Biblical Questions Answers

you can ask questions and receive answers from other members of the community.

What are the 95 Theses of Martin Luther? مارٹن لوتھر کے 95 مقالے کیا ہیں

The “95 Theses” were written in 1517 by a German priest and professor of theology named Martin Luther. His revolutionary ideas served as the catalyst for the eventual breaking away from the Catholic Church and were later instrumental in forming the movement known as the Protestant Reformation. Luther wrote his radical “95 Theses” to express his growing concern with the corruption within the Church. In essence, his Theses called for a full reform of the Catholic Church and challenged other scholars to debate with him on matters of church policy.

One of the major issues that concerned Luther pertained to the matter of church officials selling “indulgences” to the people as a means of releasing them from having to exact penitence for their misdeeds. Indulgences were also claimed by the Church to limit the amount of time the purchaser’s loved one would have to spend in Purgatory. “As soon as the penny jingles into the money-box, the soul flies out [of purgatory].” Luther felt that these church officials were teaching people that they could literally buy their way into the kingdom of God or buy God’s favor. His belief was that the papacy had deteriorated to the point that the people were being led to believe in man-made doctrines. Luther believed that the Pope had the power to limit or do away with penances imposed by the clergy, but he did not have the power to bring about the interior contrition that leads to salvation. Only God could do that. Indulgences are positively harmful, according to the Theses, since they induce a false assurance of peace, and cause the recipients to neglect true repentance.

Luther published his “95 Theses” fully realizing that he faced excommunication and even death for protesting the traditions and beliefs of the Catholic Church. To do so was considered heresy against God. Luther’s “95 Theses” became highly sought after by the populace and were soon translated into German for the common people to read. The printing press then enabled the wide distribution of the Theses, provoking in the people more disenchantment with the ways of the Catholic Church.

In 1521, Pope Leo X excommunicated Luther from the Catholic Church and declared him a heretic. Luther was so despised by the church that a death warrant was issued, giving anyone permission to kill him. However, Luther was given protection by Prince Frederick of Saxony, a staunch defender of Luther. Hidden in one of Frederick’s castles, Luther began producing a translation of the Bible into the German language. Ten years later it was finally completed.

It was in 1529, some 12 years after Luther had nailed his Theses to the church door, that the word “Protestant” became a popular term describing those who supported Luther’s protests against the Church. These opponents of the Church declared their allegiance to God and protested any loyalty or commitments to the emperor. Thereafter, the name “Protestant” was applied to all who argued that the Church be reformed. Luther died in 1546 with his revolutionary Theses forming the foundation for what is known today as the Protestant Reformation.

Below is the complete text of the 95 Theses of Martin Luther:

Out of love for the truth and from desire to elucidate it, the Reverend Father Martin Luther, Master of Arts and Sacred Theology, and ordinary lecturer therein at Wittenberg, intends to defend the following statements and to dispute on them in that place. Therefore he asks that those who cannot be present and dispute with him orally shall do so in their absence by letter. In the name of our Lord Jesus Christ, Amen.

1. Our Lord and Master Jesus Christ, in saying, “Repent ye, etc.,” intended that the whole life of his believers on earth should be a constant penance.

2. And the word “penance” neither can, nor may, be understood as referring to the Sacrament of Penance, that is, to confession and atonement as exercised under the priest’s ministry.

3. Nevertheless He does not think of inward penance only: rather is inward penance worthless unless it produces various outward mortifications of the flesh.

4. Therefore mortification continues as long as hatred of oneself continues, that is to say, true inward penance lasts until entrance into the Kingdom of Heaven.

5. The Pope will not, and cannot, remit other punishments than those which he has imposed by his own decree or according to the canons.

6. The Pope can forgive sins only in the sense, that he declares and confirms what may be forgiven of God; or that he doth it in those cases which he hath reserved to himself; be this contemned, the sin remains unremitted.

7. God forgives none his sin without at the same time casting him penitent and humbled before the priest His vicar.

8. The canons concerning penance are imposed only on the living; they ought not by any means, following the same canons, to be imposed on the dying.

9. Therefore, the Holy Spirit, acting in the Pope, does well for us, when the latter in his decrees entirely removes the article of death and extreme necessity.

10. Those priests act unreasonably and ill who reserve for Purgatory the penance imposed on the dying.

11. This abuse of changing canonical penalty into the penalty of Purgatory seems to have arisen when the bishops were asleep.

12. In times of yore, canonical penalties were imposed, not after, but before, absolution, as tests of true repentance and affliction.

13. The dying pay all penalties by their death, are already dead to the canons, and rightly have exemption from them.

14. Imperfect spiritual health or love in the dying person necessarily brings with it great fear; and the less this love is, the greater the fear it brings.

15. This fear and horror – to say nothing of other things – are sufficient in themselves to produce the punishment of Purgatory, because they approximate to the horror of despair.

16. Hell, Purgatory, and Heaven seem to differ as perfect despair, imperfect despair, and security of salvation differ.

17. It seems as must in Purgatory love in the souls increase, as fear diminishes in them.

18. It does not seem to be proved either by arguments or by the Holy Writ that they are outside the state of merit and demerit, or increase of love.

19. This, too, seems not to be proved, that they are all sure and confident of their salvation, though we may be quite sure of it.

20. Therefore the Pope, in speaking of the perfect remission of all punishments, does not mean that all penalties in general be forgiven, but only those imposed by himself.

21. Therefore, those preachers of indulgences err who say that, by the Pope’s indulgence, a man may be exempt from all punishments, and be saved.

22. Yea, the Pope remits the souls in Purgatory no penalty which they, according to the canons, would have had to pay in this life.

23. If to anybody complete remission of all penalties may be granted, it is certain that it is granted only to those most approaching perfection, that is, to very few.

24. Therefore the multitude is misled by the boastful promise of the paid penalty, whereby no manner of distinction is made.

25. The same power that the Pope has over Purgatory, such has also every bishop in his diocese, and every curate in his parish.

