Biblical Questions Answers

you can ask questions and receive answers from other members of the community.

I am an atheist. Why should I consider becoming a Christian? میں ایک ملحد ہوں۔ مجھے مسیحی بننے پر کیوں غور کرنا چاہیے

If you consider yourself an atheist with a sincere interest in truth, there are several things about Christianity we feel are critical to understand. Also, please note that, as a Christian ministry, we have no reason to defend other religious beliefs; so this article deals solely with the biblical Christian faith.

Truth matters, regardless of beliefs.

Integrity is a most important point. You as an individual should be able to explain why you accept or reject some particular view of the world. And your explanation should reflect the actual beliefs in question. This requirement applies universally, even if you prefer to define your atheism as merely “a lack of belief.” We mention this because distortions of religious belief tend to drown out the real t

 

hing. It’s common to hear descriptions of Christianity that are profoundly divergent from what Christians actually believe.

In other words, you can’t honestly say you’ve considered the message of Christianity unless you actually know what that message is. Dismissing the existence of George Washington on the basis that stories about him throwing a silver dollar across the Potomac are myths isn’t good reasoning. We cannot allow a caricature to crowd out actual facts and then make a judgment based on the caricature.

We are not suggesting that all atheists are uninformed. On the contrary, we acknowledge that many atheists can articulate the Christian position accurately. However, in our experience, many more self-professed atheists, when asked to give an explanation of Christianity, present a cartoonish view. If we are belaboring this point, it’s only because misrepresentations of Christianity are so often a key component of atheists’ arguments.

Christianity rejects “blind faith.”

Many atheists struggle with the idea of “blind faith,” but the claim that Christians are called to “blind faith” is simply untrue. There is no place in the Bible where human beings are told, “Believe this, just because.” This misunderstanding is due to a mistaken definition of faith. The Bible’s view of faith is best described as “trust.” This is certainly different from “proof,” but faith is never presented as belief without evidence or against all evidence. In fact, the Bible consistently points to historical events as the basis for our faith (Numbers 14:11; John 14:11).

Consider that “absolute proof” is actually rare in human experience. There are virtually no circumstances where anyone has the ability to prove—mathematically, logically, infallibly—anything before he acts. Does this mean we cannot act? No, but it does mean we are constantly acting when we have good reasons but not absolute proof. That, in a nutshell, is the “faith” that the Bible calls for. Rather than calling us to place faith—trust—in the world or other people, Christianity calls on us to place faith—reasonable trust—in God and His message to us.

As an atheist, you exhibit “faith” of this kind every day. The difference is in the object of that faith, not in the substance. You exhibit faith—reasoned trust—every time you sit on a chair without first checking it for stability. You exhibit faith every time you ride in a car without performing an exhaustive inspection. You act on faith whenever you eat food cooked by other people or take medicines provided by a doctor. You cannot have absolute proof that any of these things are reliable, each and every time. But you can have good reasons to trust in them.

Ultimately, you place the same “faith” in your view of the world, atheism. We ask you to consider the fact that, no matter what you believe—or do not believe—you cannot claim to have “proof.” Not in an absolute sense. The reality of human experience is that we cannot know everything. We have no choice but to act in trust—faith—based on what we have good reason to believe, even if we can’t prove it. Christianity is not an escape from reason or a freefall into blind faith. In fact, it’s exactly the opposite: a truth that draws even unwilling converts on the strength of evidence.

Christianity is uniquely tied to reason and evidence.

The Bible is unique in its approach to reason and evidence. Even Jesus Christ appealed to evidence when He was challenged. In John 5, Jesus acknowledges that others won’t—or can’t—believe what He says on blind faith. So He offers three lines of evidence as reasons to trust Him: human testimony, observations, and written records (John 5:30–47). The earliest believers constantly referred to facts and evidence as support for their message (1 Corinthians 15:13–14; 2 Peter 1:16; Luke 1:1–4).

God doesn’t ask us to follow Him blindly (1 Thessalonians 5:21) or ignorantly (Acts 17:11) or without doubts (Jude 1:22). Rather, Christianity offers reasons to believe: evidence in nature (Psalm 19:1), in science (Genesis 1:1), in logic (Isaiah 1:18), in history (Luke 1:1–4), and in human experience (Romans 1:20–21; 1 Peter 5:1). Our website has a large amount of material on each of these areas of evidence.

