Biblical Questions Answers

you can ask questions and receive answers from other members of the community.

Is the Bible truly God’s Word? کیا بائبل واقعی خدا کا کلام ہے

Our answer to this question will not only determine how we view the Bible and its importance to our lives, but also it will ultimately have an eternal impact on us. If the Bible is truly God’s Word, then we should cherish it, study it, obey it, and fully trust it. If the Bible is the Word of God, then to dismiss it is to dismiss God Himself.

The fact that God gave us the Bible is an evidence and illustration of His love for us. The term “revelation” simply means that God communicated to mankind what He is like and how we can have a right relationship with Him. These are things that we could not have known had God not divinely revealed them to us in the Bible. Although God’s revelation of Himself in the Bible was given progressively over approximately 1500 years, it has always contained everything man needs to know about God in order to have a right relationship with Him. If the Bible is truly the Word of God, then it is the final authority for all matters of faith, religious practice, and morals.

The question we must ask ourselves is how can we know that the Bible is the Word of God and not just a good book? What is unique about the Bible that sets it apart from all other religious books ever written? Is there any evidence that the Bible is truly God’s Word? These types of questions must be seriously examined if we are to determine the validity of the Bible’s claim to be the very Word of God, divinely inspired, and totally sufficient for all matters of faith and practice. There can be no doubt that the Bible does claim to be the very Word of God. This is clearly seen in Paul’s commendation to Timothy: “… from infancy you have known the holy Scriptures, which are able to make you wise for salvation through faith in Christ Jesus. All Scripture is God-breathed and is useful for teaching, rebuking, correcting and training in righteousness, so that the man of God may be thoroughly equipped for every good work” (2 Timothy 3:15-17).

There are both internal and external evidences that the Bible is truly God’s Word. The internal evidences are those things within the Bible that testify of its divine origin. One of the first internal evidences that the Bible is truly God’s Word is seen in its unity. Even though it is really sixty-six individual books, written on three continents, in three different languages, over a period of approximately 1500 years, by more than 40 authors who came from many walks of life, the Bible remains one unified book from beginning to end without contradiction. This unity is unique from all other books and is evidence of the divine origin of the words which God moved men to record.

Another of the internal evidences that indicates the Bible is truly God’s Word is the prophecies contained within its pages. The Bible contains hundreds of detailed prophecies relating to the future of individual nations including Israel, certain cities, and mankind. Other prophecies concern the coming of One who would be the Messiah, the Savior of all who would believe in Him. Unlike the prophecies found in other religious books or those by men such as Nostradamus, biblical prophecies are extremely detailed. There are over three hundred prophecies concerning Jesus Christ in the Old Testament. Not only was it foretold where He would be born and His lineage, but also how He would die and that He would rise again. There simply is no logical way to explain the fulfilled prophecies in the Bible other than by divine origin. There is no other religious book with the extent or type of predictive prophecy that the Bible contains.

A third internal evidence of the divine origin of the Bible is its unique authority and power. While this evidence is more subjective than the first two, it is no less a powerful testimony of the divine origin of the Bible. The Bible’s authority is unlike any other book ever written. This authority and power are best seen in the way countless lives have been transformed by the supernatural power of God’s Word. Drug addicts have been cured by it, homosexuals set free by it, derelicts and deadbeats transformed by it, hardened criminals reformed by it, sinners rebuked by it, and hate turned to love by it. The Bible does possess a dynamic and transforming power that is only possible because it is truly God’s Word.

There are also external evidences that indicate the Bible is truly the Word of God. One is the historicity of the Bible. Because the Bible details historical events, its truthfulness and accuracy are subject to verification like any other historical document. Through both archaeological evidences and other writings, the historical accounts of the Bible have been proven time and time again to be accurate and true. In fact, all the archaeological and manuscript evidence supporting the Bible makes it the best-documented book from the ancient world. The fact that the Bible accurately and truthfully records historically verifiable events is a great indication of its truthfulness when dealing with religious subjects and doctrines and helps substantiate its claim to be the very Word of God.