26. The Pope acts most rightly in granting remission to souls, not by the power of the keys – which in Purgatory he does not possess – but by way of intercession.

27. They preach vanity who say that the soul flies out of Purgatory as soon as the money thrown into the chest rattles.

28. What is sure, is, that as soon as the penny rattles in the chest, gain and avarice are on the way of increase; but the intercession of the church depends only on the will of God Himself.

29. And who knows, too, whether all those souls in Purgatory wish to be redeemed, as it is said to have happened with St. Severinus and St. Paschalis.

30. Nobody is sure of having repented sincerely enough; much less can he be sure of having received perfect remission of sins.

31. Seldom even as he who has sincere repentance, is he who really gains indulgence; that is to say, most seldom to be found.

32. On the way to eternal damnation are they and their teachers, who believe that they are sure of their salvation through indulgences.

33. Beware well of those who say, the Pope’s pardons are that inestimable gift of God by which man is reconciled to God.

34. For the forgiveness contained in these pardons has reference only to the penalties of sacramental atonement which were appointed by men.

35. He preaches like a heathen who teaches that those who will deliver souls out of Purgatory or buy indulgences do not need repentance and contrition.

36. Every Christian who feels sincere repentance and woe on account of his sins, has perfect remission of pain and guilt even without letters of indulgence.

37. Every true Christian, be he still alive or already dead, partaketh in all benefits of Christ and of the Church given him by God, even without letters of indulgence.

38. Yet is the Pope’s absolution and dispensation by no means to be contemned, since it is, as I have said, a declaration of the Divine Absolution.

39. It is exceedingly difficult, even for the most subtle theologists, to praise at the same time before the people the great wealth of indulgence and the truth of utter contrition.

40. True repentance and contrition seek and love punishment; while rich indulgence absolves from it, and causes men to hate it, or at least gives them occasion to do so.

41. The Pope’s indulgence ought to be proclaimed with all precaution, lest the people should mistakenly believe it of more value than all other works of charity.

42. Christians should be taught, it is not the Pope’s opinion that the buying of indulgence is in any way comparable to works of charity.

43. Christians should be taught, he who gives to the poor, or lends to a needy man, does better than buying indulgence.

44. For, by the exercise of charity, charity increases and man grows better, while by means of indulgence, he does not become better, but only freer from punishment.

45. Christians should be taught, he who sees his neighbor in distress, and, nevertheless, buys indulgence, is not partaking in the Pope’s pardons, but in the anger of God.

46. Christians should be taught, unless they are rich enough, it is their duty to keep what is necessary for the use of their households, and by no means to throw it away on indulgences.

47. Christians should be taught, the buying of indulgences is optional and not commanded.

48. Christians should be taught, the Pope, in selling pardons, has more want and more desire of a devout prayer for himself than of the money.

49. Christians should be taught, the Pope’s pardons are useful as far as one does not put confidence in them, but on the contrary most dangerous, if through them one loses the fear of God.

50. Christians should be taught, if the Pope knew the ways and doings of the preachers of indulgences, he would prefer that St. Peter’s Minster should be burnt to ashes, rather than that it should be built up of the skin, flesh, and bones of his lambs.

51. Christians should be taught, the Pope, as it is his bounden duty to do, is indeed also willing to give of his own money – and should St. Peter’s be sold thereto – to those from whom the preachers of indulgences do most extort money.

52. It is a vain and false thing to hope to be saved through indulgences, though the commissary – nay, the Pope himself – was to pledge his own soul therefore.

53. Those who, on account of a sermon concerning indulgences in one church, condemn the word of God to silence in the others, are enemies of Christ and of the Pope.

54. Wrong is done to the word of God if one in the same sermon spends as much or more time on indulgences as on the word of the Gospel.

55. The opinion of the Pope cannot be otherwise than this:- If an indulgence – which is the lowest thing – be celebrated with one bell, one procession and ceremonies, then the Gospel – which is the highest thing – must be celebrated with a hundred bells, a hundred processions, and a hundred ceremonies.

56. The treasures of the Church, whence the Pope grants his dispensation are neither sufficiently named nor known among the community of Christ.

57. It is manifest that they are not temporal treasures, for the latter are not lightly spent, but rather gathered by many of the preachers.

58. Nor are they the merits of Christ and of the saints, for these, without the Pope’s aid, work always grace to the inner man, cross, death, and hell to the other man.

59. St. Lawrence called the poor of the community the treasures of the community and of the Church, but he understood the word according to the use in his time.

60. We affirm without pertness that the keys of the Church, bestowed through the merit of Christ, are this treasure.

61. For it is clear that the Pope’s power is sufficient for the remission of penalties and forgiveness in the reserved cases.

62. The right and true treasure of the Church is the most Holy Gospel of the glory and grace of God.

63. This treasure, however, is deservedly most hateful, for it makes the first to be last.

64. While the treasure of indulgence is deservedly most agreeable, for it makes the last to be first.

65. Therefore, the treasures of the Gospel are nets, with which, in times of yore, one fished for the men of Mammon.

66. But the treasures of indulgence are nets, with which now-a-days one fishes for the Mammon of men.

67. Those indulgences, which the preachers proclaim to be great mercies, are indeed great mercies, forasmuch as they promote gain.

68. And yet they are of the smallest compared to the grace of God and to the devotion of the Cross.

69. Bishops and curates ought to mark with eyes and ears, that the commissaries of apostolical (that is, Popish) pardons are received with all reverence.

70. But they ought still more to mark with eyes and ears, that these commissaries do not preach their own fancies instead of what the Pope has commanded.

71. He who speaks against the truth of apostolical pardons, be anathema and cursed.

72. But blessed be he who is on his guard against the preacher’s of pardons naughty and impudent words.

73. As the Pope justly disgraces and excommunicates those who use any kind of contrivance to do damage to the traffic in indulgences.

