Biblical Questions Answers

you can ask questions and receive answers from other members of the community.

What are the Thirty-nine Articles and Forty-two Articles of the Church of England? چرچ آف انگلینڈ کے انتیس آرٹیکلز اور بیالیس آرٹیکلز کیا ہیں

The 42 Articles, which became the 39 Articles, is the doctrinal statement of the Church of England. These articles were not meant to be an exhaustive statement of Anglican doctrine, but to clarify points of difference between the Anglican Church (the Church of England) and the Roman Catholic Church on one hand and various non-Conformist Protestant groups on the other.

The process of creating the 39 Articles started in 1538 with Thomas Cranmer (archbishop of Canterbury and leader in the English Reformation), who produced 13 articles. However, there were still controversies to be settled and issues to be addressed, so in 1553 a larger list of 42 articles was released. Before it could be generally embraced by all the clergy, King Edward VI died, and his sister Mary reunited the Anglican Church with the Roman Catholic Church, and Protestantism was suppressed. Upon Mary’s death, Elizabeth came to the throne and re-established an independent Anglican Church and Protestantism. The 42 Articles were once again brought into consideration and in 1571 revised to become the 39 Articles. The 39 Articles are still accepted by the Anglican Church today as well as the Episcopal Church in the United States (with some modifications as noted within the articles).

The following are the 39 Articles as found at anglicansonline.org/basics/thirty-nine_articles.html (accessed 11/29/20). They can also be found at the website of the Anglican Church of Canada. The short summary of each article (in italics) comes from aocinternational.org/what-are-the-39-articles-of-religion (accessed 11/29/20)

I. Of Faith in the Holy Trinity. There is but one living and true God, everlasting, without body, parts, or passions; of infinite power, wisdom, and goodness; the Maker, and Preserver of all things both visible and invisible. And in unity of this Godhead there be three Persons, of one substance, power, and eternity; the Father, the Son, and the Holy Ghost.

Defines our faith as Trinitarian as we believe in a triune Godhead of God the Father, God the Son, and God the Holy Ghost or Holy Spirit (see St. Matthew 28:19).

II. Of the Word or Son of God, which was made very Man. The Son, which is the Word of the Father, begotten from everlasting of the Father, the very and eternal God, and of one substance with the Father, took Man’s nature in the womb of the blessed Virgin, of her substance: so that two whole and perfect Natures, that is to say, the Godhead and Manhood, were joined together in one Person, never to be divided, whereof is one Christ, very God, and very Man; who truly suffered, was crucified, dead, and buried, to reconcile his Father to us, and to be a sacrifice, not only for original guilt, but also for actual sins of men.

Speaks of God the Son as having two natures: both fully man and fully God, who was virgin-born, and whose death on the cross reconciles all true Christians to the Father (see St. John 1:14).

III. Of the going down of Christ into Hell. As Christ died for us, and was buried, so also is it to be believed, that he went down into Hell.

Makes mention of Christ going down into “Hell.” While there remains some debate concerning his actually going into the portion of the underworld where the evil and notorious are held until the Great White Throne Judgment, it is accepted that he did descend to the lower world (see Ephesians 4:9).

IV. Of the Resurrection of Christ. Christ did truly rise again from death, and took again his body, with flesh, bones, and all things appertaining to the perfection of Man’s nature; wherewith he ascended into Heaven, and there sitteth, until he return to judge all Men at the last day.

Teaches us about the resurrection of Christ and that he will return and judge all people at the last day. (See Revelation 22:12.)

V. Of the Holy Ghost. The Holy Ghost, proceeding from the Father and the Son, is of one substance, majesty, and glory, with the Father and the Son, very and eternal God.

Defends the inclusion of the filioque as found in the Nicene Creed, which states that the Holy Ghost does indeed proceed from both the Father and the Son (see St. John 14:16, 15:26, and 16:7).

VI. Of the Sufficiency of the Holy Scriptures for Salvation. Holy Scripture containeth all things necessary to salvation: so that whatsoever is not read therein, nor may be proved thereby, is not to be required of any man, that it should be believed as an article of the Faith, or be thought requisite or necessary to salvation. In the name of the Holy Scripture we do understand those canonical Books of the Old and New Testament, of whose authority was never any doubt in the Church.

Of the Names and Number of the Canonical Books

Genesis
Exodus
Leviticus
Numbers
Deuteronomy
Joshua
Judges
Ruth
The First Book of Samuel
The Second Book of Samuel
The First Book of Kings
The Second Book of Kings
The First Book of Chronicles
The Second Book of Chronicles
The First Book of Esdras*
The Second Book of Esdras*
The Book of Esther
The Book of Job
The Psalms
The Proverbs
Ecclesiastes or Preacher
Cantica, or Songs of Solomon
Four Prophets the greater
Twelve Prophets the less

* The Anglican Church of Canada explains that these two books are Ezra and Nehemiah.

And the other Books (as Hierome saith) the Church doth read for example of life and instruction of manners; but yet doth it not apply them to establish any doctrine; such are these following:

The Third Book of Esdras
The Fourth Book of Esdras
The Book of Tobias
The Book of Judith
The Song of the Three Children
The Story of Susanna
Of Bel and the Dragon
The rest of the Book of Esther
The Book of Wisdom
Jesus the Son of Sirach
Baruch the Prophet
The Prayer of Manasses
The First Book of Maccabees
The Second Book of Maccabees

All the Books of the New Testament, as they are commonly received, we do receive, and account them Canonical.

Affirms the sufficiency of the Holy Scriptures for salvation. It also confirms the canon of Scripture in the sixty-six “commonly received” books of the Old and New Testaments. It also states that the Apocryphal books are outside of the established canon of the church (see II St. Timothy 3:16, 17).

VII. Of the Old Testament. The Old Testament is not contrary to the New: for both in the Old and New Testament everlasting life is offered to Mankind by Christ, who is the only Mediator between God and Man, being both God and Man. Wherefore they are not to be heard, which feign that the old Fathers did look only for transitory promises. Although the Law given from God by Moses, as touching Ceremonies and Rites, do not bind Christian men, nor the Civil precepts thereof ought of necessity to be received in any commonwealth; yet notwithstanding, no Christian man whatsoever is free from the obedience of the Commandments which are called Moral.

In this article, we learn that the Old and New Testaments are not contrary to one another but are two halves of a whole. From its sacred pages, we read of not only the Law, and its attendant ceremonies which are but a shadow of things in heaven (Hebrews 8:5), but of the prophecies and promises regarding not only the redemption of Israel, but our redemption as well through the atoning work of the coming Messiah whom we know from the New Testament as our Lord and Savior Jesus Christ ( see Galatians 3:24).

VIII. Of the Creeds. The Nicene Creed, and that which is commonly called the Apostles’ Creed, ought thoroughly to be received and believed: for they may be proved by most certain warrants of Holy Scripture.

The original Article given Royal assent in 1571 and reaffirmed in 1662, was entitled “Of the Three Creeds”; and began as follows, “The Three Creeds, Nicene Creed, Athanasius’s Creed, and that which is commonly called the Apostles’ Creed …”

Affirms our use of the Apostles’ and Nicene Creeds. The Apostles’ Creed is the oldest, probably being used in some form in the early Second Century A.D. The Nicene Creed came out of the Council of Nicea in 325 A.D.

IX. Of Original or Birth-Sin. Original sin standeth not in the following of Adam, (as the Pelagians do vainly talk;) but it is the fault and corruption of the Nature of every man, that naturally is engendered of the offspring of Adam; whereby man is very far gone from original righteousness, and is of his own nature inclined to evil, so that the flesh lusteth always contrary to the Spirit; and therefore in every person born into this world, it deserveth God’s wrath and damnation. And this infection of nature doth remain, yea in them that are regenerated; whereby the lust of the flesh, called in Greek, φρονημα σαρκος, (which some do expound the wisdom, some sensuality, some the affection, some the desire, of the flesh), is not subject to the Law of God. And although there is no condemnation for them that believe and are baptized; yet the Apostle doth confess, that concupiscence and lust hath of itself the nature of sin.