Modern atheists frequently point to “science” as a catch-all counter to religion. It should be noted that, without a Christian worldview, what we call “modern science” would be impossible. It wasn’t until a culture approached the universe from a Christian perspective that the modern scientific method was born. Science as we know it assumes that the universe is rule-bound, repeatable, knowable, and subject to human manipulation—all of which are uniquely theistic (particularly Judeo-Christian) concepts. Atheism, like modern science, can co-opt those tenets, but they all flow from a theistic worldview.

Also, it bears mentioning that interpretation is not always the same as fact. This is as true in religion as in science. Rejecting or disproving one particular facet of a belief system doesn’t necessarily mean the entire idea is wrong. It might only be that particular idea that is in error. Non-fundamental doctrines, such as the age of the earth, are ultimately secondary to the core message of Christianity. The so-called war between science and religion is truly a myth.

Christianity has the support of experience.

It’s important, at least for the sake of argument, to consider what happens when people actually apply a particular philosophy in the real world. Naturally, no two people have exactly the same understanding of how to live out a specific idea. And people often do things completely contradictory to their stated beliefs. Yet it’s possible to look at world history and see which ideas seem to work and which do not.

Beliefs have consequences. Atheism, like most worldviews, has no particular reason to consider human beings valuable, equal, or meaningful. Just as modern science owes its existence to theism, so too do the concepts of morality, democracy, and human rights. The positive impact of Christianity is clearly seen in history and in current events. The ideas of equality, self-governance, social welfare, and so forth are all rooted in Christian heritage. Even today, cultures with a Christian background are overwhelmingly ahead of non-Christian cultures in the various moral issues most atheists find meaningful.

Popular culture frequently takes the position that Christianity is a philosophy of abuse. Consider the claim that “religion causes war.” According to secular scholars such as Charles Phillips, Gordon Martel, and Alan Axelrod, religious motivations only factor into about 6 or 7 percent of all the wars in human history. Remove Islam from consideration, and that number drops by more than half. In truth, Christianity’s emphasis on compassion and peace has done far more to prevent and soften violence than it has to inspire it.

If you’re an atheist who rejects Christianity on the grounds that it’s anti-science, blind faith, or abusive, please reconsider the evidence. Those accusations are based on false narratives and caricatures. Comedians and celebrities can repeat them ad nauseam, but that doesn’t make them true.

Atheism means Christianity is worth consideration.

If the practical effects of a belief system matter in a culture, then they also matter in one’s personal life. Atheists of all stripes throughout history have pointed out a major problem with atheistic thinking: nihilism. Belief in pure naturalism or the complete lack of any deity has logical implications.

Force of logic leads atheists to reject objective morality, meaning, purpose, and so forth. This is a dominant struggle in atheistic philosophy: how to stave off nihilism or cope with its implications. This is the reason atheism, more than any other worldview, has lent itself as justification of the atrocities of dictators.

Ironically, this means that atheism itself presents good reasons to at least consider the Christian worldview. Why? If there is no meaning, purpose, or ultimate plan, then we might as well choose the worldview that leads to the best results: one that provides intellectual satisfaction, personal fulfillment, meaning, order, and morality.

The best possible option—the one that leads to the best results—is Christianity. Not that this makes Christianity true by default or that anyone can convince himself against his own will. But it’s at least a reason to take the claims of the Bible seriously. And, of course, Christianity deserves better than a shallow, meme-driven, or cartoonish approach. Atheist pundits have sometimes spoken of acting “as if” there is meaning when they “know” there is none. In that context, it’s hardly unreasonable to nominate the Bible as a reasonable option for voluntary belief.

Christianity offers hope and meaning.

As you’ve seen, our view of Christianity is in no sense driven by “wishful thinking.” We firmly believe that reason, logic, and evidence are important aspects of a vibrant faith. At the same time, we acknowledge that intellect and reason are not the complete picture of human experience.

Every person has his own reasons for his beliefs or lack thereof. Often, these reasons are more emotionally driven than we’d like to admit. The message of the gospel is not one human beings instinctively prefer. But, once a person truly understands the biblical Christian worldview, the caricatures and myths fall away, and what’s left is compelling and powerful.