74. Much more it is his intention to disgrace and excommunicate those who, under the pretext of indulgences, use contrivance to do damage to holy love and truth.

75. To think that the Popish pardons have power to absolve a man even if – to utter an impossibility – he had violated the Mother of God, is madness.

76. We assert on the contrary that the Popish pardon cannot take away the least of daily sins, as regards the guilt of it.

77. To say that St. Peter, if he were now Pope, could show no greater mercies, is blasphemy against St. Peter and the Pope.

78. We assert on the contrary that both this and every other Pope has greater mercies to show: namely, the Gospel, spiritual powers, gifts of healing, etc. (1.Cor.XII).

79. He who says that the cross with the Pope’s arms, solemnly set on high, has as much power as the Cross of Christ, blasphemes God.

80. Those bishops, curates, and theologists, who allow such speeches to be uttered among the people, will have one day to answer for it.

81. Such impudent sermons concerning indulgences make it difficult even for learned men to protect the Pope’s honor and dignity against the calumnies, or at all events against the searching questions, of the laymen.

82. As for instance: – Why does not the Pope deliver all souls at the same time out of Purgatory for the sake of most holy love and on account of the bitterest distress of those souls – this being the most imperative of all motives, – while he saves an infinite number of souls for the sake of that most miserable thing money, to be spent on St. Peter’s Minster: – this being the very slightest of motives?

83. Or again: – Why do masses for the dead continue, and why does not the Pope return or permit to be withdrawn the funds which were established for the sake of the dead, since it is now wrong to pray for those who are already saved?

84. Again: – What is this new holiness of God and the Pope that, for money’s sake, they permit the wicked and the enemy of God to save a pious soul, faithful to God, and yet will not save that pious and beloved soul without payment, out of love, and on account of its great distress?

85. Again: – Why is it that the canons of penance, long abrogated and dead in themselves, because they are not used, are yet still paid for with money through the granting of pardons, as if they were still in force and alive?

86. Again: – Why does not the Pope build St. Peter’s Minster with his own money – since his riches are now more ample than those of Crassus, – rather than with the money of poor Christians?

87. Again: -Why does the Pope remit or give to those who, through perfect penitence, have already a right to plenary remission and pardon?

88. Again: – What greater good could the Church receive, than if the Pope presented this remission and pardon a hundred times a day to every believer, instead of but once, as he does now?

89. If the Pope seeks by his pardon the salvation of souls, rather than money, why does he annul letters of indulgence granted long ago, and declare them out of force, though they are still in force?

90. To repress these very telling questions of the laymen by force, and not to solve them by telling the truth, is to expose the Church and the Pope to the enemy’s ridicule and to make Christian people unhappy.

91. Therefore, if pardons were preached according to the Pope’s intention and opinion, all these objections would be easily answered, nay, they never had occurred.

92. Away then with all those prophets who say to the community of Christ, “Peace, peace”, and there is no peace.

93. But blessed be all those prophets who say to the community of Christ, “The cross, the cross,” and there is no cross.

94. Christians should be exhorted to endeavor to follow Christ their Head through Cross, Death, and Hell,

95. And thus hope with confidence to enter Heaven through many miseries, rather than in false security.

M. D. XVII

“95 تھیسسز” کو 1517 میں ایک جرمن پادری اور پروفیسر مارٹن لوتھر نے لکھا تھا۔ ان کے انقلابی خیالات نے کیتھولک چرچ سے علیحدگی کے لیے اتپریرک کے طور پر کام کیا اور بعد میں پروٹسٹنٹ ریفارمیشن کے نام سے مشہور تحریک کی تشکیل میں اہم کردار ادا کیا۔ لوتھر نے کلیسیا کے اندر بدعنوانی کے بارے میں اپنی بڑھتی ہوئی تشویش کا اظہار کرنے کے لیے اپنی بنیاد پرست “95 تھیسسز” لکھیں۔ خلاصہ یہ کہ اس کے مقالے نے کیتھولک چرچ کی مکمل اصلاح کا مطالبہ کیا اور دوسرے علماء کو چیلنج کیا کہ وہ چرچ کی پالیسی کے معاملات پر اس کے ساتھ بحث کریں۔

لوتھر کے متعلق ایک اہم مسئلہ چرچ کے عہدیداروں کے لوگوں کو ان کے غلط کاموں کے لئے صحیح توبہ کرنے سے رہائی کے ذریعہ کے طور پر “مصیبت” بیچنے کے معاملے سے متعلق تھا۔ چرچ کی طرف سے یہ بھی دعویٰ کیا گیا تھا کہ خریدار کے پیارے کو پورگیٹری میں خرچ کرنے کے لیے وقت کی مقدار کو محدود کیا جائے۔ “جیسے ہی پیسہ رقم کے ڈبے میں گھستا ہے، روح باہر اڑ جاتی ہے۔” لوتھر نے محسوس کیا کہ یہ چرچ کے اہلکار لوگوں کو سکھا رہے ہیں کہ وہ لفظی طور پر خدا کی بادشاہی میں جانے کا راستہ خرید سکتے ہیں یا خدا کا فضل خرید سکتے ہیں۔ اس کا عقیدہ یہ تھا کہ پاپائیت اس حد تک خراب ہو گئی تھی کہ لوگوں کو انسانوں کے بنائے ہوئے عقائد پر یقین کرنے کی طرف راغب کیا جا رہا تھا۔ لوتھر کا خیال تھا کہ پوپ کے پاس پادریوں کی طرف سے عائد کی گئی توبہ کو محدود کرنے یا ختم کرنے کا اختیار ہے، لیکن اس کے پاس یہ اختیار نہیں تھا کہ وہ اندرونی خلفشار کو جنم دے جو نجات کا باعث بنے۔ ایسا صرف اللہ ہی کر سکتا ہے۔ مقالہ جات کے مطابق عیش و عشرت مثبت طور پر نقصان دہ ہیں، کیونکہ وہ امن کی جھوٹی یقین دہانی کراتے ہیں، اور وصول کنندگان کو سچی توبہ کو نظر انداز کر دیتے ہیں۔