Another external evidence that the Bible is truly God’s Word is the integrity of its human authors. As mentioned earlier, God used men from many walks of life to record His words. In studying the lives of these men, we find them to be honest and sincere. The fact that they were willing to die often excruciating deaths for what they believed testifies that these ordinary yet honest men truly believed God had spoken to them. The men who wrote the New Testament and many hundreds of other believers (1 Corinthians 15:6) knew the truth of their message because they had seen and spent time with Jesus Christ after He had risen from the dead. Seeing the risen Christ had a tremendous impact on them. They went from hiding in fear to being willing to die for the message God had revealed to them. Their lives and deaths testify to the fact that the Bible truly is God’s Word.

A final external evidence that the Bible is truly God’s Word is the indestructibility of the Bible. Because of its importance and its claim to be the very Word of God, the Bible has suffered more vicious attacks and attempts to destroy it than any other book in history. From early Roman Emperors like Diocletian, through communist dictators and on to modern-day atheists and agnostics, the Bible has withstood and outlasted all of its attackers and is still today the most widely published book in the world.

Throughout time, skeptics have regarded the Bible as mythological, but archeology has confirmed it as historical. Opponents have attacked its teaching as primitive and outdated, but its moral and legal concepts and teachings have had a positive influence on societies and cultures throughout the world. It continues to be attacked by pseudo-science, psychology, and political movements, yet it remains just as true and relevant today as it was when it was first written. It is a book that has transformed countless lives and cultures throughout the last 2000 years. No matter how its opponents try to attack, destroy, or discredit it, the Bible remains; its veracity and impact on lives is unmistakable. The accuracy which has been preserved despite every attempt to corrupt, attack, or destroy it is clear testimony to the fact that the Bible is truly God’s Word and is supernaturally protected by Him. It should not surprise us that, no matter how the Bible is attacked, it always comes out unchanged and unscathed. After all, Jesus said, “Heaven and earth will pass away, but my words will never pass away” (Mark 13:31). After looking at the evidence, one can say without a doubt that, yes, the Bible is truly God’s Word.

اس سوال کا ہمارا جواب نہ صرف اس بات کا تعین کرے گا کہ ہم بائبل اور اس کی اہمیت کو اپنی زندگیوں میں کس نظر سے دیکھتے ہیں، بلکہ اس کا بالآخر ہم پر ابدی اثر بھی پڑے گا۔ اگر بائبل واقعی خدا کا کلام ہے، تو ہمیں اس کی قدر کرنی چاہیے، اس کا مطالعہ کرنا چاہیے، اس پر عمل کرنا چاہیے، اور اس پر مکمل بھروسہ کرنا چاہیے۔ اگر بائبل خُدا کا کلام ہے، تو اِس کو رد کرنا خُدا کو خود رد کرنا ہے۔

حقیقت یہ ہے کہ خدا نے ہمیں بائبل دی ہے ہمارے لئے اس کی محبت کا ثبوت اور مثال ہے۔ اصطلاح “وحی” کا سیدھا مطلب ہے کہ خدا نے بنی نوع انسان کو بتایا کہ وہ کیسا ہے اور ہم اس کے ساتھ کیسے صحیح تعلق رکھ سکتے ہیں۔ یہ وہ چیزیں ہیں جن کو ہم نہیں جان سکتے تھے اگر خدا نے ان کو بائبل میں ہم پر ظاہر نہ کیا ہوتا۔ اگرچہ بائبل میں خدا کے اپنے بارے میں انکشاف تقریباً 1500 سالوں میں آہستہ آہستہ دیا گیا تھا، لیکن اس میں ہمیشہ وہ سب کچھ موجود ہے جو انسان کو خدا کے بارے میں جاننے کی ضرورت ہے تاکہ اس کے ساتھ صحیح تعلق قائم کیا جا سکے۔ اگر بائبل واقعی خدا کا کلام ہے، تو یہ ایمان، مذہبی عمل اور اخلاقیات کے تمام معاملات کے لیے حتمی اختیار ہے۔