To you, the atheist, we’d respectfully like to summarize that biblical message as follows:

God loves you so much that He made a way to be forgiven for every sin, so you can spend eternity with Him. The Bible says that each person needs to be saved (Romans 3:23), each person can be saved (Romans 1:16), and God wants each person to be saved (2 Peter 3:9).

What separates us from God is sin. No matter how good we think we are, we are all guilty of sin (1 John 1:10). Since God is absolutely perfect, everyone deserves to be separated from Him forever (Romans 5:16). No amount of effort, good deeds, money, talent, or achievement is enough to take away this guilt (Isaiah 64:6). Fortunately, God doesn’t want us to be separated from Him, so He made a way to fix what’s broken (John 3:16–17).

That one and only way is through faith in Jesus Christ (John 14:6). God Himself came to earth as a human, living a perfect and sinless life (Hebrews 4:15). He willingly died as a sacrifice to pay the debt for our sins (2 Corinthians 5:21). According to the Scriptures, anyone can be “saved”—forgiven by God and guaranteed heaven—through faith in Jesus Christ (Romans 10:13). This isn’t a call for blind, ignorant belief (Acts 17:11; 1 John 4:1). It’s an invitation from God to submission and trust (James 4:7). It’s a choice to let go of everything else in order to rely entirely on God.

Christianity still has more to offer.

We fully understand that no single article, answer, or conversation can completely cover every possible detail. There are thousands of legitimate questions and concerns related to the Christian faith. We respect all people, including atheists, who are willing to seek truth in depth.

Even if you don’t think that Christianity is true, we sincerely hope you’ll continue to learn more about it. You have nothing to lose. At the worst, you’ll have a more accurate understanding. At best, you’ll come to realize what so many other skeptics have: that Jesus is, in fact, the truth.

اگر آپ سچائی میں مخلصانہ دلچسپی کے ساتھ اپنے آپ کو ملحد سمجھتے ہیں، تو عیسائیت کے بارے میں بہت سی چیزیں ہیں جو ہم سمجھنا ضروری سمجھتے ہیں۔ اس کے علاوہ، براہ کرم نوٹ کریں کہ، ایک عیسائی وزارت کے طور پر، ہمارے پاس دوسرے مذہبی عقائد کا دفاع کرنے کی کوئی وجہ نہیں ہے۔ لہذا یہ مضمون مکمل طور پر بائبل کے عیسائی عقیدے سے متعلق ہے۔

سچائی اہمیت رکھتی ہے، عقائد سے قطع نظر۔

دیانتداری ایک اہم ترین نکتہ ہے۔ آپ کو بحیثیت فرد یہ بتانے کے قابل ہونا چاہیے کہ آپ دنیا کے کسی خاص نظریے کو کیوں قبول یا مسترد کرتے ہیں۔ اور آپ کی وضاحت سوال میں اصل عقائد کی عکاسی کرنی چاہیے۔ یہ تقاضہ عالمگیر طور پر لاگو ہوتا ہے، یہاں تک کہ اگر آپ اپنے الحاد کو محض “عقیدہ کی کمی” کے طور پر بیان کرنے کو ترجیح دیتے ہیں۔ ہم اس کا تذکرہ اس لیے کرتے ہیں کہ مذہبی عقیدے کی تحریف اصل چیز کو ختم کر دیتی ہے۔ عیسائیت کی ایسی وضاحتیں سننا عام ہے جو عیسائیوں کے اصل عقیدے سے بہت مختلف ہیں۔

دوسرے لفظوں میں، آپ ایمانداری سے یہ نہیں کہہ سکتے کہ آپ نے عیسائیت کے پیغام پر غور کیا ہے جب تک کہ آپ کو حقیقت میں یہ معلوم نہ ہو کہ وہ پیغام کیا ہے۔ جارج واشنگٹن کے وجود کو اس بنیاد پر مسترد کرنا کہ پوٹومیک پر چاندی کا ڈالر پھینکنے کے بارے میں کہانیاں خرافات ہیں اچھی استدلال نہیں ہے۔ ہم اس بات کی اجازت نہیں دے سکتے کہ ایک کیریکچر کو اصل حقائق کی بھیڑ بھڑکائے اور پھر کیریکچر کی بنیاد پر کوئی فیصلہ صادر کرے۔