لوتھر نے اپنی “95 تھیسسز” کو مکمل طور پر اس بات کا احساس کرتے ہوئے شائع کیا کہ کیتھولک چرچ کی روایات اور عقائد کے خلاف احتجاج کرنے کی وجہ سے اسے اخراج اور یہاں تک کہ موت کا سامنا کرنا پڑا۔ ایسا کرنا خدا کے خلاف بدعت سمجھا جاتا تھا۔ لوتھر کے “95 تھیسسز” کو لوگوں نے بہت پسند کیا اور جلد ہی عام لوگوں کے پڑھنے کے لیے اس کا جرمن زبان میں ترجمہ کر دیا گیا۔ اس کے بعد پرنٹنگ پریس نے مقالہ جات کی وسیع تقسیم کو قابل بنایا، جس سے لوگوں میں کیتھولک چرچ کے طریقوں سے مزید مایوسی پیدا ہوئی۔

1521 میں، پوپ لیو X نے کیتھولک چرچ سے لوتھر کو خارج کر دیا اور اسے ایک بدعتی قرار دیا۔ چرچ نے لوتھر کو اس قدر حقیر سمجھا کہ موت کے وارنٹ جاری کیے گئے، کسی کو بھی اسے قتل کرنے کی اجازت دی گئی۔ تاہم، لوتھر کو پرنس فریڈرک آف سیکسنی نے تحفظ فراہم کیا تھا، جو لوتھر کے ایک کٹر محافظ تھے۔ فریڈرک کے قلعوں میں سے ایک میں چھپے ہوئے، لوتھر نے جرمن زبان میں بائبل کا ترجمہ تیار کرنا شروع کیا۔ دس سال بعد بالآخر یہ مکمل ہو گیا۔

یہ 1529 میں تھا، لوتھر کے چرچ کے دروازے پر اپنے مقالے کو کیلوں سے ٹھونسنے کے تقریباً 12 سال بعد، لفظ “پروٹسٹنٹ” ایک مقبول اصطلاح بن گیا جو چرچ کے خلاف لوتھر کے احتجاج کی حمایت کرنے والوں کو بیان کرتا ہے۔ چرچ کے ان مخالفین نے خدا کے ساتھ اپنی بیعت کا اعلان کیا اور شہنشاہ کے ساتھ کسی بھی وفاداری یا وابستگی پر احتجاج کیا۔ اس کے بعد، “پروٹسٹنٹ” نام کا اطلاق ان تمام لوگوں پر کیا گیا جنہوں نے چرچ کی اصلاح کی دلیل دی تھی۔ لوتھر 1546 میں اپنے انقلابی مقالے کے ساتھ مر گیا جس کی بنیاد آج پروٹسٹنٹ ریفارمیشن کے نام سے مشہور ہے۔

ذیل میں مارٹن لوتھر کے 95 مقالوں کا مکمل متن ہے۔

سچائی سے محبت اور اسے واضح کرنے کی خواہش سے، ریورنڈ فادر مارٹن لوتھر، ماسٹر آف آرٹس اینڈ سیکرڈ تھیالوجی، اور اس میں وِٹنبرگ کے عام لیکچرر، مندرجہ ذیل بیانات کا دفاع کرنے اور اس جگہ ان پر تنازعہ کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ اس لیے وہ درخواست کرتا ہے کہ جو لوگ حاضر نہیں ہوسکتے اور زبانی طور پر اس سے جھگڑا نہیں کرسکتے وہ ان کی غیر موجودگی میں خط کے ذریعے ایسا کریں۔ ہمارے خداوند یسوع مسیح کے نام میں، آمین۔

1. ہمارے آقا اور آقا یسوع مسیح نے، یہ کہتے ہوئے، “توبہ کرو، وغیرہ” کا ارادہ کیا کہ زمین پر ان کے ماننے والوں کی پوری زندگی ایک مستقل توبہ ہو۔

2. اور لفظ “تپسیا” کو نہ تو تپسیا کی تدفین کا حوالہ دیا جا سکتا ہے اور نہ ہی سمجھا جا سکتا ہے، یعنی اقرار اور کفارہ کے لیے جیسا کہ پادری کی وزارت کے تحت استعمال کیا جاتا ہے۔

3. اس کے باوجود وہ صرف باطنی تپسیا کے بارے میں نہیں سوچتا: بلکہ باطنی تپسیا بیکار ہے جب تک کہ اس سے جسم کے مختلف ظاہری نقصانات پیدا نہ ہوں۔

4. لہٰذا جب تک اپنے آپ سے نفرت جاری رہتی ہے، اس کا مطلب یہ ہے کہ حقیقی باطنی تپسیا آسمان کی بادشاہی میں داخل ہونے تک جاری رہتی ہے۔

5. پوپ ان سزاؤں کے علاوہ دیگر سزاؤں کو معاف نہیں کرے گا جو اس نے اپنے فرمان کے ذریعے یا اصولوں کے مطابق عائد کی ہیں۔

6. پوپ صرف اس معنی میں گناہوں کو معاف کر سکتا ہے، کہ وہ اعلان اور تصدیق کرتا ہے کہ خدا کی طرف سے کیا معاف کیا جا سکتا ہے۔ یا یہ کہ وہ ان معاملات میں ایسا کرتا ہے جو اس نے اپنے لیے محفوظ کر رکھے ہیں۔ اس کی مذمت کی جائے، گناہ ہمیشہ باقی رہتا ہے۔

7. خُدا کسی کے گناہ کو معاف نہیں کرتا جب تک کہ اُسے ایک ہی وقت میں توبہ کرنے والا اور پجاری کے سامنے عاجزی کا مظاہرہ کرے۔