سوال ہمیں اپنے آپ سے پوچھنا چاہیے کہ ہم کیسے جان سکتے ہیں کہ بائبل خدا کا کلام ہے نہ کہ صرف ایک اچھی کتاب؟ بائبل کے بارے میں کیا منفرد ہے جو اسے دیگر تمام مذہبی کتابوں سے الگ کرتا ہے جو اب تک لکھی گئی ہیں؟ کیا اس بات کا کوئی ثبوت ہے کہ بائبل واقعی خدا کا کلام ہے؟ اس قسم کے سوالات کا سنجیدگی سے جائزہ لینا ضروری ہے اگر ہم بائبل کے خدا کا کلام ہونے کے دعوے کی صداقت کا تعین کرنا چاہتے ہیں، الہامی طور پر، اور ایمان اور عمل کے تمام معاملات کے لیے مکمل طور پر کافی ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ بائبل خدا کا کلام ہونے کا دعویٰ کرتی ہے۔ یہ پولس کی تیمتھیس کو دی گئی تعریف میں واضح طور پر نظر آتا ہے: ”… تم بچپن سے ہی مقدس صحیفوں کو جانتے ہو، جو مسیح یسوع پر ایمان کے ذریعے سے نجات کے لیے تمہیں عقلمند بنا سکتے ہیں۔ تمام صحیفے خُدا کی پھونک والی ہے اور راستبازی کی تعلیم، ملامت، اصلاح اور تربیت کے لیے کارآمد ہے، تاکہ خُدا کا آدمی ہر اچھے کام کے لیے پوری طرح لیس ہو جائے‘‘ (2 تیمتھیس 3:15-17)۔

اندرونی اور بیرونی دونوں ثبوت موجود ہیں کہ بائبل واقعی خدا کا کلام ہے۔ اندرونی شواہد بائبل کے اندر وہ چیزیں ہیں جو اس کی الہی اصل کی گواہی دیتی ہیں۔ پہلے داخلی ثبوتوں میں سے ایک کہ بائبل واقعی خدا کا کلام ہے اس کی وحدت میں نظر آتی ہے۔ اگرچہ یہ واقعی چھیاسٹھ انفرادی کتابیں ہیں، جو تین براعظموں پر، تین مختلف زبانوں میں، تقریباً 1500 سال کے عرصے میں، 40 سے زائد مصنفین کی طرف سے لکھی گئی ہیں جو زندگی کے کئی شعبوں سے آئے ہیں، بائبل شروع سے ہی ایک متحد کتاب ہے۔ تضاد کے بغیر ختم کرنا۔ یہ اتحاد دوسری تمام کتابوں سے منفرد ہے اور یہ ان الفاظ کی الہٰی اصلیت کا ثبوت ہے جنہیں خدا نے انسانوں کو ریکارڈ کرنے کی تحریک دی۔

ایک اور اندرونی ثبوت جو اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ بائبل واقعی خدا کا کلام ہے اس کے صفحات میں موجود پیشین گوئیاں ہیں۔ بائبل میں سینکڑوں تفصیلی پیشین گوئیاں ہیں جن میں انفرادی قوموں بشمول اسرائیل، بعض شہروں اور بنی نوع انسان کے مستقبل سے متعلق ہے۔ دیگر پیشین گوئیاں ایک ایسے شخص کے آنے سے متعلق ہیں جو مسیحا ہو گا، ان سب کا نجات دہندہ جو اس پر ایمان لائے گا۔ دوسری مذہبی کتابوں میں پائی جانے والی پیشین گوئیوں یا نوسٹراڈیمس جیسے مردوں کی پیشین گوئیوں کے برعکس، بائبل کی پیشین گوئیاں انتہائی مفصل ہیں۔ عہد نامہ قدیم میں یسوع مسیح کے بارے میں تین سو سے زیادہ پیشین گوئیاں ہیں۔ نہ صرف یہ پیشین گوئی کی گئی تھی کہ وہ کہاں پیدا ہوگا اور اس کا نسب، بلکہ یہ بھی کہ وہ کیسے مرے گا اور وہ دوبارہ جی اٹھے گا۔ بائبل میں مکمل ہونے والی پیشین گوئیوں کی وضاحت کرنے کا کوئی منطقی طریقہ نہیں ہے سوائے الہی اصل کے۔ پیشین گوئی کی جس حد تک یا قسم کے ساتھ کوئی دوسری مذہبی کتاب بائبل میں موجود نہیں ہے۔

