طور پر “پانی سے پیدا ہونے والے” کی طرف اشارہ کرتے ہیں۔ جیسا کہ ایک شخص نے کہا ہے، ”یسوع اسے بیان کرتا ہے اور اسے صاف صاف بتاتا ہے کہ کیسے—پانی اور روح سے پیدا ہو کر۔ یہ بپتسمہ کی ایک بہترین وضاحت ہے! یسوع بپتسمہ کی زیادہ تفصیلی اور درست وضاحت نہیں کر سکتا تھا۔ تاہم، اگر یسوع دراصل یہ کہنا چاہتا تھا کہ نجات پانے کے لیے کسی کو بپتسمہ لینا چاہیے، تو وہ واضح طور پر کہہ سکتا تھا، “سچ، سچ میں، میں تم سے کہتا ہوں، جب تک کوئی بپتسمہ نہیں لیتا اور روح سے پیدا نہیں ہوتا، وہ بادشاہی میں داخل نہیں ہو سکتا۔ خدا کا.” مزید، اگر یسوع نے ایسا کوئی بیان دیا ہوتا، تو وہ بائبل کے متعدد اقتباسات کی تردید کرتا جو یہ واضح کرتے ہیں کہ نجات ایمان سے ہے (یوحنا 3:16؛ یوحنا 3:36؛ افسیوں 2:8-9؛ ططس 3:5) .

ہمیں اس حقیقت کو بھی نہیں بھولنا چاہیے کہ جب یسوع نیکودیمس سے بات کر رہے تھے، مسیحی بپتسمہ کا حکم ابھی تک نافذ نہیں ہوا تھا۔ کلام پاک کی تشریح میں یہ اہم تضاد اس وقت نظر آتا ہے جب کوئی ان لوگوں سے پوچھتا ہے جو نجات کے لیے بپتسمہ لینے کی ضرورت سمجھتے ہیں کیوں کہ صلیب پر چور کو نجات پانے کے لیے بپتسمہ لینے کی ضرورت نہیں تھی۔ اس سوال کا ایک مشترکہ جواب ہے: “صلیب پر چور اب بھی پرانے عہد کے تحت تھا اور اس لیے اس بپتسمہ کے تابع نہیں تھا۔ وہ پرانے عہد کے تحت کسی اور کی طرح بچایا گیا تھا۔” لہذا، جوہر میں، وہی لوگ جو کہتے ہیں کہ چور کو بپتسمہ لینے کی ضرورت نہیں تھی کیونکہ وہ “پرانے عہد کے تحت” تھا یوحنا 3:5 کو “ثبوت” کے طور پر استعمال کریں گے کہ نجات کے لیے بپتسمہ ضروری ہے۔ وہ اصرار کرتے ہیں کہ یسوع نیکودیمس سے کہہ رہا ہے کہ اسے نجات پانے کے لیے بپتسمہ لینا چاہیے، حالانکہ وہ بھی پرانے عہد کے تحت تھا۔ اگر صلیب پر چور کو بپتسمہ لیے بغیر بچایا گیا تھا (کیونکہ وہ پرانے عہد کے تحت تھا)، یسوع نیکودیمس (جو پرانے عہد کے تحت بھی تھا) کو کیوں بتائے گا کہ اسے بپتسمہ لینے کی ضرورت ہے؟

اگر “پانی اور روح سے پیدا ہونا” بپتسمہ کا حوالہ نہیں دے رہا ہے، تو اس کا کیا مطلب ہے؟ روایتی طور پر اس جملے کی دو تشریحات کی گئی ہیں۔ پہلا یہ ہے کہ “پانی سے پیدا ہونے” کو یسوع نے قدرتی پیدائش کے لیے استعمال کیا ہے (پانی کے ساتھ امنیٹک سیال جو رحم میں بچے کو گھیرے ہوئے ہے) اور یہ کہ “روح” سے پیدا ہونا روحانی پیدائش کی طرف اشارہ کرتا ہے۔ اگرچہ یہ یقینی طور پر “پانی سے پیدا ہونے والی” اصطلاح کی ایک ممکنہ تشریح ہے اور نیکوڈیمس کے اس سوال کے سیاق و سباق کے مطابق لگتی ہے کہ انسان کیسے پیدا ہو سکتا ہے “جب وہ بوڑھا ہو”، تو یہ بہترین تشریح نہیں ہے یہ حوالہ آخرکار، یسوع قدرتی پیدائش اور روحانی پیدائش کے درمیان فرق کے بارے میں بات نہیں کر رہے تھے۔ وہ جو کچھ کر رہا تھا وہ نیکودیمس کو سمجھا رہا تھا کہ وہ “اوپر سے پیدا ہونے” یا “دوبارہ پیدا ہونے” کی ضرورت ہے۔

اس حوالے کی دوسری عام تشریح اور جو کہ نہ صرف اس حوالے کے بلکہ مجموعی طور پر بائبل کے مجموعی سیاق و سباق سے مطابقت رکھتی ہے، وہ ہے جو “پانی اور روح سے پیدا ہونے والے” کے جملہ کو مختلف پہلوؤں کی وضاحت کے طور پر دیکھتی ہے۔ اسی روحانی پیدائش کے بارے میں، یا “دوبارہ پیدا ہونے” یا “اوپر سے پیدا ہونے” کا کیا مطلب ہے۔ لہٰذا، جب یسوع نے نیکودیمس کو بتایا کہ اسے ’’پانی اور روح سے پیدا ہونا چاہیے‘‘، وہ دوبارہ نہیں تھا۔

Spread the love