8. تپسیا سے متعلق اصول صرف زندہ لوگوں پر عائد ہوتے ہیں۔ انہیں کسی بھی طرح سے، ایک ہی اصول کی پیروی کرتے ہوئے، مرنے والوں پر مسلط نہیں کیا جانا چاہئے۔

9. لہٰذا، روح القدس، پوپ میں کام کرتا ہے، ہمارے لیے اچھا کام کرتا ہے، جب کہ مؤخر الذکر اپنے فرمان میں مکمل طور پر ریمو

موت اور انتہائی ضرورت کا مضمون ہے۔

10. وہ پادری غیر معقول اور بیمار کام کرتے ہیں جو مرنے والے پر عائد کی گئی توبہ کو پاک کرنے کے لیے محفوظ رکھتے ہیں۔

11. کینونیکل سزا کو Purgatory کے جرمانے میں تبدیل کرنے کا یہ غلط استعمال ایسا لگتا ہے جب بشپ سو رہے تھے۔

12. پرانے زمانے میں، حقیقی توبہ اور مصیبت کے امتحان کے طور پر، بعد میں نہیں، بلکہ معافی سے پہلے، قانونی سزائیں عائد کی جاتی تھیں۔

13. مرنے والے اپنی موت سے تمام سزائیں ادا کرتے ہیں، پہلے ہی اصولوں کے لیے مر چکے ہیں، اور ان سے بجا طور پر استثنیٰ حاصل ہے۔

14. مرنے والے شخص میں نامکمل روحانی صحت یا محبت لازمی طور پر اپنے ساتھ بڑا خوف لاتی ہے۔ اور یہ محبت جتنی کم ہوتی ہے، اتنا ہی زیادہ خوف لاتا ہے۔

15. یہ خوف اور دہشت – دوسری چیزوں کے بارے میں کچھ نہیں کہنا – اپنے آپ میں پرگیٹری کی سزا پیدا کرنے کے لئے کافی ہے، کیونکہ وہ مایوسی کی ہولناکی کے قریب ہیں۔

16. جہنم، تعفن، اور جنت مختلف معلوم ہوتے ہیں جیسا کہ کامل مایوسی، نامکمل مایوسی، اور نجات کی سلامتی میں فرق ہے۔

17. ایسا لگتا ہے جیسا کہ پاکیزگی میں روحوں میں محبت بڑھتی ہے، جیسا کہ ان میں خوف کم ہوتا ہے۔

18. یہ بات نہ تو دلائل سے ثابت ہوتی ہے اور نہ ہی مقدس تحریر سے کہ وہ قابلیت اور خرابی یا محبت کے اضافے سے باہر ہیں۔

19. یہ بھی ثابت نہیں ہوتا، کہ وہ سب اپنی نجات کے بارے میں یقین اور یقین رکھتے ہیں، اگرچہ ہم اس پر پورا یقین رکھتے ہیں۔

20. اس لیے پوپ، تمام سزاؤں کی کامل معافی کی بات کرتے ہوئے، اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ عام طور پر تمام سزائیں معاف کر دی جائیں، بلکہ صرف وہ سزائیں جو خود عائد کی گئی ہوں۔

21. لہٰذا، خوشامد کے وہ مبلغین غلطی کرتے ہیں جو کہتے ہیں کہ، پوپ کی خوشنودی سے، ایک آدمی تمام سزاؤں سے مستثنیٰ ہو سکتا ہے، اور نجات پا سکتا ہے۔

22. جی ہاں، پوپ نے روحوں کو پرگیٹری میں کوئی جرمانہ نہیں دیا جو انہیں، اصولوں کے مطابق، اس زندگی میں ادا کرنا پڑے گا۔

23. اگر کسی کو تمام سزاؤں کی مکمل معافی دی جا سکتی ہے، تو یہ یقینی ہے کہ یہ صرف ان لوگوں کو دی جاتی ہے جو کمال کے قریب ہیں، یعنی بہت کم لوگوں کو۔

24. اس لیے بھاری جرمانے کے گھمنڈ بھرے وعدے سے بھیڑ کو گمراہ کیا جاتا ہے، جس میں کوئی امتیاز نہیں کیا جاتا۔

25. وہی طاقت جو پوپ کے پاس پورگیٹری پر ہے، اس طرح کے ہر بشپ کے پاس اس کے ڈائوسیز میں بھی ہے، اور اس کے پیرش میں ہر کیوریٹ بھی۔

26. پوپ روحوں کو معافی دینے میں سب سے زیادہ درست طریقے سے کام کرتا ہے، کنجیوں کی طاقت سے نہیں – جو کہ پرگیٹری میں اس کے پاس نہیں ہے – بلکہ شفاعت کے ذریعہ۔

27. وہ باطل کی تبلیغ کرتے ہیں جو کہتے ہیں کہ جیسے ہی سینے میں پیسہ ڈالا جاتا ہے روح اڑ جاتی ہے۔

28. جو بات یقینی ہے، وہ یہ ہے کہ جیسے ہی پیسہ سینے میں کھڑکتا ہے، فائدہ اور لالچ بڑھنے لگتا ہے۔ لیکن چرچ کی شفاعت صرف خدا کی مرضی پر منحصر ہے۔

29. اور یہ بھی کون جانتا ہے کہ آیا پرگیٹری میں وہ تمام روحیں چھڑانا چاہتی ہیں، جیسا کہ کہا جاتا ہے کہ سینٹ سیورینس اور سینٹ پاسچالیس کے ساتھ ہوا تھا۔

30. کسی کو یقین نہیں ہے کہ وہ سچے دل سے توبہ کر چکا ہے۔ اس سے بہت کم اس بات کا یقین ہو سکتا ہے کہ اسے گناہوں کی کامل معافی مل گئی ہے۔

31. شاذ و نادر ہی جیسا کہ سچے دل سے توبہ کرنے والا ہے، وہ ہے جو واقعی لذت حاصل کرتا ہے۔ یہ کہنا ہے کہ، سب سے زیادہ شاذ و نادر ہی پایا جاتا ہے.