Refers to our birth in this world under original sin. Original sin was given to us by our first parents. On its account, our flesh is drawn to satisfy its lustful desires. And although there is no condemnation for them that believe on the Lord Jesus Christ and are baptized, yet our flesh still contains this malady. Only by the workings of the Holy Spirit within the believer will he or she produce the fruits of repentance that are pleasing and acceptable to God.

X. Of Free-Will. The condition of Man after the fall of Adam is such, that he cannot turn and prepare himself, by his own natural strength and good works, to faith; and calling upon God. Wherefore we have no power to do good works pleasant and acceptable to God, without the grace of God by Christ preventing us, that we may have a good will, and working with us, when we have that good will.

Rejects the concept of “Free-Will.” Our sinful natures are in open rebellion against God and without the working of the Holy Ghost within us, we will never turn to God on our own accord.

XI. Of the Justification of Man. We are accounted righteous before God, only for the merit of our Lord and Saviour Jesus Christ by Faith, and not for our own works or deservings. Wherefore, that we are justified by Faith only, is a most wholesome Doctrine, and very full of comfort, as more largely is expressed in the Homily of Justification.

Affirms the concepts of justification by faith alone, in Christ alone.

XII. Of Good Works. Albeit that Good Works, which are the fruits of Faith, and follow after Justification, cannot put away our sins, and endure the severity of God’s judgment; yet are they pleasing and acceptable to God in Christ, and do spring out necessarily of a true and lively Faith insomuch that by them a lively Faith may be as evidently known as a tree discerned by the fruit.

Affirms the notion that we cannot work our way into God’s good graces. Only after our acceptance into the fold of Christ will our works bear fruit that is acceptable to God and will reveal that we are in possession of a true and lively faith.

XIII. Of Works before Justification. Works done before the grace of Christ, and the Inspiration of his Spirit, are not pleasant to God, forasmuch as they spring not of faith in Jesus Christ; neither do they make men meet to receive grace, or (as the School-authors say) deserve grace of congruity: yea rather, for that they are not done as God hath willed and commanded them to be done, we doubt not but they have the nature of sin.

States that all of our works prior to receiving the grace of Christ and the inspiration of his Spirit are not acceptable to God (see Isaiah 64:6).

XIV. Of Works of Supererogation. Voluntary Works besides, over and above, God’s Commandments, which they call Works of Supererogation, cannot be taught without arrogancy and impiety: for by them men do declare, that they do not only render unto God as much as they are bound to do, but that they do more for his sake, than of bounden duty is required: whereas Christ saith plainly When ye have done all that are commanded to you, say, We are unprofitable servants.

Contradicts the notion that we could ever do more than what God expects of us in the first place (see St. Luke 17:10).

XV. Of Christ alone without Sin. Christ in the truth of our nature was made like unto us in all things, sin only except, from which he was clearly void, both in his flesh, and in his spirit. He came to be the Lamb without spot, who, by sacrifice of himself once made, should take away the sins of the world; and sin (as Saint John saith) was not in him. But all we the rest, although baptized and born again in Christ, yet offend in many things; and if we say we have no sin, we deceive ourselves, and the truth is not in us.

Affirms our belief in the sinless nature of our Lord Jesus Christ (see Hebrews 4:15).

XVI. Of Sin after Baptism. Not every deadly sin willingly committed after Baptism is sin against the Holy Ghost, and unpardonable. Wherefore the grant of repentance is not to be denied to such as fall into sin after Baptism. After we have received the Holy Ghost, we may depart from grace given, and fall into sin, and by the grace of God we may arise again, and amend our lives. And therefore they are to be condemned, which say, they can no more sin as long as they live here, or deny the place of forgiveness to such as truly repent.

In this article we learn that not every sin willingly committed after baptism is a sin against the Holy Ghost and unpardonable. It is by God’s grace that we repent and withdraw from sin, amending our lives through the work of the Holy Spirit within us. This article also condemns those who say “they can no more sin as long as they live here [in the world], or [who] deny the place of forgiveness to such as truly repent.” Such are unbiblical and should be rejected as heresies (see Romans 7:14–25; I St. John 1:7–10 and 2:1–2).

XVII. Of Predestination and Election. Predestination to Life is the everlasting purpose of God, whereby (before the foundations of the world were laid) he hath constantly decreed by his counsel secret to us, to deliver from curse and damnation those whom he hath chosen in Christ out of mankind, and to bring them by Christ to everlasting salvation, as vessels made to honour. Wherefore, they which be endued with so excellent a benefit of God, be called according to God’s purpose by his Spirit working in due season: they through Grace obey the calling: they be justified freely: they be made sons of God by adoption: they be made like the image of his only-begotten Son Jesus Christ: they walk religiously in good works, and at length, by God’s mercy, they attain to everlasting felicity.

As the godly consideration of Predestination, and our Election in Christ, is full of sweet, pleasant, and unspeakable comfort to godly persons, and such as feel in themselves the working of the Spirit of Christ, mortifying the works of the flesh, and their earthly members, and drawing up their mind to high and heavenly things, as well because it doth greatly establish and confirm their faith of eternal Salvation to be enjoyed through Christ as because it doth fervently kindle their love towards God: So, for curious and carnal persons, lacking the Spirit of Christ, to have continually before their eyes the sentence of God’s Predestination, is a most dangerous downfall, whereby the Devil doth thrust them either into desperation, or into wretchlessness of most unclean living, no less perilous than desperation.

Furthermore, we must receive God’s promises in such wise, as they be generally set forth to us in Holy Scripture: and, in our doings, that Will of God is to be followed, which we have expressly declared unto us in the Word of God.

Affirms the doctrines of Predestination and Election (see St. John 6:37, 44; 8:44–47; 10:14–16; 17:5–10, 20; Acts 2:47; Romans 8:28–30; I Corinthians 1:2, 4, 9, and 26–31; Ephesians 1:4–5 and 9; 2:1, 8–10; Colossians 3:12; I Thessalonians 1:4; II St. Timothy 1:9; St. Titus 3:3–7; Hebrews 2:10–13; I St. Peter 1:2, 15, 17, and 20–21; St. Jude 1).

XVIII. Of obtaining eternal Salvation only by the Name of Christ. They also are to be had accursed that presume to say, That every man shall be saved by the Law or Sect which he professeth, so that he be diligent to frame his life according to that Law, and the light of Nature. For Holy Scripture doth set out unto us only the Name of Jesus Christ, whereby men must be saved.

Condemns those who say one can be saved apart from the atoning work of Jesus Christ (see St. John 3:23; 11:25–26; Acts 4:10–12; Philippians 2:9–11; I St. John 5:13; Revelation 22:4).

XIX. Of the Church. The visible Church of Christ is a congregation of faithful men, in which the pure Word of God is preached, and the Sacraments be duly ministered according to Christ’s ordinance, in all those things that of necessity are requisite to the same.

As the Church of Jerusalem, Alexandria, and Antioch, have erred, so also the Church of Rome hath erred, not only in their living and manner of Ceremonies, but also in matters of Faith.

Sets forth the parameters for a true Christian church.

XX. Of the Authority of the Church. The Church hath power to decree Rites or Ceremonies, and authority in Controversies of Faith: and yet it is not lawful for the Church to ordain any thing that is contrary to God’s Word written, neither may it so expound one place of Scripture, that it be repugnant to another. Wherefore, although the Church be a witness and a keeper of Holy Writ, yet, as it ought not to decree any thing against the same, so besides the same ought it not to enforce any thing to be believed for necessity of Salvation.

States that the church has the power to establish its order of worship and such ceremonies as it sees fit within the framework of “God’s Word written” (see II St. Timothy 3:15–17).

XXI. Of the Authority of General Councils. [The Twenty-first of the former Articles is omitted; because it is partly of a local and civil nature, and is provided for, as to the remaining parts of it, in other Articles.]

