Biblical Questions Answers

you can ask questions and receive answers from other members of the community.

Is there a conclusive argument for the existence of God? کیا خدا کے وجود کی کوئی حتمی دلیل ہے

The question of whether there is a conclusive argument for the existence of God has been debated throughout history, with exceedingly intelligent people taking both sides of the dispute. In recent times, arguments against the possibility of God’s existence have taken on a militant spirit that accuses anyone daring to believe in God as being delusional and irrational. Karl Marx asserted that anyone believing in God must have a mental disorder that causes invalid thinking. The psychiatrist Sigmund Freud wrote that a person who believed in a Creator God was delusional and only held those beliefs due to a “wish-fulfillment” factor that produced what Freud considered to be an unjustifiable position. The philosopher Friedrich Nietzsche bluntly said that faith equates to not wanting to know what is true. The voices of these three figures from history (along with others) are simply now parroted by a new generation of atheists who claim that a belief in God is intellectually unwarranted.

Is this truly the case? Is belief in God a rationally unacceptable position to hold? Is there a logical and reasonable argument for the existence of God? Outside of referencing the Bible, can a case for the existence of God be made that refutes the positions of both the old and new atheists and gives sufficient warrant for believing in a Creator? The answer is, yes, it can. Moreover, in demonstrating the validity of an argument for the existence of God, the case for atheism is shown to be intellectually weak.

An argument for the existence of God — something rather than nothing

To make an argument for the existence of God, we must start by asking the right questions. We begin with the most basic metaphysical question: “Why do we have something rather than nothing at all?” This is the basic question of existence—why are we here; why is the earth here; why is the universe here rather than nothing? Commenting on this point, one theologian has said, “In one sense man does not ask the question about God, his very existence raises the question about God.”

In considering this question, there are four possible answers to why we have something rather than nothing at all:

1. Reality is an illusion.
2. Reality is/was self-created.
3. Reality is self-existent (eternal).
4. Reality was created by something that is self-existent.

So, which is the most plausible solution? Let’s begin with reality being simply an illusion, which is what a number of Eastern religions believe. This option was ruled out centuries ago by the philosopher Rene Descartes who is famous for the statement, “I think, therefore I am.” Descartes, a mathematician, argued that if he is thinking, then he must “be.” In other words, “I think, therefore I am not an illusion.” Illusions require something experiencing the illusion, and moreover, you cannot doubt the existence of yourself without proving your existence; it is a self-defeating argument. So the possibility of reality being an illusion is eliminated.

Next is the option of reality being self-created. When we study philosophy, we learn of “analytically false” statements, which means they are false by definition. The possibility of reality being self-created is one of those types of statements for the simple reason that something cannot be prior to itself. If you created yourself, then you must have existed prior to you creating yourself, but that simply cannot be. In evolution this is sometimes referred to as “spontaneous generation” —something coming from nothing—a position that few, if any, reasonable people hold to anymore simply because you cannot get something from nothing. Even the atheist David Hume said, “I never asserted so absurd a proposition as that anything might arise without a cause.” Since something cannot come from nothing, the alternative of reality being self-created is ruled out.

Now we are left with only two choices—an eternal reality or reality being created by something that is eternal: an eternal universe or an eternal Creator. The 18th-century theologian Jonathan Edwards summed up this crossroads:

• Something exists.
• Nothing cannot create something.
• Therefore, a necessary and eternal “something” exists.

Notice that we must go back to an eternal “something.” The atheist who derides the believer in God for believing in an eternal Creator must turn around and embrace an eternal universe; it is the only other door he can choose. But the question now is, where does the evidence lead? Does the evidence point to matter before mind or mind before matter?

To date, all key scientific and philosophical evidence points away from an eternal universe and toward an eternal Creator. From a scientific standpoint, honest scientists admit the universe had a beginning, and whatever has a beginning is not eternal. In other words, whatever has a beginning has a cause, and if the universe had a beginning, it had a cause. The fact that the universe had a beginning is underscored by evidence such as the second law of thermodynamics, the radiation echo of the big bang discovered in the early 1900s, the fact that the universe is expanding and can be traced back to a singular beginning, and Einstein’s theory of relativity. All prove the universe is not eternal.