ہم یہ تجویز نہیں کر رہے ہیں کہ تمام ملحد بے خبر ہیں۔ اس کے برعکس، ہم تسلیم کرتے ہیں کہ بہت سے ملحد مسیحی موقف کو درست طریقے سے بیان کر سکتے ہیں۔ تاہم، ہمارے تجربے میں، بہت سے خود ساختہ ملحدوں سے، جب عیسائیت کی وضاحت کرنے کے لیے کہا جاتا ہے، تو وہ کارٹونی نظریہ پیش کرتے ہیں۔ اگر ہم اس نکتے کو بیان کر رہے ہیں، تو یہ صرف اس لیے ہے کہ عیسائیت کی غلط تشریحات اکثر ملحدوں کے دلائل کا ایک اہم جزو ہوتے ہیں۔

عیسائیت “اندھے ایمان” کو مسترد کرتی ہے۔

بہت سے ملحد “اندھے عقیدے” کے خیال کے ساتھ جدوجہد کرتے ہیں، لیکن یہ دعویٰ کہ عیسائیوں کو “اندھا ایمان” کہا جاتا ہے، بالکل غلط ہے۔ بائبل میں ایسی کوئی جگہ نہیں ہے جہاں انسانوں سے کہا گیا ہو، ’’اس پر یقین کرو، صرف اس لیے‘‘۔ یہ غلط فہمی ایمان کی غلط تعریف کی وجہ سے ہے۔ عقیدے کے بارے میں بائبل کا نظریہ بہترین طور پر “بھروسہ” کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔ یہ یقینی طور پر “ثبوت” سے مختلف ہے، لیکن ایمان کو کبھی بھی بغیر ثبوت کے یا تمام ثبوت کے خلاف عقیدے کے طور پر پیش نہیں کیا جاتا ہے۔ درحقیقت، بائبل ہمارے ایمان کی بنیاد کے طور پر تاریخی واقعات کی طرف مسلسل اشارہ کرتی ہے (گنتی 14:11؛ یوحنا 14:11)۔

غور کریں کہ “مطلق ثبوت” دراصل انسانی تجربے میں نایاب ہے۔ عملی طور پر ایسے حالات نہیں ہیں جہاں کوئی بھی عمل کرنے سے پہلے — ریاضی کے اعتبار سے، منطقی طور پر، ناقص طور پر — کچھ بھی ثابت کرنے کی صلاحیت رکھتا ہو۔ کیا اس کا مطلب یہ ہے کہ ہم عمل نہیں کر سکتے؟ نہیں، لیکن اس کا مطلب یہ ہے کہ جب ہمارے پاس اچھی وجوہات ہیں لیکن قطعی ثبوت نہیں تو ہم مسلسل کام کر رہے ہیں۔ یہ، مختصراً، وہ “ایمان” ہے جس کا بائبل مطالبہ کرتی ہے۔ ہمیں دنیا یا دوسرے لوگوں میں ایمان — بھروسہ— رکھنے کے لیے بلانے کے بجائے، عیسائیت ہمیں خدا اور اس کے پیغام پر ایمان— معقول بھروسہ— رکھنے کی دعوت دیتی ہے۔

ایک ملحد کے طور پر، آپ ہر روز اس قسم کے “ایمان” کا مظاہرہ کرتے ہیں۔ فرق اس عقیدے کے شے میں ہے، مادہ میں نہیں۔ جب بھی آپ کرسی پر بیٹھتے ہیں تو آپ ایمان کا مظاہرہ کرتے ہیں — معقول اعتماد — پہلے اسے استحکام کے لیے جانچے بغیر۔ جب بھی آپ مکمل معائنہ کیے بغیر کار میں سوار ہوتے ہیں تو آپ ایمان کا مظاہرہ کرتے ہیں۔ جب بھی آپ دوسرے لوگوں کا پکایا ہوا کھانا کھاتے ہیں یا ڈاکٹر کی فراہم کردہ دوائیں لیتے ہیں تو آپ ایمان پر عمل کرتے ہیں۔ آپ کے پاس اس بات کا قطعی ثبوت نہیں ہے کہ ان میں سے کوئی بھی چیز ہر بار قابل اعتماد ہے۔ لیکن آپ کے پاس ان پر بھروسہ کرنے کی اچھی وجوہات ہوسکتی ہیں۔