The original 1571, 1662 text of this Article, omitted in the version of 1801, reads as follows: “General Councils may not be gathered together without the commandment and will of Princes. And when they be gathered together, (forasmuch as they be an assembly of men, whereof all be not governed with the Spirit and Word of God,) they may err, and sometimes have erred, even in things pertaining unto God. Wherefore things ordained by them as necessary to salvation have neither strength nor authority, unless it may be declared that they be taken out of holy Scripture.”

This article is self-exclamatory [sic].

XXII. Of Purgatory. The Romish Doctrine concerning Purgatory, Pardons, Worshipping and Adoration, as well of Images as of Relics, and also Invocation of Saints, is a fond thing, vainly invented, and grounded upon no warranty of Scripture, but rather repugnant to the Word of God.

Concerns several unscriptural beliefs and practices of the Roman Church at the time of the Reformation (see Hebrews 9:27; Colossians 2:8–9 and 18–19; Exodus 20:4–5; Psalm 34:17–18; Psalm 49:7–8; St. Matthew 4:10, 17; 5:17–18 and 16:26; Revelation 12—15; 19:10; 20:1–6; and 22:8–9).

XXIII. Of Ministering in the Congregation. It is not lawful for any man to take upon him the office of public preaching, or ministering the Sacraments in the Congregation, before he be lawfully called, and sent to execute the same. And those we ought to judge lawfully called and sent, which be chosen and called to this work by men who have public authority given unto them in the Congregation, to call and send Ministers into the Lord’s vineyard.

Affirms the authority of the Vestry of a respective congregation to call such men as are duly qualified, via the episcopate, to the office of minister. This article precludes the ordination of women, the immoral or other degenerated persons (see I St. Timothy 3:1–16; 4:14 and St. Titus 1:5–9).

XXIV. Of Speaking in the Congregation in such a Tongue as the people understandeth. It is a thing plainly repugnant to the Word of God, and the custom of the Primitive Church to have public Prayer in the Church, or to minister the Sacraments, in a tongue not understanded of the people.

Prohibits speaking in a tongue that the people clearly would not understand.

(Got Questions note: this is not referring to the charismatic practice of “speaking in tongues” but of conducting services in Latin, which was the practice of the Catholic Church even though the average person could not understand Latin.)

XXV. Of the Sacraments. Sacraments ordained of Christ be not only badges or tokens of Christian men’s profession, but rather they be certain sure witnesses, and effectual signs of grace, and God’s good will towards us, by the which he doth work invisibly in us, and doth not only quicken, but also strengthen and confirm our Faith in him.

There are two Sacraments ordained of Christ our Lord in the Gospel, that is to say, Baptism, and the Supper of the Lord.

Those five commonly called Sacraments, that is to say, Confirmation, Penance, Orders, Matrimony, and Extreme Unction, are not to be counted for Sacraments of the Gospel, being such as have grown partly of the corrupt following of the Apostles, partly are states of life allowed in the Scriptures, but yet have not like nature of Sacraments with Baptism, and the Lord’s Supper, for that they have not any visible sign or ceremony ordained of God.

The Sacraments were not ordained of Christ to be gazed upon, or to be carried about, but that we should duly use them. And in such only as worthily receive the same, they have a wholesome effect or operation: but they that receive them unworthily, purchase to themselves damnation, as Saint Paul saith.

Addresses the issue of Sacraments within the church. A sacrament is defined as an outward and visible sign of an inward and spiritual grace. Anglicans have traditionally recognized only two sacraments: Baptism and the Supper of the Lord.

XXVI. Of the Unworthiness of the Ministers, which hinders not the effect of the Sacraments. Although in the visible Church the evil be ever mingled with the good, and sometimes the evil have chief authority in the Ministration of the Word and Sacraments, yet forasmuch as they do not the same in their own name, but in Christ’s, and do minister by his commission and authority, we may use their Ministry, both in hearing the Word of God, and in receiving the Sacraments. Neither is the effect of Christ’s ordinance taken away by their wickedness, nor the grace of God’s gifts diminished from such as by faith, and rightly, do receive the Sacraments ministered unto them; which be effectual, because of Christ’s institution and promise, although they be ministered by evil men.

Nevertheless, it appertaineth to the discipline of the Church, that inquiry be made of evil Ministers, and that they be accused by those that have knowledge of their offences; and finally, being found guilty, by just judgment be deposed.

Denies that an unworthy minister will hinder the effect of the Sacraments upon the faithful. It also permits the removal of any godless, or profane man from his position as deacon, priest, presbyter or bishop within the Church if it can be objectively demonstrated that he is of such a character.

XXVII. Of Baptism. Baptism is not only a sign of profession, and mark of difference, whereby Christian men are discerned from others that be not christened, but it is also a sign of Regeneration or New-Birth, whereby, as by an instrument, they that receive Baptism rightly are grafted into the Church; the promises of the forgiveness of sin, and of our adoption to be the sons of God by the Holy Ghost, are visibly signed and sealed, Faith is confirmed, and Grace increased by virtue of prayer unto God.

The Baptism of young Children is in any wise to be retained in the Church, as most agreeable with the institution of Christ.

Addresses the Sacrament of Baptism.

XXVIII. Of the Lord’s Supper. The Supper of the Lord is not only a sign of the love that Christians ought to have among themselves one to another, but rather it is a Sacrament of our Redemption by Christ’s death: insomuch that to such as rightly, worthily, and with faith, receive the same, the Bread which we break is a partaking of the Body of Christ; and likewise the Cup of Blessing is a partaking of the Blood of Christ.

Transubstantiation (or the change of the substance of Bread and Wine) in the Supper of the Lord, cannot be proved by Holy Writ; but is repugnant to the plain words of Scripture, overthroweth the nature of a Sacrament, and hath given occasion to many superstitions.

The Body of Christ is given, taken, and eaten, in the Supper, only after an heavenly and spiritual manner. And the mean whereby the Body of Christ is received and eaten in the Supper, is Faith.

The Sacrament of the Lord’s Supper was not by Christ’s ordinance reserved carried about, lifted up, or worshipped.

Affirms that the Lord’s Supper is consumed only after an heavenly and spiritual manner. We also learn that the Sacrament of the Lord’s Supper is not supposed to be set aside for common purposes, carried about, and it is not to be worshiped as the actual body and blood of Christ.

XXIX. Of the Wicked, which eat not the Body of Christ in the use of the Lord’s Supper. The Wicked, and such as be void of a lively faith, although they do carnally and visibly press with their teeth (as Saint Augustine saith) the Sacrament of the Body and Blood of Christ; yet in no wise are they partakers of Christ: but rather, to their condemnation, do eat and drink the sign or Sacrament of so great a thing.

Addresses the issue of the those of the unregenerate and wicked who partake of the Lord’s Supper.

XXX. Of both Kinds. The Cup of the Lord is not to be denied to the Lay-people: for both the parts of the Lord’s Sacrament, by Christ’s ordinance and commandment, ought to be ministered to all Christian men alike.

Affirms the offering of the communion cup to the laity because our Lord instructed that we should both eat of the unleavened bread and drink of the cup until he comes again.

XXXI. Of the one Oblation of Christ finished upon the Cross. The Offering of Christ once made is that perfect redemption, propitiation, and satisfaction, for all the sins of the whole world, both original and actual; and there is none other satisfaction for sin, but that alone. Wherefore the sacrifices of Masses, in the which it was commonly said, that the Priest did offer Christ for the quick and the dead, to have remission of pain or guilt, were blasphemous fables, and dangerous deceits.

Affirms that our Lord Jesus Christ made one offering of himself for the sins of the whole world. It goes on to point out that the use of the Roman Mass is contrary to Scripture because it attempts to communicate the very body and blood of Christ to those present for worship even though our Lord is physically present in heaven at the right hand of God (see Hebrews 9:24–28).

XXXII. Of the Marriage of Priests. Bishops, Priests, and Deacons, are not commanded by God’s Law, either to vow the estate of single life, or to abstain from marriage: therefore it is lawful for them, as for all other Christian men, to marry at their own discretion, as they shall judge the same to serve better to godliness.