Further, the laws that surround causation speak against the universe being the ultimate cause of all we know for this simple fact: an effect must resemble its cause. This being true, no atheist can explain how an impersonal, purposeless, meaningless, and amoral universe accidentally created beings (us) who are full of personality and obsessed with purpose, meaning, and morals. Such a thing, from a causation standpoint, completely refutes the idea of a natural universe birthing everything that exists. So in the end, the concept of an eternal universe is eliminated.

Philosopher J. S. Mill (not a Christian) summed up where we have now come to: “It is self-evident that only Mind can create mind.” The only rational and reasonable conclusion is that an eternal Creator is the one who is responsible for reality as we know it. Or to put it in a logical set of statements:

• Something exists.
• You do not get something from nothing.
• Therefore a necessary and eternal “something” exists.
• The only two options are an eternal universe and an eternal Creator.
• Science and philosophy have disproven the concept of an eternal universe.
• Therefore, an eternal Creator exists.

Former atheist Lee Strobel, who arrived at this end result many years ago, has commented, “Essentially, I realized that to stay an atheist, I would have to believe that nothing produces everything; non-life produces life; randomness produces fine-tuning; chaos produces information; unconsciousness produces consciousness; and non-reason produces reason. Those leaps of faith were simply too big for me to take, especially in light of the affirmative case for God’s existence … In other words, in my assessment the Christian worldview accounted for the totality of the evidence much better than the atheistic worldview.”

An argument for the existence of God — knowing the Creator

But the next question we must tackle is this: if an eternal Creator exists (and we have shown that He does), what kind of Creator is He? Can we infer things about Him from what He created? In other words, can we understand the cause by its effects? The answer to this is yes, we can, with the following characteristics being surmised:

• He must be supernatural in nature (as He created time and space).
• He must be powerful (exceedingly).
• He must be eternal (self-existent).
• He must be omnipresent (He created space and is not limited by it).
• He must be timeless and changeless (He created time).
• He must be immaterial because He transcends space/physical.
• He must be personal (the impersonal cannot create personality).
• He must be infinite and singular as you cannot have two infinites.
• He must be diverse yet have unity as unity and diversity exist in nature.
• He must be intelligent (supremely). Only cognitive being can produce cognitive being.
• He must be purposeful as He deliberately created everything.
• He must be moral (no moral law can be had without a giver).
• He must be caring (or no moral laws would have been given).

These things being true, we now ask if any religion in the world describes such a Creator. The answer to this is yes: the God of the Bible fits this profile perfectly. He is supernatural (Genesis 1:1), powerful (Jeremiah 32:17), eternal (Psalm 90:2), omnipresent (Psalm 139:7), timeless/changeless (Malachi 3:6), immaterial (John 4:24), personal (Genesis 3:9), necessary (Colossians 1:17), infinite/singular (Jeremiah 23:24, Deuteronomy 6:4), diverse yet with unity (Matthew 28:19), intelligent (Psalm 147:4-5), purposeful (Jeremiah 29:11), moral (Daniel 9:14), and caring (1 Peter 5:6-7).

An argument for the existence of God — the flaws of atheism

One last subject to address on the matter of God’s existence is the matter of how justifiable the atheist’s position actually is. Since the atheist asserts the believer’s position is unsound, it is only reasonable to turn the question around and aim it squarely back at him. The first thing to understand is that the claim the atheist makes—“no god,” which is what “atheist” means—is an untenable position to hold from a philosophical standpoint. As legal scholar and philosopher Mortimer Adler says, “An affirmative existential proposition can be proved, but a negative existential proposition—one that denies the existence of something—cannot be proved.” For example, someone may claim that a red eagle exists and someone else may assert that red eagles do not exist. The former only needs to find a single red eagle to prove his assertion. But the latter must comb the entire universe and literally be in every place at once to ensure he has not missed a red eagle somewhere and at some time, which is impossible to do. This is why intellectually honest atheists will admit they cannot prove God does not exist.