بالآخر، آپ اسی “عقیدے” کو دنیا کے بارے میں اپنے نظریہ میں رکھتے ہیں، الحاد۔ ہم آپ سے اس حقیقت پر غور کرنے کے لیے کہتے ہیں، چاہے آپ جو کچھ بھی مانتے ہوں — یا نہیں مانتے — آپ “ثبوت” ہونے کا دعویٰ نہیں کر سکتے۔ مطلق معنوں میں نہیں۔ انسانی تجربے کی حقیقت یہ ہے کہ ہم سب کچھ نہیں جان سکتے۔ ہمارے پاس بھروسے پر عمل کرنے کے علاوہ کوئی چارہ نہیں ہے—ایمان—جس پر یقین کرنے کی ہمارے پاس اچھی وجہ ہے، چاہے ہم اسے ثابت نہ کر سکیں۔ عیسائیت عقل سے فرار یا اندھے عقیدے میں آزاد ہونے کا نام نہیں ہے۔ درحقیقت، یہ بالکل اس کے برعکس ہے: ایک ایسی سچائی جو ثبوت کے زور پر ناپسندیدہ مذہب بدلنے والوں کو بھی کھینچتی ہے۔

عیسائیت منفرد طور پر دلیل اور ثبوت سے منسلک ہے۔

بائبل دلیل اور ثبوت کے لحاظ سے منفرد ہے۔ یہاں تک کہ یسوع مسیح نے بھی ثبوت کی اپیل کی جب اسے چیلنج کیا گیا۔ یوحنا 5 میں، یسوع تسلیم کرتا ہے کہ دوسرے لوگ اندھی عقیدت پر جو کچھ کہتے ہیں اس پر یقین نہیں کریں گے یا نہیں کر سکتے۔ لہٰذا وہ اپنے پر بھروسہ کرنے کی وجوہات کے طور پر ثبوت کی تین سطریں پیش کرتا ہے: انسانی گواہی، مشاہدات، اور تحریری ریکارڈ (یوحنا 5:30-47)۔ قدیم ترین ایماندار اپنے پیغام کی حمایت کے طور پر حقائق اور شواہد کا مسلسل حوالہ دیتے ہیں (1 کرنتھیوں 15:13-14؛ 2 پطرس 1:16؛ لوقا 1:1-4)۔

خُدا ہم سے آنکھیں بند کرکے اس کی پیروی کرنے کو نہیں کہتا (1 تھیسالونیکیوں 5:21) یا جاہلانہ طور پر (اعمال 17:11) یا بغیر کسی شک کے (یہوداہ 1:22)۔ بلکہ، عیسائیت یقین کرنے کی وجوہات پیش کرتی ہے: فطرت میں ثبوت (زبور 19:1)، سائنس میں (پیدائش 1:1)، منطق میں (اشعیا 1:18)، تاریخ میں (لوقا 1:1-4)، اور انسانوں میں۔ تجربہ (رومیوں 1:20-21؛ 1 پطرس 5:1)۔ ہماری ویب سائٹ evi کے ان شعبوں میں سے ہر ایک پر مواد کی ایک بڑی مقدار ہے۔ڈینس

جدید ملحد اکثر “سائنس” کی طرف مذہب کے خلاف ایک کیچ آل کاؤنٹر کے طور پر اشارہ کرتے ہیں۔ واضح رہے کہ عیسائی عالمی نظریہ کے بغیر، جسے ہم “جدید سائنس” کہتے ہیں، ناممکن ہوگا۔ یہ اس وقت تک نہیں تھا جب تک کہ ایک ثقافت عیسائی نقطہ نظر سے کائنات تک نہیں پہنچی تھی کہ جدید سائنسی طریقہ پیدا ہوا تھا۔ سائنس جیسا کہ ہم جانتے ہیں یہ مانتی ہے کہ کائنات قاعدے کی پابند، دہرائی جا سکتی ہے، قابل علم ہے، اور انسانی ہیرا پھیری کے تابع ہے — یہ سب منفرد طور پر تھیسٹک (خاص طور پر یہودی عیسائی) تصورات ہیں۔ الحاد، جدید سائنس کی طرح، ان اصولوں کو آپٹ کر سکتا ہے، لیکن یہ سب ایک الٰہیاتی عالمی نظریہ سے آتے ہیں۔