Permits the marriage of bishops, priests and deacons within the Church.

XXXIII. Of excommunicate Persons, how they are to be avoided. That person which by open denunciation of the Church is rightly cut off from the unity of the Church, and excommunicated, ought to be taken of the whole multitude of the faithful, as an Heathen and Publican, until he be openly reconciled by penance, and received into the Church by a Judge that hath authority thereunto.

Reminds us as Christians to avoid the ungodly and those in error (see II Corinthians 6:14–18).

XXXIV. Of the Traditions of the Church. It is not necessary that Traditions and Ceremonies be in all places one, or utterly like; for at all times they have been divers, and may be changed according to the diversity of countries, times, and men’s manners, so that nothing be ordained against God’s Word. Whosoever, through his private judgment, willingly and purposely, doth openly break the Traditions and Ceremonies of the Church, which be not repugnant to the Word of God, and be ordained and approved by common authority, ought to be rebuked openly, (that others may fear to do the like,) as he that offendeth against the common order of the Church, and hurteth the authority of the Magistrate, and woundeth the consciences of the weak brethren.

Every particular or national Church hath authority to ordain, change, and abolish, Ceremonies or Rites of the Church ordained only by man’s authority, so that all things be done to edifying.

Accepts the various traditions and ceremonies that exist across the Anglican Communion as long as they agree with God’s word written.

XXXV. Of the Homilies. The Second Book of Homilies, the several titles whereof we have joined under this Article, doth contain a godly and wholesome Doctrine, and necessary for these times, as doth the former Book of Homilies, which were set forth in the time of Edward the Sixth; and therefore we judge them to be read in Churches by the Ministers, diligently and distinctly, that they may be understanded of the people.

Of the Names of the Homilies.

1 Of the right Use of the Church.
2 Against Peril of Idolatry.
3 Of repairing and keeping clean of Churches.
4 Of good Works: first of Fasting.
5 Against Gluttony and Drunkenness.
6 Against Excess of Apparel.
7 Of Prayer.
8 Of the Place and Time of Prayer.
9 That Common Prayers and Sacraments ought to be ministered in a known tongue.
10 Of the reverend Estimation of God’s Word.
11 Of Alms-doing.
12 Of the Nativity of Christ.
13 Of the Passion of Christ.
14 Of the Resurrection of Christ.
15 Of the worthy receiving of the Sacrament of the Body and Blood of Christ.
16 Of the Gifts of the Holy Ghost.
17 For the Rogation-days.
18 Of the State of Matrimony.
19 Of Repentance.
20 Against Idleness.
21 Against Rebellion.

At the time of the Reformation there was a shortage of clergy who were properly trained in Protestant doctrines, so it was necessary to have a set of teachings which were to be read to the people that defined the exclusively Protestant ideals of the Anglican Church. The Homilies provided such doctrine in a specific form which were to be read to the people.

XXXVI. Of Consecration of Bishops and Ministers. The Book of Consecration of Bishops, and Ordering of Priests and Deacons, as set forth by the General Convention of this Church in 1792, doth contain all things necessary to such Consecration and Ordering; neither hath it any thing that, of itself, is superstitious and ungodly. And, therefore, whosoever are consecrated or ordered according to said Form, we decree all such to be rightly, orderly, and lawfully consecrated and ordered.

The original 1571, 1662 text of this Article reads as follows: “The Book of Consecration of Archbishops and Bishops, and Ordering of Priests and Deacons, lately set forth in the time of Edward the Sixth, and confirmed at the same time by authority of Parliament, doth contain all things necessary to such Consecration and Ordering: neither hath it any thing, that of itself is superstitious and ungodly. And therefore whosoever are consecrated or ordered according to the Rites of that Book, since the second year of the forenamed King Edward unto this time, or hereafter shall be consecrated or ordered according to the same Rites; we decree all such to be rightly, orderly, and lawfully consecrated and ordered.”

Affirms the order for consecrations of bishops and ministers as being by the approved formularies of the Church and that all such as have been consecrated or ordained will be recognized as being legitimate ministers of the Church.

XXXVII. Of the Power of the Civil Magistrates. The Power of the Civil Magistrate extendeth to all men, as well Clergy as Laity, in all things temporal; but hath no authority in things purely spiritual. And we hold it to be the duty of all men who are professors of the Gospel, to pay respectful obedience to the Civil Authority, regularly and legitimately constituted.

The original 1571, 1662 text of this Article reads as follows: “The King’s Majesty hath the chief power in this Realm of England, and other his Dominions, unto whom the chief Government of all Estates of this Realm, whether they be Ecclesiastical or Civil, in all causes doth appertain, and is not, nor ought to be, subject to any foreign Jurisdiction. Where we attribute to the King’s Majesty the chief government, by which Titles we understand the minds of some slanderous folks to be offended; we give not our Princes the ministering either of God’s Word, or of the Sacraments, the which thing the Injunctions also lately set forth by Elizabeth our Queen do most plainly testify; but that only prerogative, which we see to have been given always to all godly Princes in holy Scriptures by God himself; that is, that they should rule all estates and degrees committed to their charge by God, whether they be Ecclesiastical or Temporal, and restrain with the civil sword the stubborn and evil-doers.

“The Bishop of Rome hath no jurisdiction in this Realm of England.

“The Laws of the Realm may punish Christian men with death, for heinous and grievous offences.

“It is lawful for Christian men, at the commandment of the Magistrate, to wear weapons, and serve in the wars.”

States that the clergy of the church are subject not only to ecclesiastical courts but to the civil courts of the state.

XXXVIII. Of Christian Men’s Goods, which are not common. The Riches and Goods of Christians are not common, as touching the right, title, and possession of the same; as certain Anabaptists do falsely boast. Notwithstanding, every man ought, of such things as he possesseth, liberally to give alms to the poor, according to his ability.

Dispenses with the socialistic notions that all men’s goods are held in common or ought to be among all Christians.

XXXIX. Of a Christian Man’s Oath. As we confess that vain and rash Swearing is forbidden Christian men by our Lord Jesus Christ, and James his Apostle, so we judge, that Christian Religion doth not prohibit, but that a man may swear when the Magistrate requireth, in a cause of faith and charity, so it be done according to the Prophet’s teaching in justice, judgment, and truth.

Affirms that a Christian can take an oath in court or other place and swear to do this or that without violating God’s word written.

At Got Questions, we would be in agreement with the majority of these articles, with the most notable exception probably being Article 27. As with most churches, there can be a great degree of variation between stated doctrinal positions and actual practices and emphases with in the local congregation. Some Anglican and Episcopal churches can be thoroughly evangelical while others can be extremely liberal, both theologically and socially/politically. As always, an individual should research both the doctrinal statement and the way that stated beliefs are actually applied within a local congregation before committing to that church.