Next, it is important to understand the issue that surrounds the seriousness of truth claims that are made and the amount of evidence required to warrant certain conclusions. For example, if someone puts two containers of lemonade in front of you and says that one may be more tart than the other, since the consequences of getting the more tart drink would not be serious, you would not require a large amount of evidence in order to make your choice. However, if to one cup the host added sweetener but to the other he introduced rat poison, then you would want to have quite a bit of evidence before you made your choice.

This is where a person sits when deciding between atheism and belief in God. Since belief in atheism could possibly result in irreparable and eternal consequences, it would seem that the atheist should be mandated to produce weighty and overriding evidence to support his position, but he cannot. Atheism simply cannot meet the test for evidence for the seriousness of the charge it makes. Instead, the atheist and those whom he convinces of his position slide into eternity with their fingers crossed and hope they do not find the unpleasant truth that eternity does indeed exist. As Mortimer Adler says, “More consequences for life and action follow from the affirmation or denial of God than from any other basic question.”

An argument for the existence of God — the conclusion

So does belief in God have intellectual warrant? Is there a rational, logical, and reasonable argument for the existence of God? Absolutely. While atheists such as Freud claim that those believing in God have a wish-fulfillment desire, perhaps it is Freud and his followers who actually suffer from wish-fulfillment: the hope and wish that there is no God, no accountability, and therefore no judgment. But refuting Freud is the God of the Bible who affirms His existence and the fact that a judgment is indeed coming for those who know within themselves the truth that He exists but suppress that truth (Romans 1:20). But for those who respond to the evidence that a Creator does indeed exist, He offers the way of salvation that has been accomplished through His Son, Jesus Christ: “But as many as received Him, to them He gave the right to become children of God, even to those who believe in His name, who were born, not of blood nor of the will of the flesh nor of the will of man, but of God” (John 1:12-13).

یہ سوال کہ آیا خدا کے وجود کی کوئی حتمی دلیل ہے، پوری تاریخ میں زیر بحث رہی ہے، انتہائی ذہین لوگوں نے اس تنازعہ کے دونوں فریقوں کو اپنایا ہے۔ حالیہ دنوں میں، خدا کے وجود کے امکان کے خلاف دلائل نے ایک عسکریت پسندانہ جذبہ اختیار کر لیا ہے جو کسی بھی شخص پر الزام لگاتا ہے جو خدا پر یقین کرنے کی ہمت رکھتا ہے اسے فریب اور غیر معقول ہے۔ کارل مارکس نے زور دے کر کہا کہ خدا پر یقین رکھنے والے کو ذہنی عارضہ ضرور ہے جو غلط سوچ کا باعث بنتا ہے۔ ماہر نفسیات سگمنڈ فرائیڈ نے لکھا ہے کہ ایک شخص جو ایک خالق خدا پر یقین رکھتا ہے وہ فریب میں مبتلا تھا اور وہ ان عقائد کو صرف “خواہش کی تکمیل” کے عنصر کی وجہ سے رکھتا ہے جس کی وجہ سے فرائیڈ نے اسے غیر منصفانہ حیثیت سمجھا۔ فلسفی فریڈرک نطشے نے دو ٹوک الفاظ میں کہا تھا کہ ایمان یہ نہ جاننے کے مترادف ہے کہ سچ کیا ہے۔ تاریخ سے ان تینوں شخصیات کی آوازیں (دوسروں کے ساتھ) اب ملحدوں کی ایک نئی نسل کے ذریعہ طوطی کی گئی ہیں جو یہ دعویٰ کرتے ہیں کہ خدا پر یقین فکری طور پر غیر ضروری ہے۔

کیا واقعی ایسا ہی ہے؟ کیا خدا پر یقین عقلی طور پر ناقابل قبول حیثیت رکھتا ہے؟ کیا خدا کے وجود کی کوئی منطقی اور معقول دلیل ہے؟ بائبل کا حوالہ دینے کے علاوہ، کیا خدا کے وجود کا کوئی مقدمہ بنایا جا سکتا ہے جو پرانے اور نئے دونوں ملحدوں کے موقف کی تردید کرتا ہے اور ایک خالق پر یقین کرنے کے لیے کافی ضمانت دیتا ہے؟ جواب ہے، ہاں، یہ ہو سکتا ہے۔ مزید برآں، خدا کے وجود کی دلیل کی صداقت کو ظاہر کرنے میں، الحاد کا مقدمہ فکری طور پر کمزور دکھایا گیا ہے۔