اس کے علاوہ، یہ ذکر کرتا ہے کہ تشریح ہمیشہ حقیقت کے طور پر ایک ہی نہیں ہے. یہ مذہب میں بھی اتنا ہی سچ ہے جتنا سائنس میں۔ عقیدہ کے نظام کے ایک خاص پہلو کو مسترد یا غلط ثابت کرنے کا مطلب یہ نہیں کہ پورا خیال غلط ہے۔ یہ صرف وہی خاص خیال ہوسکتا ہے جو غلطی پر ہو۔ غیر بنیادی عقائد، جیسے زمین کی عمر، بالآخر عیسائیت کے بنیادی پیغام کے لیے ثانوی حیثیت رکھتے ہیں۔ سائنس اور مذہب کے درمیان نام نہاد جنگ واقعی ایک افسانہ ہے۔

عیسائیت کو تجربے کی حمایت حاصل ہے۔

یہ ضروری ہے، کم از کم دلیل کی خاطر، اس بات پر غور کرنا کہ جب لوگ کسی خاص فلسفے کو حقیقی دنیا میں لاگو کرتے ہیں تو کیا ہوتا ہے۔ فطری طور پر، کسی بھی دو لوگوں کو بالکل یکساں سمجھ نہیں ہے کہ ایک مخصوص خیال کو کیسے زندہ کیا جائے۔ اور لوگ اکثر اپنے بیان کردہ عقائد کے بالکل خلاف کام کرتے ہیں۔ پھر بھی یہ ممکن ہے کہ عالمی تاریخ پر نظر ڈالیں اور دیکھیں کہ کون سے نظریات کام کرتے نظر آتے ہیں اور کون سے نہیں۔

عقائد کے نتائج ہوتے ہیں۔ الحاد، دنیا کے بیشتر نظریات کی طرح، انسانوں کو قیمتی، مساوی یا بامعنی سمجھنے کی کوئی خاص وجہ نہیں ہے۔ جس طرح جدید سائنس اپنے وجود کی مرہون منت ہے اسی طرح اخلاقیات، جمہوریت اور انسانی حقوق کے تصورات بھی۔ عیسائیت کا مثبت اثر تاریخ اور موجودہ واقعات میں واضح طور پر نظر آتا ہے۔ مساوات، خود مختاری، سماجی بہبود، وغیرہ کے نظریات کی جڑیں مسیحی ورثے میں پیوست ہیں۔ آج بھی، عیسائی پس منظر والی ثقافتیں مختلف اخلاقی مسائل میں غیر مسیحی ثقافتوں سے بہت آگے ہیں جو زیادہ تر ملحدین کو معنی خیز سمجھتے ہیں۔

مقبول ثقافت اکثر یہ پوزیشن لیتی ہے کہ عیسائیت بدسلوکی کا فلسفہ ہے۔ اس دعوے پر غور کریں کہ “مذہب جنگ کا سبب بنتا ہے۔” چارلس فلپس، گورڈن مارٹل، اور ایلن ایکسلروڈ جیسے سیکولر اسکالرز کے مطابق، انسانی تاریخ کی تمام جنگوں میں مذہبی محرکات صرف 6 یا 7 فیصد کا سبب بنتے ہیں۔ اسلام کو غور سے ہٹا دیں، اور یہ تعداد نصف سے بھی کم ہو جائے گی۔ درحقیقت، ہمدردی اور امن پر عیسائیت کے زور نے تشدد کو روکنے اور نرم کرنے کے لیے اس سے کہیں زیادہ کام کیا ہے جتنا کہ اس کی حوصلہ افزائی کرنا ہے۔

اگر آپ ایک ملحد ہیں جو عیسائیت کو اس بنیاد پر مسترد کرتے ہیں کہ یہ سائنس مخالف ہے، اندھا عقیدہ ہے، یا بدسلوکی ہے، تو براہ کرم ثبوت پر دوبارہ غور کریں۔ یہ الزامات جھوٹے بیانات اور کیریکیچر پر مبنی ہیں۔ کامیڈین اور مشہور شخصیات انہیں اشتھاراتی طور پر دہرا سکتے ہیں، لیکن یہ انہیں سچ نہیں بناتا ہے۔الحاد کا مطلب ہے عیسائیت قابل غور ہے۔