42 آرٹیکلز، جو 39 آرٹیکلز بن گئے، چرچ آف انگلینڈ کا نظریاتی بیان ہے۔ ان مضامین کا مقصد اینگلیکن نظریے کا مکمل بیان نہیں تھا، بلکہ ایک طرف اینگلیکن چرچ (چرچ آف انگلینڈ) اور رومن کیتھولک چرچ اور دوسری طرف مختلف غیر موافق پروٹسٹنٹ گروہوں کے درمیان فرق کے نکات کو واضح کرنا تھا۔

39 آرٹیکلز بنانے کا عمل 1538 میں تھامس کرینمر (کینٹربری کے آرچ بشپ اور انگلش ریفارمیشن میں رہنما) کے ساتھ شروع ہوا، جس نے 13 آرٹیکلز تیار کیے۔ تاہم، ابھی بھی تنازعات باقی تھے اور مسائل کو حل کیا جانا تھا، لہذا 1553 میں 42 مضامین کی ایک بڑی فہرست جاری کی گئی۔ اس سے پہلے کہ اسے عام طور پر تمام پادریوں نے قبول کیا، کنگ ایڈورڈ ششم کی موت ہو گئی، اور اس کی بہن مریم نے اینگلیکن چرچ کو رومن کیتھولک چرچ کے ساتھ دوبارہ ملایا، اور پروٹسٹنٹ ازم کو دبا دیا گیا۔ مریم کی موت کے بعد، الزبتھ تخت پر آئی اور ایک آزاد اینگلیکن چرچ اور پروٹسٹنٹ ازم کو دوبارہ قائم کیا۔ 42 آرٹیکلز کو ایک بار پھر زیر غور لایا گیا اور 1571 میں نظر ثانی کرکے 39 آرٹیکلز بن گئے۔ 39 مضامین آج بھی اینگلیکن چرچ کے ساتھ ساتھ ریاستہائے متحدہ میں ایپسکوپل چرچ کے ذریعہ قبول کیے جاتے ہیں (کچھ ترمیم کے ساتھ جیسا کہ مضامین میں بتایا گیا ہے)۔

درج ذیل 39 مضامین ہیں جیسا کہ anglicansonline.org/basics/thirty-nine_articles.html (11/29/20 تک رسائی) پر پایا گیا ہے۔ وہ اینگلیکن چرچ آف کینیڈا کی ویب سائٹ پر بھی دیکھے جا سکتے ہیں۔ ہر مضمون کا مختصر خلاصہ (ترچھی زبان میں) aocinternational.org/what-are-the-39-articles-of-religion سے آتا ہے (11/29/20 تک رسائی)

I. مقدس تثلیث میں ایمان کا۔ صرف ایک زندہ اور سچا خدا ہے، ابدی، جسم، اعضاء، یا جذبات کے بغیر؛ لامحدود طاقت، حکمت، اور اچھائی؛ ظاہر اور پوشیدہ دونوں چیزوں کا بنانے والا، اور محافظ۔ اور اس الوہیت کے اتحاد میں تین ہستی ہیں، ایک مادہ، طاقت، اور ابدیت؛ باپ، بیٹا، اور روح القدس۔

ہمارے عقیدے کو تثلیث کے طور پر بیان کرتا ہے جیسا کہ ہم خُدا باپ، خُدا بیٹا، اور خُدا پاک روح یا روح القدس کے تین یکی خدا پر یقین رکھتے ہیں (دیکھیں سینٹ میتھیو 28:19)۔

II کلام یا خدا کے بیٹے کا، جسے بہت انسان بنایا گیا تھا۔ بیٹا، جو باپ کا کلام ہے، باپ کے ازل سے پیدا ہوا، بہت ہی ابدی خُدا، اور باپ کے ساتھ ایک مادہ سے، اُس کی مادہ مبارک کنواری کے رحم میں انسان کی فطرت کو لے لیا: تاکہ دو مکمل اور کامل فطرت، یعنی کہ خدائی اور مردانگی، ایک ہی شخص میں ایک دوسرے کے ساتھ جڑے ہوئے تھے، کبھی تقسیم نہیں ہوئے، جس کا مسیح ایک ہے، بہت ہی خدا، اور بہت ہی انسان؛ جس نے حقیقی معنوں میں دکھ جھیلا، مصلوب کیا، مر گیا، اور دفن کیا گیا، اپنے باپ کو ہم سے ملانے کے لیے، اور قربانی ہونے کے لیے، نہ صرف اصل جرم کے لیے، بلکہ انسانوں کے حقیقی گناہوں کے لیے بھی۔

خدا کے بیٹے کے بارے میں بات کرتا ہے کہ اس کی دو فطرتیں ہیں: دونوں مکمل انسان اور مکمل طور پر خدا، جو کنواری میں پیدا ہوا تھا، اور جس کی صلیب پر موت تمام سچے مسیحیوں کو باپ سے ملاتی ہے (دیکھیں سینٹ جان 1:14)۔

III مسیح کے جہنم میں جانے سے۔ جیسا کہ مسیح ہمارے لیے مرا، اور دفن کیا گیا، اسی طرح یہ بھی ماننا ہے کہ وہ جہنم میں چلا گیا۔

مسیح کے “جہنم” میں جانے کا ذکر کرتا ہے۔ اگرچہ اس کے درحقیقت انڈرورلڈ کے اس حصے میں جانے کے بارے میں کچھ بحث باقی ہے جہاں عظیم سفید تخت کے فیصلے تک برے اور بدنام ہیں، یہ قبول کیا جاتا ہے کہ وہ نچلی دنیا میں آیا تھا (دیکھیں افسیوں 4:9)۔

چہارم مسیح کے جی اٹھنے کا۔ مسیح واقعی موت سے دوبارہ جی اُٹھا، اور اپنے جسم کو، گوشت، ہڈیوں، اور انسان کی فطرت کے کمال سے متعلق تمام چیزوں کے ساتھ دوبارہ لے لیا۔ جس کے ساتھ وہ آسمان پر چڑھ گیا، اور وہاں بیٹھا، جب تک کہ وہ آخری دن تمام مردوں کا فیصلہ کرنے کے لیے واپس نہ آجائے۔

ہمیں مسیح کے جی اٹھنے کے بارے میں سکھاتا ہے اور یہ کہ وہ واپس آئے گا اور آخری دن تمام لوگوں کا انصاف کرے گا۔ (مکاشفہ 22:12 دیکھیں۔)

V. روح القدس کا۔ روح القدس، باپ اور بیٹے کی طرف سے نکلتا ہے، ایک ہی مادہ، عظمت اور جلال کا ہے، باپ اور بیٹے کے ساتھ، بہت ہی ابدی خدا ہے۔

فلیوک کی شمولیت کا دفاع کرتا ہے جیسا کہ Nicene عقیدہ میں پایا جاتا ہے، جو کہتا ہے کہ روح القدس درحقیقت باپ اور بیٹے دونوں کی طرف سے آگے بڑھتا ہے (دیکھیں سینٹ جان 14:16، 15:26، اور 16:7)۔

VI نجات کے لیے مقدس صحیفوں کی کفایت کا۔ کتاب مقدس میں نجات کے لیے ضروری تمام چیزیں موجود ہیں: تاکہ جو کچھ اس میں نہ پڑھا جائے، اور نہ ہی اس کے ذریعے ثابت کیا جا سکے، کسی آدمی سے یہ ضروری نہیں ہے کہ اسے عقیدہ کا مضمون مانا جائے، یا اسے ضروری یا ضروری سمجھا جائے۔ نجات کے لیے مقدس صحیفے کے نام پر ہم پرانے اور نئے عہد نامے کی ان اصولی کتابوں کو سمجھتے ہیں، جن کے اختیار میں کلیسیا کو کبھی کوئی شک نہیں تھا۔

کینونیکل کتابوں کے نام اور تعداد میں سے

پیدائش
ہجرت
Leviticus
نمبرز
Deuteronomy
جوشوا
ججز
روتھ
سموئیل کی پہلی کتاب
سموئیل کی دوسری کتاب
بادشاہوں کی پہلی کتاب
بادشاہوں کی دوسری کتاب
تاریخ کی پہلی کتاب
تاریخ کی دوسری کتاب
ایسدراس کی پہلی کتاب*
ایسدراس کی دوسری کتاب*
ایسٹر کی کتاب
کتاب

ملازمت کی
زبور
امثال
کلیسیا یا مبلغ
کینٹیکا، یا سلیمان کے گانے
چار انبیاء عظیم تر
بارہ انبیاء کم

* کینیڈا کا اینگلیکن چرچ وضاحت کرتا ہے کہ یہ دو کتابیں عزرا اور نحمیاہ ہیں۔

اور دوسری کتابیں (جیسا کہ ہیروم کہتی ہیں) چرچ زندگی اور آداب کی تعلیم کی مثال کے طور پر پڑھتا ہے۔ لیکن پھر بھی یہ ان کا اطلاق کسی نظریے کو قائم کرنے کے لیے نہیں کرتا۔ یہ مندرجہ ذیل ہیں:

ایسڈراس کی تیسری کتاب
ایسدراس کی چوتھی کتاب
ٹوبیاس کی کتاب
جوڈتھ کی کتاب
تین بچوں کا گانا
سوزانا کی کہانی
بیل اور ڈریگن کا
ایسٹر کی کتاب کا باقی حصہ
حکمت کی کتاب
یسوع ابن سراچ
باروک نبی
مناس کی دعا
مکابیز کی پہلی کتاب
مکابیز کی دوسری کتاب

نئے عہد نامے کی تمام کتابیں، جیسا کہ وہ عام طور پر موصول ہوتی ہیں، ہم وصول کرتے ہیں، اور ان کا حساب کتاب کرتے ہیں۔

نجات کے لیے مقدس صحیفوں کی کفایت کی تصدیق کرتا ہے۔ یہ پرانے اور نئے عہد نامے کی چھیاسٹھ “عام طور پر موصول ہونے والی” کتابوں میں کتاب کے اصول کی بھی تصدیق کرتا ہے۔ اس میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ Apocryphal کتابیں کلیسیا کے قائم کردہ اصول سے باہر ہیں (دیکھئے 2 سینٹ ٹموتھیس 3:16، 17)۔

VII پرانے عہد نامے کا۔ پرانا عہد نامہ نئے کے خلاف نہیں ہے: کیونکہ پرانے اور نئے عہد نامے دونوں میں ہمیشہ کی زندگی بنی نوع انسان کو مسیح کے ذریعہ پیش کی گئی ہے، جو خدا اور انسان کے درمیان واحد ثالث ہے، خدا اور انسان دونوں ہیں۔ اس لیے ان کی بات نہیں سنی جائے گی، جو یہ دعویٰ کرتے ہیں کہ بوڑھے باپ صرف عارضی وعدوں کی تلاش میں تھے۔ اگرچہ موسی کے ذریعہ خدا کی طرف سے دیا گیا قانون، چھونے والی تقریبات اور رسومات کے طور پر، عیسائی مردوں کو پابند نہیں کرتا، اور نہ ہی اس کے شہری اصولوں کو کسی بھی دولت مشترکہ میں قبول کرنا ضروری ہے؛ اس کے باوجود، کوئی بھی عیسائی آدمی ان احکام کی اطاعت سے آزاد نہیں ہے جنہیں اخلاقی کہا جاتا ہے۔

اس مضمون میں، ہم سیکھتے ہیں کہ پرانا اور نیا عہد نامہ ایک دوسرے کے متضاد نہیں ہیں بلکہ مجموعی کے دو حصے ہیں۔ اس کے مقدس صفحات سے، ہم نہ صرف قانون، اور اس کی حاضری کی تقریبات کے بارے میں پڑھتے ہیں جو کہ آسمانی چیزوں کا سایہ ہیں (عبرانیوں 8:5)، بلکہ پیشن گوئیوں اور وعدوں کے بارے میں جو نہ صرف اسرائیل کے چھٹکارے کے بارے میں، بلکہ ہماری نجات کے بارے میں بھی۔ اسی طرح آنے والے مسیحا کے کفارہ کے کام کے ذریعے جسے ہم نئے عہد نامے سے اپنے رب اور نجات دہندہ یسوع مسیح کے طور پر جانتے ہیں (دیکھیں گلتیوں 3:24)۔

VIII عقیدوں کا۔ نیکینی عقیدہ، اور جسے عام طور پر رسولوں کا عقیدہ کہا جاتا ہے، کو اچھی طرح سے قبول کیا جانا چاہیے اور اس پر یقین کیا جانا چاہیے: کیونکہ وہ مقدس کتاب کے کچھ خاص وارنٹوں سے ثابت ہو سکتے ہیں۔

اصل آرٹیکل جسے 1571 میں شاہی منظوری دی گئی تھی اور 1662 میں اس کی تصدیق کی گئی تھی، اس کا عنوان “تین عقیدوں میں سے” تھا۔ اور اس طرح شروع ہوا، “تین عقیدے، نیکین عقیدہ، ایتھناسیئس کا عقیدہ، اور وہ جسے عام طور پر رسولوں کا عقیدہ کہا جاتا ہے…”

رسولوں اور نیکین عقیدوں کے ہمارے استعمال کی تصدیق کرتا ہے۔ رسولوں کا عقیدہ قدیم ترین ہے، غالباً دوسری صدی عیسوی کے اوائل میں کسی نہ کسی شکل میں استعمال کیا جا رہا تھا، نیکین عقیدہ 325 عیسوی میں نائسیہ کی کونسل سے نکلا۔

IX اصل یا پیدائشی گناہ کا۔ اصل گناہ آدم کی پیروی میں نہیں ہے، (جیسا کہ پیلاجین فضول باتیں کرتے ہیں؛) بلکہ یہ ہر انسان کی فطرت کی غلطی اور خرابی ہے، جو قدرتی طور پر آدم کی اولاد سے پیدا ہوتی ہے۔ جس سے انسان اصلی راستبازی سے بہت دور چلا گیا ہے، اور اپنی فطرت سے بدی کی طرف مائل ہے، تاکہ جسم ہمیشہ روح کے خلاف ہو جائے۔ اور اس لیے اس دنیا میں پیدا ہونے والے ہر فرد میں، یہ خدا کے غضب اور لعنت کا مستحق ہے۔ اور فطرت کا یہ انفیکشن باقی رہتا ہے، ہاں ان میں جو دوبارہ پیدا ہوتے ہیں۔ جس کے تحت جسم کی ہوس، جسے یونانی میں φρονημα σαρκος کہا جاتا ہے، (جس میں کچھ حکمت، کچھ جنسیت، کچھ پیار، کچھ خواہش، جسم کی) وضاحت کرتے ہیں، خدا کے قانون کے تابع نہیں ہے۔ اور اگرچہ اُن کے لیے کوئی سزا نہیں جو ایمان لاتے ہیں اور بپتسمہ لیتے ہیں۔ پھر بھی رسول اقرار کرتا ہے، کہ لالچ اور ہوس خود گناہ کی نوعیت رکھتی ہے۔

اصل گناہ کے تحت اس دنیا میں ہماری پیدائش کا حوالہ دیتا ہے۔ اصل گناہ ہمیں ہمارے پہلے والدین نے دیا تھا۔ اس کی وجہ سے، ہمارا جسم اپنی شہوت انگیز خواہشات کو پورا کرنے کے لیے کھینچا جاتا ہے۔ اور اگرچہ خُداوند یِسُوع مسِیح پر اِیمان لانے اور بپتِسمہ لینے والے اُن کے لِئے کوئی مُعزّت نہیں، پھر بھی ہمارے جسم میں یہ بیماری موجود ہے۔ صرف مومن کے اندر روح القدس کے کاموں سے وہ توبہ کے ایسے پھل پیدا کرے گا جو خُدا کو پسند اور قابل قبول ہوں۔

X. آزاد مرضی کا۔ آدم کے زوال کے بعد انسان کی حالت ایسی ہے کہ وہ اپنی فطری قوت اور اچھے کاموں سے ایمان کی طرف متوجہ اور تیار نہیں ہو سکتا۔ اور خدا کو پکارتے ہیں۔ لہٰذا ہم اچھے کام کرنے کی طاقت نہیں رکھتے جو خُدا کے نزدیک خوشنما اور قابلِ قبول ہو، بغیر خُدا کے فضل کے جو کہ مسیح نے ہمیں روکا ہے، تاکہ ہماری اچھی مرضی ہو، اور ہمارے ساتھ کام کر سکیں، جب ہماری وہ اچھی مرضی ہو۔

“آزاد مرضی” کے تصور کو مسترد کرتا ہے۔ ہماری گنہگار فطرت خدا کے خلاف کھلی بغاوت میں ہے اور ہمارے اندر روح القدس کے کام کے بغیر، ہم کبھی بھی اپنی مرضی سے خدا کی طرف رجوع نہیں کریں گے۔