خدا کے وجود کی دلیل – کچھ نہیں کے بجائے کچھ

خدا کے وجود کی دلیل بنانے کے لیے، ہمیں صحیح سوالات پوچھ کر شروع کرنا چاہیے۔ ہم سب سے بنیادی مابعد الطبیعاتی سوال سے شروع کرتے ہیں: “ہمارے پاس کچھ بھی نہیں ہے کیوں؟” یہ وجود کا بنیادی سوال ہے- ہم یہاں کیوں ہیں؟ زمین یہاں کیوں ہے؟ کائنات یہاں کچھ نہیں کیوں ہے؟ اس نکتے پر تبصرہ کرتے ہوئے ایک ماہر الہیات نے کہا ہے کہ ’’ایک لحاظ سے انسان خدا کے بارے میں سوال نہیں کرتا بلکہ اس کا وجود ہی خدا کے بارے میں سوال اٹھاتا ہے۔‘‘

اس سوال پر غور کرتے ہوئے، چار ممکنہ جوابات ہیں کہ ہمارے پاس کچھ بھی نہیں بلکہ کچھ کیوں ہے:

1. حقیقت ایک وہم ہے۔
2. حقیقت خود بنائی گئی ہے۔
3. حقیقت خود موجود (ابدی) ہے۔
4. حقیقت کسی ایسی چیز سے پیدا ہوئی جو خود موجود ہے۔

تو، سب سے زیادہ معقول حل کون سا ہے؟ آئیے حقیقت کو محض ایک وہم ہونے کے ساتھ شروع کرتے ہیں، جس پر بہت سے مشرقی مذاہب مانتے ہیں۔ اس اختیار کو صدیوں پہلے فلسفی رینے ڈیکارٹس نے مسترد کر دیا تھا جو اس بیان کے لیے مشہور ہے، “میرے خیال میں، اس لیے میں ہوں۔” ڈیکارٹس، ایک ریاضی دان، نے دلیل دی کہ اگر وہ سوچ رہا ہے، تو اسے “ہونا چاہیے۔” دوسرے الفاظ میں، “میں سوچتا ہوں، اس لیے میں وہم نہیں ہوں۔” وہم کے لیے وہم کا تجربہ کرنے کے لیے کسی چیز کی ضرورت ہوتی ہے، اور اس کے علاوہ، آپ اپنے وجود کو ثابت کیے بغیر اپنے وجود پر شک نہیں کر سکتے۔ یہ خود کو شکست دینے والی دلیل ہے۔ تو حقیقت کے وہم ہونے کا امکان ختم ہو جاتا ہے۔

اس کے بعد حقیقت خود تخلیق ہونے کا آپشن ہے۔ جب ہم فلسفہ کا مطالعہ کرتے ہیں، تو ہم “تجزیاتی طور پر غلط” بیانات کے بارے میں سیکھتے ہیں، جس کا مطلب ہے کہ وہ تعریف کے لحاظ سے غلط ہیں۔ حقیقت کے خود ساختہ ہونے کا امکان ان قسم کے بیانات میں سے ایک سادہ وجہ سے ہے کہ کوئی چیز خود سے پہلے نہیں ہوسکتی ہے۔ اگر آپ نے اپنے آپ کو تخلیق کیا ہے، تو آپ اپنے آپ کو تخلیق کرنے سے پہلے موجود ہوں گے، لیکن ایسا نہیں ہو سکتا۔ ارتقاء میں اسے بعض اوقات “خود ساختہ نسل” کے طور پر بھیجا جاتا ہے — جو کچھ بھی نہیں سے آرہا ہے — ایک ایسی حیثیت جسے چند، اگر کوئی ہے تو، معقول لوگ صرف اس لیے برقرار رکھتے ہیں کہ آپ کو کچھ بھی نہیں مل سکتا۔ یہاں تک کہ ملحد ڈیوڈ ہیوم نے کہا، “میں نے کبھی بھی اتنی بیہودہ تجویز پیش نہیں کی کہ کوئی بھی چیز بغیر کسی وجہ کے پیدا ہو جائے۔” چونکہ کوئی چیز کسی چیز سے نہیں آسکتی، اس لیے حقیقت کے خود ساختہ ہونے کے متبادل کو مسترد کر دیا جاتا ہے۔