32. ابدی لعنت کے راستے پر وہ اور ان کے اساتذہ ہیں، جو یقین رکھتے ہیں کہ انہیں اپنی نجات کا یقین ہے۔

33. ان لوگوں سے ہوشیار رہو جو کہتے ہیں، پوپ کی معافیاں خدا کا وہ انمول تحفہ ہے جس کے ذریعے انسان کا خدا سے میل ملاپ ہوتا ہے۔

34. کیونکہ ان معافیوں میں شامل معافی کا حوالہ صرف مقدس کفارہ کی سزاؤں کا ہے جو مردوں کے ذریعہ مقرر کیا گیا تھا۔

35. وہ ایک غیرت مند کی طرح تبلیغ کرتا ہے جو سکھاتا ہے کہ جو لوگ روحوں کو پاکیزگی سے نجات دلائیں گے یا عیش و عشرت خریدیں گے انہیں توبہ اور پشیمانی کی ضرورت نہیں ہے۔

36. ہر مسیحی جو اپنے گناہوں کی وجہ سے سچے دل سے توبہ اور افسوس محسوس کرتا ہے، اس کے پاس درد اور جرم کی کامل معافی ہے یہاں تک کہ خطوط کے بغیر بھی۔

37. ہر سچا مسیحی، خواہ وہ زندہ ہو یا پہلے سے مر گیا ہو، مسیح اور کلیسیا کے تمام فوائد میں حصہ لیتا ہے جو اسے خدا کی طرف سے دیا گیا ہے، یہاں تک کہ خطوط کے بغیر بھی۔

38. اس کے باوجود پوپ کی معافی اور تقسیم کسی بھی طرح سے قابل مذمت نہیں ہے، کیونکہ یہ، جیسا کہ میں نے کہا، الہی معافی کا اعلان ہے۔

39. یہ انتہائی مشکل ہے، یہاں تک کہ سب سے باریک علم الٰہیات کے لیے بھی، ایک ہی وقت میں لوگوں کے سامنے خوش مزاجی اور سراسر حقارت کی سچائی کی تعریف کرنا۔

40. سچی توبہ اور پشیمانی سزا کی تلاش اور محبت کرتی ہے۔ جب کہ بھرپور لذت اس سے دور ہوجاتی ہے، اور مردوں کو اس سے نفرت کرنے کا سبب بنتی ہے، یا کم از کم انہیں ایسا کرنے کا موقع فراہم کرتی ہے۔

41. پوپ کی خوشنودی کا اعلان تمام احتیاط کے ساتھ کیا جانا چاہیے، ایسا نہ ہو کہ لوگ غلطی سے اسے دیگر تمام فلاحی کاموں سے زیادہ قیمتی مان لیں۔

42. عیسائیوں کو سکھایا جانا چاہئے، یہ پوپ کی رائے نہیں ہے کہ عیش و آرام کی خریداری کسی بھی طرح سے خیراتی کاموں کے مقابلے میں ہے.

43. عیسائیوں کو سکھایا جانا چاہئے، جو غریبوں کو دیتا ہے، یا کسی ضرورت مند کو قرض دیتا ہے، وہ لذت خریدنے سے بہتر ہے۔

44. کیونکہ صدقہ کرنے سے صدقہ بڑھتا ہے اور انسان

بہتر ہوتا ہے، جب کہ عیش و عشرت سے وہ بہتر نہیں ہوتا، بلکہ صرف سزا سے آزاد ہوتا ہے۔

45. عیسائیوں کو سکھایا جانا چاہئے، جو اپنے پڑوسی کو مصیبت میں دیکھتا ہے، اور اس کے باوجود، خوشی خریدتا ہے، وہ پوپ کی معافی میں حصہ نہیں لے رہا ہے، لیکن خدا کے غصے میں۔

46. ​​عیسائیوں کو سکھایا جانا چاہئے، جب تک کہ وہ کافی امیر نہ ہوں، یہ ان کا فرض ہے کہ وہ اپنے گھر والوں کے استعمال کے لیے ضروری چیزوں کو اپنے پاس رکھیں، اور اسے کسی بھی طرح عیش و عشرت پر نہ پھینکیں۔

47. عیسائیوں کو سکھایا جانا چاہئے، عیش و آرام کی خریداری اختیاری ہے اور حکم نہیں ہے.

48. عیسائیوں کو سکھایا جانا چاہئے، پوپ، معافیاں بیچنے میں، پیسے سے زیادہ اپنے لیے عبادت کی زیادہ خواہش اور خواہش رکھتے ہیں۔

49. عیسائیوں کو سکھایا جانا چاہئے کہ پوپ کی معافیاں اس وقت تک مفید ہیں جہاں تک کوئی ان پر اعتماد نہ کرے، لیکن اس کے برعکس سب سے زیادہ خطرناک، اگر ان کے ذریعے سے کوئی خوف خدا سے محروم ہوجائے۔

50. عیسائیوں کو سکھایا جانا چاہیے، اگر پوپ کو مبلغین کے طریقے اور اعمال کا علم ہوتا تو وہ اس بات کو ترجیح دیتے کہ سینٹ پیٹرز منسٹر کو جلا کر راکھ کر دیا جائے، بجائے اس کے کہ اسے جلد، گوشت اور گوشت سے بنایا جائے۔ اس کے میمنے کی ہڈیاں

51. عیسائیوں کو سکھایا جانا چاہئے، پوپ، جیسا کہ یہ اس کا پابند فریضہ ہے، درحقیقت اپنے پیسے دینے کے لیے بھی تیار ہے – اور کیا سینٹ پیٹرز کو اس پر بیچ دیا جائے – ان لوگوں کو جن سے عیاشی کے مبلغین سب سے زیادہ بھتہ لیتے ہیں۔ پیسہ