اگر کسی عقیدے کے نظام کے عملی اثرات ثقافت میں اہمیت رکھتے ہیں، تو وہ کسی کی ذاتی زندگی میں بھی اہمیت رکھتے ہیں۔ پوری تاریخ میں تمام دھاریوں کے ملحدوں نے ملحدانہ سوچ کے ساتھ ایک بڑے مسئلے کی نشاندہی کی ہے: nihilism۔ خالص فطرت پر یقین یا کسی دیوتا کی مکمل کمی کے منطقی اثرات ہوتے ہیں۔

منطق کی قوت ملحدوں کو معروضی اخلاقیات، معنی، مقصد وغیرہ کو مسترد کرنے کی طرف لے جاتی ہے۔ یہ ملحدانہ فلسفہ میں ایک غالب جدوجہد ہے: کیسے عصبیت کو روکا جائے یا اس کے مضمرات سے کیسے نمٹا جائے۔ یہی وجہ ہے کہ الحاد، کسی بھی دوسرے عالمی نظریے سے زیادہ، آمروں کے مظالم کے جواز کے طور پر خود کو پیش کرتا ہے۔

ستم ظریفی یہ ہے کہ اس کا مطلب یہ ہے کہ الحاد خود کم از کم مسیحی عالمی نظریہ پر غور کرنے کی اچھی وجوہات پیش کرتا ہے۔ کیوں؟ اگر کوئی معنی، مقصد، یا حتمی منصوبہ نہیں ہے، تو پھر ہم عالمی نقطہ نظر کو بھی منتخب کر سکتے ہیں جو بہترین نتائج کی طرف لے جاتا ہے: ایک جو فکری اطمینان، ذاتی تکمیل، معنی، ترتیب، اور اخلاقیات فراہم کرتا ہے۔

بہترین ممکنہ آپشن – جو بہترین نتائج کی طرف لے جاتا ہے – عیسائیت ہے۔ ایسا نہیں ہے کہ یہ عیسائیت کو بطور ڈیفالٹ سچ بناتا ہے یا یہ کہ کوئی بھی اپنی مرضی کے خلاف خود کو قائل کر سکتا ہے۔ لیکن یہ کم از کم بائبل کے دعووں کو سنجیدگی سے لینے کی ایک وجہ ہے۔ اور، یقیناً، عیسائیت ایک اتلی، میم سے چلنے والی، یا کارٹونش انداز سے بہتر کی مستحق ہے۔ ملحد پنڈتوں نے کبھی کبھی “گویا” عمل کرنے کی بات کی ہے جب وہ “جانتے ہیں” کہ کوئی نہیں ہے۔ اس تناظر میں، بائبل کو رضاکارانہ عقیدے کے لیے ایک معقول آپشن کے طور پر نامزد کرنا شاید ہی غیر معقول ہے۔

عیسائیت امید اور معنی پیش کرتی ہے۔

جیسا کہ آپ نے دیکھا ہے، عیسائیت کے بارے میں ہمارا نظریہ کسی بھی معنی میں “خواہش مندانہ سوچ” کے ذریعے کارفرما نہیں ہے۔ ہم پختہ یقین رکھتے ہیں کہ دلیل، منطق اور ثبوت ایک متحرک ایمان کے اہم پہلو ہیں۔ ایک ہی وقت میں، ہم تسلیم کرتے ہیں کہ عقل اور عقل انسانی تجربے کی مکمل تصویر نہیں ہیں۔

ہر شخص کے پاس اپنے عقائد یا اس کی کمی کی اپنی وجوہات ہوتی ہیں۔ اکثر، ان وجوہات

ہم تسلیم کرنا چاہتے ہیں اس سے زیادہ جذباتی طور پر کارفرما ہیں۔ خوشخبری کا پیغام ایک انسان فطری طور پر ترجیح نہیں دیتا۔ لیکن، ایک بار جب کوئی شخص بائبل کے مسیحی عالمی نظریہ کو صحیح معنوں میں سمجھ لیتا ہے، تو نقش و نگار اور خرافات ختم ہو جاتے ہیں، اور جو باقی رہ جاتا ہے وہ مجبور اور طاقتور ہے۔