اب ہمارے پاس صرف دو انتخاب رہ گئے ہیں – ایک ابدی حقیقت یا حقیقت جو کسی ایسی چیز کے ذریعہ تخلیق کی جائے جو ابدی ہے: ایک ابدی کائنات یا ایک ابدی خالق۔ 18ویں صدی کے ماہر الہیات جوناتھن ایڈورڈز نے اس سنگم کا خلاصہ کیا:

• کچھ موجود ہے۔
• کچھ بھی کچھ نہیں بنا سکتا۔
لہذا، ایک ضروری اور ابدی “کچھ” موجود ہے۔

غور کریں کہ ہمیں ایک ابدی “کچھ” کی طرف واپس جانا چاہیے۔ ملحد جو ایک ابدی خالق پر یقین کرنے پر خدا پر ایمان رکھنے والے کا مذاق اڑاتا ہے اسے چاہیے کہ وہ پلٹ کر ایک ابدی کائنات کو گلے لگائے۔ یہ واحد دوسرا دروازہ ہے جسے وہ منتخب کر سکتا ہے۔ لیکن اب سوال یہ ہے کہ ثبوت کہاں لے جاتے ہیں؟ کیا شواہد ذہن سے پہلے مادے کی طرف اشارہ کرتے ہیں یا مادے سے پہلے دماغ؟

آج تک، تمام اہم سائنسی اور فلسفیانہ ثبوت ایک ابدی کائنات سے دور اور ایک ابدی خالق کی طرف اشارہ کرتے ہیں۔ سائنسی نقطہ نظر سے، ایماندار سائنسدان تسلیم کرتے ہیں کہ کائنات کی ایک ابتدا تھی، اور جس چیز کی ابتدا ہے وہ ابدی نہیں ہے۔ دوسرے لفظوں میں، جس چیز کی ابتدا ہوتی ہے اس کی ایک وجہ ہوتی ہے، اور اگر کائنات کی کوئی ابتدا ہوتی تو اس کی ایک وجہ ہوتی۔ حقیقت یہ ہے کہ کائنات کی شروعات تھی دوسری جیسے شواہد سے واضح ہے۔تھرموڈینامکس کا قانون، 1900 کی دہائی کے اوائل میں دریافت ہونے والے بگ بینگ کی تابکاری کی بازگشت، حقیقت یہ ہے کہ کائنات پھیل رہی ہے اور اسے ایک واحد آغاز اور آئن سٹائن کا نظریہ اضافیت تک دیکھا جا سکتا ہے۔ سب ثابت کرتے ہیں کہ کائنات ابدی نہیں ہے۔

اس کے علاوہ، وہ قوانین جو سبب کو گھیرے ہوئے ہیں، کائنات کے خلاف بولتے ہیں ان سب کی حتمی وجہ ہے جو ہم اس سادہ سی حقیقت کے لیے جانتے ہیں: اثر کو اس کی وجہ سے مشابہ ہونا چاہیے۔ یہ سچ ہے، کوئی ملحد اس بات کی وضاحت نہیں کر سکتا کہ کس طرح ایک بے مقصد، بے مقصد، بے معنی، اور غیر اخلاقی کائنات نے حادثاتی طور پر ایسی مخلوقات (ہم) پیدا کیں جو شخصیت سے بھرے ہوئے ہیں اور مقصد، معنی اور اخلاق کے جنون میں مبتلا ہیں۔ اس طرح کی چیز، وجہ کے نقطہ نظر سے، قدرتی کائنات کے تصور کی مکمل طور پر تردید کرتی ہے جو موجود ہے ہر چیز کو جنم دیتی ہے۔ تو آخر کار ایک ابدی کائنات کا تصور ہی ختم ہو جاتا ہے۔