52. عیش و عشرت کے ذریعے نجات پانے کی امید رکھنا بیہودہ اور جھوٹی بات ہے، حالانکہ کمیشنری – نہیں، خود پوپ کو – اس لیے اپنی جان گروی رکھنی تھی۔

53. وہ لوگ جو ایک کلیسیا کے وعظ کی وجہ سے دوسرے چرچ میں خدا کے کلام کو خاموش کرنے کی مذمت کرتے ہیں، مسیح اور پوپ کے دشمن ہیں۔

54. خدا کے کلام کے ساتھ غلط کیا جاتا ہے اگر ایک ہی واعظ میں کوئی اتنا یا زیادہ وقت خوشخبری پر خرچ کرتا ہے جتنا کہ انجیل کے کلام پر۔

55. پوپ کی رائے اس کے علاوہ نہیں ہوسکتی ہے: – اگر ایک خوشی – جو سب سے کم چیز ہے – ایک گھنٹی، ایک جلوس اور تقریبات کے ساتھ منایا جائے، تو انجیل – جو سب سے اعلی چیز ہے – کو منایا جانا چاہئے سو گھنٹیاں، سو جلوس، اور سو تقریبات۔

56. کلیسیا کے خزانے، جہاں سے پوپ اپنا تصرف دیتا ہے، مسیح کی برادری کے درمیان نہ تو کافی نام ہے اور نہ ہی جانا جاتا ہے۔

57. یہ ظاہر ہے کہ یہ دنیاوی خزانے نہیں ہیں، کیونکہ بعد والے کو ہلکے سے خرچ نہیں کیا جاتا، بلکہ بہت سے مبلغین کے ذریعہ جمع کیا جاتا ہے۔

58. اور نہ ہی وہ مسیح اور سنتوں کی خوبیاں ہیں، کیونکہ ان کے لیے، پوپ کی مدد کے بغیر، کام ہمیشہ اندرونی آدمی کے لیے فضل، کراس، موت، اور دوسرے انسان کے لیے جہنم ہے۔

59. سینٹ لارنس نے کمیونٹی کے غریبوں کو کمیونٹی اور چرچ کا خزانہ کہا، لیکن اس نے اس لفظ کو اپنے زمانے میں استعمال کے مطابق سمجھا۔

60. ہم بلاوجہ اثبات کرتے ہیں کہ کلیسیا کی کنجیاں، جو مسیح کی خوبی سے عطا کی گئی ہیں، یہ خزانہ ہیں۔

61. کیونکہ یہ واضح ہے کہ پوپ کی طاقت مخصوص مقدمات میں سزاؤں کی معافی اور معافی کے لیے کافی ہے۔

62. کلیسیا کا صحیح اور حقیقی خزانہ خدا کے جلال اور فضل کی سب سے مقدس انجیل ہے۔

63. تاہم، یہ خزانہ سب سے زیادہ قابل نفرت ہے، کیونکہ یہ سب سے پہلے کو آخری بناتا ہے۔

64. جبکہ لذت کا خزانہ سب سے زیادہ قابل قبول ہے، کیونکہ یہ آخری کو اولین بناتا ہے۔

65. لہٰذا، انجیل کے خزانے جال ہیں، جن سے پرانے زمانے میں میمون کے آدمیوں کے لیے مچھلیاں پکڑی جاتی تھیں۔

66. لیکن عیش و عشرت کے خزانے جال ہیں، جن سے آج کل انسانوں کے مال کے لیے مچھلیاں پکڑی جاتی ہیں۔

67. وہ لذتیں، جنہیں مبلغین بڑی رحمت قرار دیتے ہیں، درحقیقت بڑی رحمتیں ہیں، کیونکہ وہ نفع کو فروغ دیتی ہیں۔

68. اور پھر بھی وہ خدا کے فضل اور صلیب کی عقیدت کے مقابلے میں سب سے چھوٹے ہیں۔

69. بشپ اور کیوریٹس کو آنکھوں اور کانوں سے نشان زد کرنا چاہیے، کہ مرتدین (یعنی پاپش) کی معافیاں پوری عقیدت کے ساتھ وصول کی جاتی ہیں۔

70. لیکن انہیں آنکھوں اور کانوں سے نشان زد کرنے کے لئے اور بھی زیادہ ہونا چاہئے کہ یہ کمیسریز پوپ کے حکم کے بجائے اپنی پسند کی تبلیغ نہیں کرتے ہیں۔

71. وہ جو رسولی معافی کی سچائی کے خلاف بات کرے، وہ بے شرم اور ملعون ہو۔

72. لیکن مبارک ہو وہ جو مبلغ کی شرارتی اور بے ہودہ باتوں سے بچتا ہے۔

73. جیسا کہ پوپ انصاف کے ساتھ ان لوگوں کی بے عزتی کرتا ہے اور ان کو خارج کرتا ہے جو عیش و عشرت میں ٹریفک کو نقصان پہنچانے کے لیے کسی بھی قسم کی سازش کا استعمال کرتے ہیں۔

74. اس سے کہیں زیادہ اس کا ارادہ ان لوگوں کو رسوا اور خارج کرنا ہے جو عیش و عشرت کے بہانے مقدس محبت اور سچائی کو نقصان پہنچانے کے لیے سازشیں استعمال کرتے ہیں۔

75. یہ سوچنا کہ پاپش معافیوں میں انسان کو معاف کرنے کی طاقت ہے یہاں تک کہ اگر – ایک ناممکن بات کہے – اس نے خدا کی ماں کی خلاف ورزی کی ہے، پاگل پن ہے۔

76. ہم اس کے برعکس زور دیتے ہیں کہ پاپش کی معافی روزانہ کے چھوٹے سے چھوٹے گناہوں کو دور نہیں کر سکتی، جہاں تک اس کے جرم کا تعلق ہے۔

77. یہ کہنا کہ سینٹ پیٹر، اگر وہ اب پوپ ہوتے تو اس سے زیادہ رحم نہیں کر سکتے تھے، سینٹ پیٹر اور پوپ کے خلاف توہین ہے۔