آپ کے لیے، ملحد، ہم احترام کے ساتھ اس بائبلی پیغام کا خلاصہ اس طرح کرنا چاہیں گے:

خُدا آپ سے اتنا پیار کرتا ہے کہ اُس نے ہر گناہ کے لیے معافی کا ایک طریقہ بنایا، تاکہ آپ اُس کے ساتھ ہمیشہ کے لیے گزار سکیں۔ بائبل کہتی ہے کہ ہر ایک شخص کو بچائے جانے کی ضرورت ہے (رومیوں 3:23)، ہر ایک شخص کو بچایا جا سکتا ہے (رومیوں 1:16)، اور خُدا چاہتا ہے کہ ہر شخص بچائے (2 پطرس 3:9)۔

جو چیز ہمیں خُدا سے جدا کرتی ہے وہ گناہ ہے۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا ہے کہ ہم کتنے ہی اچھے سوچتے ہیں، ہم سب گناہ کے مجرم ہیں (1 یوحنا 1:10)۔ چونکہ خُدا بالکل کامل ہے، اِس لیے ہر کوئی اُس سے ہمیشہ کے لیے جدا ہونے کا مستحق ہے (رومیوں 5:16)۔ اس جرم کو دور کرنے کے لیے کوئی بھی کوشش، اچھے کام، پیسہ، ہنر، یا کامیابی کافی نہیں ہے (اشعیا 64:6)۔ خوش قسمتی سے، خُدا نہیں چاہتا کہ ہم اُس سے الگ ہو جائیں، اِس لیے اُس نے ٹوٹی ہوئی چیزوں کو ٹھیک کرنے کا ایک طریقہ بنایا (یوحنا 3:16-17)۔

وہ واحد راستہ یسوع مسیح پر ایمان کے ذریعے ہے (یوحنا 14:6)۔ خُدا خود ایک انسان کے طور پر زمین پر آیا، ایک کامل اور بے گناہ زندگی گزار رہا ہے (عبرانیوں 4:15)۔ وہ خوشی سے ہمارے گناہوں کا قرض ادا کرنے کے لیے قربانی کے طور پر مر گیا (2 کرنتھیوں 5:21)۔ صحیفوں کے مطابق، کوئی بھی شخص یسوع مسیح پر ایمان کے ذریعے “بچایا” جا سکتا ہے – خدا کی طرف سے معاف کیا گیا اور جنت کی ضمانت دی گئی ہے (رومیوں 10:13)۔ یہ اندھے، جاہلانہ اعتقاد کے لیے کال نہیں ہے (اعمال 17:11؛ 1 یوحنا 4:1)۔ یہ خُدا کی طرف سے تسلیم اور بھروسے کی دعوت ہے (جیمز 4:7)۔ خدا پر مکمل بھروسہ کرنے کے لیے یہ سب کچھ چھوڑنے کا انتخاب ہے۔

عیسائیت کو ابھی بھی بہت کچھ پیش کرنا ہے۔

ہم پوری طرح سمجھتے ہیں کہ کوئی ایک مضمون، جواب، یا گفتگو مکمل طور پر ہر ممکنہ تفصیل کا احاطہ نہیں کر سکتی۔ عیسائی عقیدے سے متعلق ہزاروں جائز سوالات اور خدشات ہیں۔ ہم تمام لوگوں کا احترام کرتے ہیں، بشمول ملحد، جو سچائی کی گہرائی میں تلاش کرنے کے لیے تیار ہیں۔

یہاں تک کہ اگر آپ کو یہ نہیں لگتا کہ عیسائیت سچ ہے، ہمیں پوری امید ہے کہ آپ اس کے بارے میں مزید جاننا جاری رکھیں گے۔ آپ کے پاس کھونے کے لیے کچھ نہیں ہے۔ بدترین طور پر، آپ کو زیادہ درست سمجھ حاصل ہوگی۔ بہترین طور پر، آپ کو یہ احساس ہو جائے گا کہ بہت سے دوسرے شکوک کرنے والوں کے پاس کیا ہے: کہ یسوع، حقیقت میں، سچ ہے۔

Spread the love