فلسفی جے ایس مل (ایک عیسائی نہیں) نے خلاصہ کیا جہاں ہم اب آئے ہیں: “یہ خود واضح ہے کہ صرف دماغ ہی ذہن بنا سکتا ہے۔” واحد عقلی اور معقول نتیجہ یہ ہے کہ ایک ابدی خالق وہی ہے جو حقیقت کا ذمہ دار ہے جیسا کہ ہم اسے جانتے ہیں۔ یا اسے بیانات کے منطقی سیٹ میں ڈالنا:

• کچھ موجود ہے۔
• آپ کو کسی چیز سے کچھ حاصل نہیں ہوتا ہے۔
اس لیے ایک ضروری اور ابدی “کچھ” موجود ہے۔
• صرف دو ہی اختیارات ہیں ایک ابدی کائنات اور ایک ابدی خالق۔
• سائنس اور فلسفہ نے ابدی کائنات کے تصور کو غلط ثابت کیا ہے۔
لہذا، ایک ابدی خالق موجود ہے۔

سابق ملحد لی سٹروبل، جو کئی سال پہلے اس حتمی نتیجے پر پہنچے تھے، نے تبصرہ کیا ہے، “لازمی طور پر، میں نے محسوس کیا کہ ملحد رہنے کے لیے، مجھے یہ ماننا پڑے گا کہ کچھ بھی نہیں سب کچھ پیدا کرتا ہے۔ غیر زندگی زندگی پیدا کرتی ہے۔ بے ترتیب پن ٹھیک ٹیوننگ پیدا کرتا ہے۔ افراتفری معلومات پیدا کرتی ہے۔ لاشعوری شعور پیدا کرتی ہے۔ اور بے وجہ وجہ پیدا ہوتی ہے۔ ایمان کی وہ چھلانگیں میرے لیے بہت بڑی تھیں، خاص طور پر خُدا کے وجود کے اثباتی معاملے کی روشنی میں… دوسرے لفظوں میں، میرے جائزے میں مسیحی عالمی نظریہ ملحدانہ عالمی نظریہ سے کہیں بہتر شواہد کی کُلیت کے لیے حساب کرتا ہے۔

خدا کے وجود کی دلیل — خالق کو جاننا

لیکن اگلا سوال جس سے ہمیں نمٹنا چاہیے وہ یہ ہے: اگر ایک ابدی خالق موجود ہے (اور ہم نے دکھایا ہے کہ وہ کرتا ہے) تو وہ کس قسم کا خالق ہے؟ کیا ہم اس کی تخلیق سے اس کے بارے میں چیزوں کا اندازہ لگا سکتے ہیں؟ دوسرے الفاظ میں، کیا ہم اس کے اثرات سے وجہ سمجھ سکتے ہیں؟ اس کا جواب ہاں میں ہے، ہم مندرجہ ذیل خصوصیات کے ساتھ قیاس کر سکتے ہیں:

• وہ فطرت میں مافوق الفطرت ہونا چاہیے (جیسا کہ اس نے وقت اور جگہ تخلیق کی ہے)۔
• اسے طاقتور ہونا چاہیے (بہت زیادہ)۔
• اسے ابدی (خود موجود) ہونا چاہیے۔
• اسے ہمہ گیر ہونا چاہیے (اس نے جگہ بنائی ہے اور اس سے محدود نہیں ہے)۔
• اسے بے وقت اور بے تغیر ہونا چاہیے (اس نے وقت پیدا کیا)۔
• اسے غیر مادی ہونا چاہیے کیونکہ وہ خلا/جسمانی سے بالاتر ہے۔
• اسے ذاتی ہونا چاہیے (غیر شخصی شخصیت نہیں بنا سکتا)۔
• وہ لامحدود اور واحد ہونا چاہیے کیونکہ آپ کے پاس دو لامحدود نہیں ہو سکتے۔
• اسے متنوع ہونا چاہیے لیکن اتحاد ہونا چاہیے کیونکہ فطرت میں وحدت اور تنوع موجود ہے۔
• اسے ذہین (اعلیٰ ترین) ہونا چاہیے۔ صرف علمی وجود علمی وجود پیدا کر سکتا ہے۔
• اسے بامقصد ہونا چاہیے کیونکہ اس نے جان بوجھ کر ہر چیز کو تخلیق کیا ہے۔
• اسے اخلاقی ہونا چاہیے (دینے والے کے بغیر کوئی اخلاقی قانون نہیں ہو سکتا)۔
• اسے خیال رکھنا چاہیے (یا کوئی اخلاقی قانون نہیں دیا گیا ہوگا)۔