بائبل کی الہی ابتدا کا تیسرا اندرونی ثبوت اس کا منفرد اختیار اور طاقت ہے۔ اگرچہ یہ ثبوت پہلے دو سے زیادہ موضوعی ہے، لیکن یہ بائبل کی الہٰی ابتدا کی ایک طاقتور گواہی سے کم نہیں ہے۔ بائبل کی اتھارٹی اب تک لکھی گئی کسی بھی دوسری کتاب کے برعکس ہے۔ اس اختیار اور طاقت کو اس طرح سے دیکھا جاتا ہے جس طرح سے بے شمار زندگیاں خدا کے کلام کی مافوق الفطرت طاقت سے تبدیل ہوئی ہیں۔ نشے کے عادی افراد اس سے ٹھیک ہو گئے، ہم جنس پرست اس سے آزاد ہو گئے، اس کے ذریعے چھوڑے گئے اور مردہ دھڑکنوں کو اس سے تبدیل کر دیا گیا، اس سے سخت مجرموں کی اصلاح ہوئی، گنہگاروں کو اس سے ملامت کی گئی، اور اس سے نفرت محبت میں بدل گئی۔ بائبل ایک متحرک اور بدلنے والی طاقت رکھتی ہے جو صرف اس لیے ممکن ہے کیونکہ یہ واقعی خدا کا کلام ہے۔

ایسے بیرونی شواہد بھی ہیں جو بتاتے ہیں کہ بائبل واقعی خدا کا کلام ہے۔ ایک بائبل کی تاریخییت ہے۔ کیونکہ بائبل تاریخی واقعات کی تفصیلات بیان کرتی ہے، اس لیے اس کی سچائی اور درستگی کسی بھی دوسری تاریخی دستاویز کی طرح تصدیق کے تابع ہے۔ آثار قدیمہ کے شواہد اور دیگر تحریروں دونوں کے ذریعے، بائبل کے تاریخی اکاؤنٹس کو بار بار درست اور درست ثابت کیا گیا ہے۔ درحقیقت، بائبل کی حمایت کرنے والے تمام آثار قدیمہ اور مخطوطہ ثبوت اسے قدیم دنیا کی بہترین دستاویزی کتاب بناتے ہیں۔ یہ حقیقت کہ بائبل تاریخی طور پر قابل تصدیق واقعات کو درست اور سچائی کے ساتھ ریکارڈ کرتی ہے جب ڈیل کرتے وقت اس کی سچائی کا ایک بڑا اشارہ ہے۔ مذہبی مضامین اور عقائد کے ساتھ تعلق رکھتا ہے اور خدا کا کلام ہونے کے اپنے دعوے کو ثابت کرنے میں مدد کرتا ہے۔