78. ہم اس کے برعکس دعوی کرتے ہیں۔

یہ اور ہر دوسرے پوپ کے پاس ظاہر کرنے کے لیے زیادہ رحم ہے: یعنی انجیل، روحانی طاقتیں، شفا یابی کے تحفے، وغیرہ۔ (1.Cor.XII)۔

79. وہ جو کہتا ہے کہ پوپ کے بازوؤں کے ساتھ صلیب، سنجیدگی سے بلندی پر رکھی ہوئی ہے، اس کے پاس مسیح کی صلیب جتنی طاقت ہے، خدا کی توہین کرتا ہے۔

80. وہ بشپ، کیوریٹس اور ماہرِ دینیات، جو لوگوں میں ایسی تقریریں کرنے کی اجازت دیتے ہیں، ان کے پاس اس کا جواب دینے کے لیے ایک دن ہوگا۔

81. لذتوں سے متعلق اس طرح کے بے ہودہ خطبات پڑھے لکھے آدمیوں کے لیے بھی پوپ کی عزت اور وقار کو طعنوں کے خلاف، یا عام آدمی کے تلاشی سوالات کے خلاف تمام واقعات میں محفوظ رکھنا مشکل بنا دیتے ہیں۔

82. مثال کے طور پر: – پوپ سب سے زیادہ مقدس محبت کی خاطر اور ان روحوں کی سب سے تلخ تکلیف کی وجہ سے ایک ہی وقت میں تمام روحوں کو نجات کیوں نہیں دیتا ہے – یہ تمام مقاصد میں سب سے زیادہ ضروری ہے، – جب کہ وہ سینٹ پیٹرز منسٹر پر خرچ کرنے کے لیے اس انتہائی دکھی چیز کی خاطر لاتعداد جانیں بچاتا ہے: – یہ بہت ہی معمولی مقصد ہے؟

83. یا پھر: – مرنے والوں کے لیے اجتماع کیوں جاری رہتا ہے، اور پوپ ان فنڈز کو واپس کیوں نہیں کرتا یا نکالنے کی اجازت کیوں نہیں دیتا جو مرنے والوں کی خاطر قائم کیے گئے تھے، کیونکہ اب ان لوگوں کے لیے دعا کرنا غلط ہے جو پہلے سے موجود ہیں۔ محفوظ کیا؟

84. دوبارہ: – خدا اور پوپ کا یہ نیا تقدس کیا ہے کہ پیسے کی خاطر وہ بدکاروں اور خدا کے دشمنوں کو اجازت دیتے ہیں کہ وہ ایک متقی روح کو بچائیں جو خدا کا وفادار ہے، لیکن پھر بھی اس پاکیزہ اور پیاری روح کو نہیں بچائے گا۔ ادائیگی کے بغیر، محبت سے، اور اس کی بڑی مصیبت کی وجہ سے؟

85. ایک بار پھر: – ایسا کیوں ہے کہ توبہ کے اصول، جو طویل عرصے سے منسوخ اور اپنے آپ میں مردہ ہیں، کیوں کہ وہ استعمال نہیں کیے گئے ہیں، پھر بھی معافی کے ذریعے رقم سے ادا کیے جاتے ہیں، گویا وہ ابھی تک نافذ اور زندہ ہیں؟

86. ایک بار پھر: – پوپ سینٹ پیٹرز منسٹر کو اپنے پیسوں سے کیوں نہیں بناتا – کیوں کہ اس کی دولت اب کراسس کے لوگوں سے زیادہ ہے، نہ کہ غریب عیسائیوں کے پیسوں سے؟

87. ایک بار پھر: -پوپ ان لوگوں کو کیوں معافی یا معافی کیوں دیتا ہے جو کامل توبہ کے ذریعے پہلے ہی مکمل معافی اور معافی کا حق رکھتے ہیں؟

88. دوبارہ: – چرچ کو اس سے بڑی بھلائی اور کیا مل سکتی ہے کہ اگر پوپ ہر مومن کو یہ معافی اور معافی دن میں ایک بار کی بجائے ایک بار پیش کرے، جیسا کہ وہ اب کرتا ہے؟

89. اگر پوپ پیسے کی بجائے اپنی معافی کے ذریعے روحوں کی نجات کا خواہاں ہے، تو وہ کیوں بہت پہلے دیے گئے مراعات کے خطوط کو منسوخ کر دیتا ہے، اور ان کا اعلان کیوں کرتا ہے، حالانکہ وہ ابھی تک نافذ ہیں؟

90. عام آدمیوں کے ان انتہائی سوالیہ سوالات کو طاقت کے ذریعے دبانا، اور انہیں سچ بول کر حل نہ کرنا، کلیسیا اور پوپ کو دشمن کے طعنوں سے بے نقاب کرنا اور عیسائیوں کو ناخوش کرنا ہے۔

91. لہٰذا، اگر معافی کی تبلیغ پوپ کی نیت اور رائے کے مطابق کی جائے تو ان تمام اعتراضات کا آسانی سے جواب مل جائے گا، بلکہ ایسا کبھی نہیں ہوا تھا۔

92. پھر ان تمام انبیاء کے ساتھ جو مسیح کی جماعت سے کہتے ہیں، “امن، سلامتی”، اور امن نہیں ہے۔

93. لیکن مبارک ہوں وہ تمام نبی جو مسیح کی جماعت سے کہتے ہیں کہ صلیب، صلیب، اور کوئی صلیب نہیں ہے۔

94. مسیحیوں کو کراس، موت اور جہنم کے ذریعے اپنے سر مسیح کی پیروی کرنے کی تلقین کی جانی چاہیے،

95. اور اس طرح جھوٹی حفاظت کی بجائے بہت سے مصائب کے ذریعے جنت میں داخل ہونے کے لیے اعتماد کے ساتھ امید رکھیں۔

Spread the love