یہ باتیں درست ہونے کی وجہ سے اب ہم پوچھتے ہیں کہ کیا دنیا کا کوئی مذہب ایسے خالق کو بیان کرتا ہے؟ اس کا جواب ہاں میں ہے: بائبل کا خدا اس پروفائل پر بالکل فٹ بیٹھتا ہے۔ وہ مافوق الفطرت ہے (پیدائش 1:1)، طاقتور (یرمیاہ 32:17)، ابدی (زبور 90:2)، ہمہ گیر (زبور 139:7)، بے وقت/بے تبدیلی (ملاکی 3:6)، غیر مادی (یوحنا 4:24) )، ذاتی (پیدائش 3:9)، ضروری (کلوسیوں 1:17)، لامحدود/واحد (یرمیاہ 23:24، استثنا 6:4)، متنوع لیکن اتحاد کے ساتھ (متی 28:19)، ذہین (زبور 147:4) -5)، بامقصد (یرمیاہ 29:11)، اخلاقی (ڈینیل 9:14)، اور خیال رکھنے والا (1 پیٹر 5:6-7)۔خدا کے وجود کی دلیل — الحاد کی خامیاں

خدا کے وجود کے معاملے پر توجہ دینے کے لیے ایک آخری موضوع یہ ہے کہ ملحد کا موقف حقیقت میں کتنا جائز ہے۔ چونکہ ملحد کا دعویٰ ہے کہ مومن کا موقف غیر مناسب ہے، اس لیے یہ صرف معقول ہے کہ سوال کا رخ موڑ دیا جائے اور اسے اس کی طرف متوجہ کیا جائے۔ سب سے پہلے سمجھنے کی بات یہ ہے کہ ملحد جو دعویٰ کرتا ہے – “کوئی خدا نہیں”، جس کا مطلب ہے “ملحد” فلسفیانہ نقطہ نظر سے ایک ناقابل قبول پوزیشن ہے۔ جیسا کہ قانونی اسکالر اور فلسفی مورٹیمر ایڈلر کہتے ہیں، “ایک اثباتی وجودی تجویز کو ثابت کیا جا سکتا ہے، لیکن ایک منفی وجودی تجویز — جو کسی چیز کے وجود سے انکاری ہو — کو ثابت نہیں کیا جا سکتا۔” مثال کے طور پر، کوئی دعویٰ کر سکتا ہے کہ سرخ عقاب موجود ہے اور کوئی اور دعویٰ کر سکتا ہے کہ سرخ عقاب موجود نہیں ہیں۔ سابق کو اپنے دعوے کو ثابت کرنے کے لیے صرف ایک سرخ عقاب تلاش کرنے کی ضرورت ہے۔ لیکن مؤخر الذکر کو پوری کائنات میں کنگھی کرنی چاہیے اور لفظی طور پر ہر جگہ ایک ساتھ ہونا چاہیے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ وہ کہیں اور کسی وقت سرخ عقاب سے محروم نہ ہو گیا ہو، جو کرنا ناممکن ہے۔ یہی وجہ ہے کہ فکری طور پر دیانت دار ملحد تسلیم کریں گے۔وہ ثابت نہیں کر سکتے کہ خدا موجود نہیں ہے۔