ایک اور بیرونی ثبوت کہ بائبل واقعی خدا کا کلام ہے اس کے انسانی مصنفین کی سالمیت ہے۔ جیسا کہ پہلے ذکر کیا گیا ہے، خدا نے اپنے الفاظ کو ریکارڈ کرنے کے لیے زندگی کے بہت سے شعبوں سے تعلق رکھنے والے مردوں کو استعمال کیا۔ ان آدمیوں کی زندگیوں کا مطالعہ کرتے ہوئے، ہم انہیں ایماندار اور مخلص پاتے ہیں۔ یہ حقیقت کہ وہ مرنے کے لیے تیار تھے ان کے یقین کے لیے اکثر اذیت ناک موت اس بات کی گواہی دیتی ہے کہ یہ عام لیکن ایماندار آدمی واقعی یقین رکھتے تھے کہ خدا نے ان سے بات کی تھی۔ نئے عہد نامے کو لکھنے والے اور بہت سے دوسرے مومنین (1 کرنتھیوں 15:6) اپنے پیغام کی سچائی کو جانتے تھے کیونکہ انہوں نے یسوع مسیح کے مردوں میں سے جی اٹھنے کے بعد دیکھا اور اس کے ساتھ وقت گزارا تھا۔ جی اٹھے مسیح کو دیکھ کر ان پر زبردست اثر ہوا۔ وہ خوف کے مارے چھپ گئے اور اس پیغام کے لیے مرنے کے لیے تیار ہو گئے جو خدا نے ان پر نازل کیا تھا۔ ان کی زندگی اور موت اس حقیقت کی گواہی دیتی ہے کہ بائبل واقعی خدا کا کلام ہے۔

ایک حتمی بیرونی ثبوت کہ بائبل واقعی خدا کا کلام ہے بائبل کی ناقابلِ فنا ہے۔ اس کی اہمیت اور اس کے خدا کا کلام ہونے کے دعوے کی وجہ سے، بائبل کو تاریخ کی کسی بھی دوسری کتاب کے مقابلے میں زیادہ شیطانی حملوں اور تباہ کرنے کی کوششوں کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ ڈیوکلیٹین جیسے ابتدائی رومن شہنشاہوں سے لے کر کمیونسٹ ڈکٹیٹروں کے ذریعے اور جدید دور کے ملحدوں اور agnostics تک، بائبل نے اپنے تمام حملہ آوروں کا مقابلہ کیا اور ان کو ختم کیا اور آج بھی دنیا میں سب سے زیادہ شائع ہونے والی کتاب ہے۔

وقت کے ساتھ ساتھ، شکوک و شبہات نے بائبل کو افسانوی تصور کیا ہے، لیکن آثار قدیمہ نے اسے تاریخی قرار دیا ہے۔ مخالفین نے اس کی تعلیم کو قدیم اور فرسودہ قرار دیا ہے، لیکن اس کے اخلاقی اور قانونی تصورات اور تعلیمات نے پوری دنیا کے معاشروں اور ثقافتوں پر مثبت اثرات مرتب کیے ہیں۔ اس پر چھدم سائنس، نفسیات اور سیاسی تحریکوں کا حملہ جاری ہے، پھر بھی یہ آج بھی اتنا ہی سچا اور متعلقہ ہے جیسا کہ یہ اس وقت تھا جب یہ پہلی بار لکھا گیا تھا۔ یہ ایک ایسی کتاب ہے جس نے پچھلے 2000 سالوں میں بے شمار زندگیوں اور ثقافتوں کو بدل دیا ہے۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا ہے کہ اس کے مخالفین اس پر حملہ کرنے، تباہ کرنے یا اسے بدنام کرنے کی کوشش کریں، بائبل باقی ہے۔ اس کی سچائی اور زندگیوں پر اس کا اثر واضح ہے۔ وہ درستگی جو اسے خراب کرنے، حملہ کرنے یا تباہ کرنے کی ہر کوشش کے باوجود محفوظ رہی ہے اس حقیقت کی واضح گواہی ہے کہ بائبل واقعی خدا کا کلام ہے اور مافوق الفطرت اس کی طرف سے محفوظ ہے۔ اس سے ہمیں حیران نہیں ہونا چاہئے کہ بائبل پر کیسے بھی حملہ کیا جائے، یہ ہمیشہ غیر تبدیل شدہ اور غیر محفوظ نکلتی ہے۔ آخرکار، یسوع نے کہا، ’’آسمان اور زمین ٹل جائیں گے، لیکن میرے الفاظ کبھی نہیں ٹلیں گے‘‘ (مرقس 13:31)۔ ثبوتوں کو دیکھنے کے بعد، کوئی بھی بلا شبہ کہہ سکتا ہے کہ، جی ہاں، بائبل واقعی خدا کا کلام ہے۔

Spread the love