XI جواز کے o

f انسان ہم خُدا کے سامنے راستباز شمار کیے جاتے ہیں، صرف ہمارے خُداوند اور نجات دہندہ یسوع مسیح کے ایمان کی وجہ سے، نہ کہ ہمارے اپنے کاموں یا مستحقوں کے لیے۔ لہٰذا، کہ ہم صرف ایمان کے ذریعہ راستباز ٹھہرائے گئے ہیں، ایک نہایت ہی صحت بخش نظریہ ہے، اور بہت سکون سے بھرا ہوا ہے، جیسا کہ زیادہ تر حد تک توثیق کی حمیت میں ظاہر کیا گیا ہے۔

صرف مسیح میں صرف ایمان کے ذریعہ جواز کے تصورات کی تصدیق کرتا ہے۔

XII اچھے کاموں کا۔ حالانکہ اچھے کام، جو ایمان کا پھل ہیں، اور جواز کے بعد ہوتے ہیں، ہمارے گناہوں کو دور نہیں کر سکتے، اور خدا کے فیصلے کی سختی کو برداشت نہیں کر سکتے۔ پھر بھی وہ مسیح میں خُدا کے لیے خوشنما اور قابلِ قبول ہیں، اور ضروری طور پر ایک سچے اور زندہ ایمان کو جنم دیتے ہیں تاکہ اُن کے ذریعے ایک زندہ ایمان واضح طور پر پھل سے پہچانے جانے والے درخت کی طرح معلوم ہو۔

اس تصور کی تصدیق کرتا ہے کہ ہم خُدا کے اچھے فضلوں میں اپنے راستے پر کام نہیں کر سکتے۔ صرف مسیح کے گوشے میں ہماری قبولیت کے بعد ہی ہمارے کام ایسے پھل لائے گا جو خُدا کے لیے قابلِ قبول ہے اور یہ ظاہر کرے گا کہ ہم ایک سچے اور زندہ ایمان کے مالک ہیں۔

XIII جواز سے پہلے کے کاموں کا۔ مسیح کے فضل اور اُس کے روح کے الہام سے پہلے کیے گئے کام خُدا کے لیے خوشنما نہیں ہیں، کیونکہ وہ یسوع مسیح میں ایمان کی بہار نہیں رکھتے۔ نہ تو وہ لوگوں کو فضل حاصل کرنے کے لیے ملتے ہیں، یا (جیسا کہ اسکول کے مصنفین کہتے ہیں) ہم آہنگی کے فضل کے مستحق ہیں؛ ہاں، بلکہ اس لیے کہ وہ اس طرح نہیں کیے گئے جیسا کہ خدا نے چاہا اور انہیں کرنے کا حکم دیا، ہمیں شک نہیں ہے لیکن ان کے پاس ہے۔ گناہ کی نوعیت.

بیان کرتا ہے کہ مسیح کے فضل اور اُس کی روح کے الہام سے پہلے ہمارے تمام کام خُدا کے لیے قابلِ قبول نہیں ہیں (دیکھیں یسعیاہ 64:6)۔

XIV سپر ایروگیشن کے کاموں کا۔ رضاکارانہ کاموں کے علاوہ، خدا کے احکام، جنہیں وہ کاموں کے سپرروگیشن کہتے ہیں، تکبر اور بے حیائی کے بغیر نہیں سکھایا جا سکتا: کیونکہ ان کے ذریعہ لوگ اعلان کرتے ہیں، کہ وہ خدا کو صرف اتنا ہی نہیں دیتے جتنا وہ کرنے کے پابند ہیں۔ لیکن یہ کہ وہ اُس کی خاطر زیادہ کام کرتے ہیں، اُس سے زیادہ فرض کی ضرورت ہوتی ہے۔ جب کہ مسیح صاف صاف کہتا ہے کہ جب تم وہ سب کر چکے ہو جس کا تمہیں حکم دیا گیا ہے، تو کہو، ہم بے فائدہ نوکر ہیں۔

اس تصور کی تردید کرتا ہے کہ ہم کبھی بھی اس سے زیادہ کر سکتے ہیں جس کی خدا ہم سے پہلے توقع کرتا ہے (دیکھیں سینٹ لوقا 17:10)۔

XV بغیر گناہ کے تنہا مسیح کا۔ مسیح کو ہماری فطرت کی سچائی میں ہر چیز میں ہمارے جیسا بنایا گیا، صرف گناہ کے، جس سے وہ اپنے جسم اور روح دونوں میں واضح طور پر باطل تھا۔ وہ بے داغ برہ بن کر آیا، جو ایک بار اپنے آپ کو قربان کر کے، دنیا کے گناہوں کو دور کر لے۔ اور گناہ (جیسا کہ سینٹ جان کہتے ہیں) اس میں نہیں تھا۔ لیکن ہم باقی سب، اگرچہ بپتسمہ لیا اور مسیح میں نئے سرے سے پیدا ہوئے، پھر بھی بہت سی چیزوں میں ناراض ہیں۔ اور اگر ہم کہیں کہ ہم میں کوئی گناہ نہیں ہے تو ہم اپنے آپ کو دھوکہ دیتے ہیں اور سچائی ہم میں نہیں ہے۔

ہمارے خداوند یسوع مسیح کی بے گناہ فطرت میں ہمارے یقین کی تصدیق کرتا ہے (دیکھیں عبرانیوں 4:15)۔

XVI بپتسمہ کے بعد گناہ کا۔ بپتسمہ کے بعد اپنی مرضی سے کیا جانے والا ہر مہلک گناہ روح القدس کے خلاف گناہ نہیں ہے، اور ناقابل معافی ہے۔ اس لیے توبہ کی اجازت سے انکار نہیں کیا جانا چاہیے جیسے کہ بپتسمہ کے بعد گناہ میں پڑ جاتے ہیں۔ روح القدس حاصل کرنے کے بعد، ہم دیے گئے فضل سے ہٹ سکتے ہیں، اور گناہ میں پڑ سکتے ہیں، اور خُدا کے فضل سے ہم دوبارہ اُٹھ سکتے ہیں، اور اپنی زندگیوں میں ترمیم کر سکتے ہیں۔ اور اس لیے ان کی مذمت کی جانی چاہیے، جو کہتے ہیں، جب تک وہ یہاں رہتے ہیں مزید گناہ نہیں کر سکتے، یا معافی کی جگہ سے انکار کر سکتے ہیں جیسے کہ سچی توبہ کریں۔

اس مضمون میں ہم سیکھتے ہیں کہ بپتسمہ لینے کے بعد اپنی مرضی سے کیا جانے والا ہر گناہ روح القدس کے خلاف اور ناقابل معافی گناہ نہیں ہے۔ یہ خدا کے فضل سے ہے کہ ہم توبہ کرتے ہیں اور گناہ سے دستبردار ہوتے ہیں، اپنے اندر روح القدس کے کام کے ذریعے اپنی زندگیوں میں ترمیم کرتے ہیں۔ یہ مضمون ان لوگوں کی بھی مذمت کرتا ہے جو کہتے ہیں کہ “جب تک وہ یہاں [دنیا میں] رہتے ہیں مزید گناہ نہیں کر سکتے، یا [جو] معافی کی جگہ سے انکار کرتے ہیں جیسے کہ سچی توبہ۔” یہ غیر بائبلی ہیں اور ان کو بدعتوں کے طور پر رد کیا جانا چاہئے (دیکھیں رومیوں 7:14-25؛ 1 سینٹ جان 1:7-10 اور 2:1-2)۔