اس کے بعد، اس مسئلے کو سمجھنا ضروری ہے جو سچائی کے دعوؤں کی سنجیدگی سے گھیرا ہوا ہے اور کچھ نتائج کی ضمانت کے لیے درکار شواہد کی مقدار۔ مثال کے طور پر، اگر کوئی آپ کے سامنے لیموں کے پانی کے دو ڈبے رکھے اور کہے کہ ایک دوسرے سے زیادہ ٹارٹ ہو سکتا ہے، کیونکہ زیادہ ٹارٹ ڈرنک پینے کے نتائج سنگین نہیں ہوں گے، تو آپ کو بہت زیادہ ثبوت کی ضرورت نہیں پڑے گی۔ آپ کا انتخاب کرنے کے لئے. تاہم، اگر ایک کپ میں میزبان نے میٹھا شامل کیا لیکن دوسرے میں اس نے چوہے کا زہر متعارف کرایا، تو آپ اپنی پسند کا انتخاب کرنے سے پہلے کافی ثبوت حاصل کرنا چاہیں گے۔

یہ وہ جگہ ہے جہاں ایک شخص الحاد اور خدا پر یقین کے درمیان فیصلہ کرتے وقت بیٹھتا ہے۔ چونکہ الحاد پر عقیدہ ممکنہ طور پر ناقابل تلافی اور ابدی نتائج کا باعث بن سکتا ہے، اس لیے ایسا لگتا ہے کہ ملحد کو اپنے موقف کی تائید کے لیے بھاری اور غالب ثبوت پیش کرنے کا پابند کیا جانا چاہیے، لیکن وہ ایسا نہیں کر سکتا۔ الحاد محض اس الزام کی سنگینی کے ثبوت کے امتحان پر پورا نہیں اتر سکتا۔ اس کے بجائے، ملحد اور جن کو وہ اپنے موقف کا قائل کرتا ہے وہ اپنی انگلیوں کو عبور کرتے ہوئے ابدیت کی طرف کھسک جاتے ہیں اور امید کرتے ہیں کہ وہ اس ناخوشگوار سچائی کو نہیں پا لیں گے کہ ابدیت واقعی موجود ہے۔ جیسا کہ مورٹیمر ایڈلر کہتا ہے، “زندگی اور عمل کے زیادہ نتائج کسی دوسرے بنیادی سوال کے مقابلے میں خدا کے اثبات یا انکار سے نکلتے ہیں۔”

خدا کے وجود کی دلیل – نتیجہ

تو کیا خدا پر ایمان کا عقلی جواز ہے؟ کیا خدا کے وجود کی کوئی عقلی، منطقی اور معقول دلیل ہے؟ بالکل۔ جب کہ فرائیڈ جیسے ملحدین کا دعویٰ ہے کہ خدا پر یقین رکھنے والوں کی خواہش کی تکمیل کی خواہش ہوتی ہے، شاید یہ فرائیڈ اور اس کے پیروکار ہی ہیں جو اصل میں خواہش کی تکمیل کا شکار ہیں: امید اور خواہش کہ خدا نہیں ہے، کوئی جوابدہی نہیں ہے، اور اس لیے کوئی فیصلہ نہیں ہے۔ . لیکن فرائڈ کی تردید بائبل کا خدا ہے جو اس کے وجود کی تصدیق کرتا ہے اور اس حقیقت کی تصدیق کرتا ہے کہ ایک فیصلہ واقعی ان لوگوں کے لیے آنے والا ہے جو اپنے اندر اس سچائی کو جانتے ہیں کہ وہ موجود ہے لیکن اس سچائی کو دبا دیتے ہیں (رومیوں 1:20)۔ لیکن ان لوگوں کے لیے جو اس ثبوت کا جواب دیتے ہیں کہ ایک خالق واقعی موجود ہے، وہ نجات کا راستہ پیش کرتا ہے جو اس کے بیٹے، یسوع مسیح کے ذریعے پورا ہوا ہے: “لیکن جتنے لوگ اسے قبول کرتے ہیں، اس نے ان کو اولاد بننے کا حق دیا۔ خُدا، اُن کے لیے بھی جو اُس کے نام پر ایمان رکھتے ہیں، جو نہ خون سے پیدا ہوئے، نہ جسم کی مرضی سے اور نہ ہی انسان کی مرضی سے، بلکہ خُدا سے” (یوحنا 1:12-13)۔

Spread the love