XVII تقدیر اور الیکشن کا۔ زندگی کے لیے پیشگوئی خدا کا لازوال مقصد ہے، جس کے تحت (دنیا کی بنیاد ڈالنے سے پہلے) اس نے اپنے مشورے کے راز سے ہم پر مسلسل فیصلہ کیا ہے، تاکہ وہ لعنت اور لعنت سے نجات دلائیں جنہیں اس نے مسیح میں بنی نوع انسان میں سے منتخب کیا ہے، اور انہیں مسیح کے ذریعہ ابدی نجات تک پہنچانے کے لیے، بطور عزت کے لیے بنائے گئے برتن۔ لہٰذا، جن کو خدا کے اتنے بہترین فائدے سے نوازا جاتا ہے، وہ خدا کے مقصد کے مطابق اس کی روح کے ذریعہ مقررہ وقت میں کام کرتے ہوئے بلائے جاتے ہیں: وہ فضل کے ذریعہ دعوت کی تعمیل کرتے ہیں: وہ آزادانہ طور پر راستباز ٹھہرائے جاتے ہیں: وہ گود لے کر خدا کے بیٹے بنائے جاتے ہیں۔ اپنے اکلوتے بیٹے یسوع مسیح کی شبیہ کی طرح بنائے جائیں: وہ اچھے کاموں میں مذہبی طور پر چلتے ہیں، اور طویل عرصے تک، خدا کی رحمت سے، وہ ابدی خوشی حاصل کرتے ہیں۔

جیسا کہ تقدیر کا خدائی خیال، اور مسیح میں ہمارا انتخاب، خدا پرست لوگوں کے لیے میٹھے، خوشگوار اور ناقابل بیان سکون سے بھرا ہوا ہے، اور جیسے کہ اپنے اندر مسیح کی روح کے کام کو محسوس کرتے ہیں، جسم کے کاموں کو نقصان پہنچاتے ہیں، اور ان کے زمینی ارکان، اور اپنے ذہن کو اعلیٰ اور آسمانی چیزوں کی طرف کھینچتے ہیں۔

کیونکہ یہ مسیح کے ذریعے سے لطف اندوز ہونے کے لیے ان کے ابدی نجات کے ایمان کو بڑی حد تک قائم اور تصدیق کرتا ہے کیونکہ یہ خُدا کے تئیں اُن کی محبت کو جلا بخشتا ہے: لہٰذا، متجسس اور جسمانی لوگوں کے لیے، جن میں مسیح کی روح کی کمی ہے، اُن کی آنکھوں کے سامنے یہ جملہ ہمیشہ رہنا چاہیے۔ خدا کی تقدیر کا، ایک انتہائی خطرناک زوال ہے، جس کے ذریعے شیطان انہیں یا تو مایوسی میں ڈال دیتا ہے، یا انتہائی ناپاک زندگی کی بدحالی میں، مایوسی سے کم خطرناک نہیں۔

مزید برآں، ہمیں خُدا کے وعدوں کو اِس طرح حاصل کرنا چاہیے، جیسا کہ وہ عام طور پر ہمارے لیے مقدس کتاب میں بیان کیے گئے ہیں: اور، ہمارے اعمال میں، خُدا کی اُس مرضی کی پیروی کی جانی چاہیے، جس کا ہم نے واضح طور پر خُدا کے کلام میں اعلان کیا ہے۔ .

تقدیر اور انتخاب کے عقائد کی تصدیق کرتا ہے (دیکھیں سینٹ جان 6:37، 44؛ 8:44-47؛ 10:14-16؛ 17:5-10، 20؛ اعمال 2:47؛ رومیوں 8:28-30؛ 1 کرنتھیوں 1:2، 4، 9، اور 26-31؛ افسیوں 1:4-5 اور 9؛ 2:1، 8-10؛ کلسیوں 3:12؛ 1 تھیسلنیکیوں 1:4؛ II سینٹ تیمتھیس 1:9 ؛ سینٹ ٹائٹس 3:3-7؛ عبرانیوں 2:10-13؛ 1 سینٹ پیٹر 1:2، 15، 17، اور 20-21؛ سینٹ جوڈ 1)۔

XVIII صرف مسیح کے نام سے ابدی نجات حاصل کرنے کا۔ وہ یہ کہتے ہوئے بھی ملعون ہیں کہ ہر ایک شخص کو اس قانون یا فرقے سے بچایا جائے گا جس کا وہ دعویٰ کرتا ہے، تاکہ وہ اپنی زندگی کو اس قانون اور فطرت کی روشنی کے مطابق ڈھالنے کے لیے مستعد ہو۔ کیونکہ مقدس صحیفہ ہمارے لیے صرف یسوع مسیح کا نام بتاتا ہے، جس کے ذریعے انسانوں کو بچایا جانا چاہیے۔

ان لوگوں کی مذمت کرتا ہے جو کہتے ہیں کہ یسوع مسیح کے کفارہ کے کام کے علاوہ کسی کو بچایا جا سکتا ہے (دیکھیں سینٹ یوحنا 3:23؛ 11:25-26؛ اعمال 4:10-12؛ فلپیوں 2:9-11؛ پہلا سینٹ جان 5 :13؛ مکاشفہ 22:4)۔

XIX چرچ کے. مرئی چرچ آف کرائسٹ وفادار مردوں کی ایک جماعت ہے، جس میں خدا کے خالص کلام کی تبلیغ کی جاتی ہے، اور مقدسات کی صحیح طریقے سے مسیح کے حکم کے مطابق خدمت کی جاتی ہے، ان تمام چیزوں میں جن کی ضرورت ہوتی ہے۔

جیسا کہ یروشلم، اسکندریہ اور انطاکیہ کے چرچ نے غلطی کی ہے، اسی طرح روم کے چرچ نے بھی غلطی کی ہے، نہ صرف اپنے رہن سہن اور تقریبات کے انداز میں، بلکہ ایمان کے معاملات میں بھی۔

ایک حقیقی مسیحی کلیسیا کے لیے پیرامیٹرز بیان کرتا ہے۔

ایکس ایکس۔ چرچ کی اتھارٹی کا۔ چرچ کو رسومات یا تقاریب کا حکم دینے کا اختیار ہے، اور عقیدے کے تنازعات میں اختیار ہے: اور پھر بھی کلیسیا کے لیے یہ جائز نہیں ہے کہ وہ کوئی ایسی چیز مقرر کرے جو خدا کے لکھے ہوئے کلام کے خلاف ہو، اور نہ ہی یہ کتاب کے کسی ایک مقام پر اس طرح بیان کر سکتا ہے کہ دوسرے کے خلاف ہو لہٰذا، اگرچہ کلیسیا ایک گواہ اور مقدس تحریر کا محافظ ہے، لیکن پھر بھی، جیسا کہ اسے اس کے خلاف کوئی حکم نہیں دینا چاہیے، اسی طرح اسے نجات کی ضرورت کے لیے کسی بھی چیز کو نافذ نہیں کرنا چاہیے۔

بیان کرتا ہے کہ چرچ کے پاس اپنی عبادت کا حکم اور ایسی تقریبات کو قائم کرنے کا اختیار ہے جو اسے “خدا کے لکھے ہوئے کلام” کے فریم ورک کے اندر فٹ نظر آتا ہے (دیکھیں 2 سینٹ ٹموتھیس 3:15-17)۔

XXI جنرل کونسلز کی اتھارٹی کا۔ [سابقہ ​​مضامین میں سے اکیسویں کو چھوڑ دیا گیا ہے۔ کیونکہ یہ جزوی طور پر مقامی اور شہری نوعیت کا ہے، اور اس کے باقی حصوں کے لیے دیگر مضامین میں فراہم کیا گیا ہے۔]

اس آرٹیکل کا اصل 1571, 1662 متن، جو 1801 کے ورژن میں چھوڑ دیا گیا ہے، اس طرح پڑھتا ہے: “جنرل کونسلز کو شہزادوں کے حکم اور مرضی کے بغیر اکٹھا نہیں کیا جا سکتا۔ اور جب وہ اکٹھے ہوں گے، (چونکہ وہ آدمیوں کا ایک اجتماع ہے، جس میں سب پر روح اور خدا کے کلام سے حکومت نہیں ہے،) وہ غلطی کر سکتے ہیں، اور بعض اوقات غلطی کر سکتے ہیں، حتیٰ کہ خدا سے متعلق چیزوں میں بھی۔ لہٰذا نجات کے لیے جو چیزیں ان کی طرف سے مقرر کی گئی ہیں ان میں نہ طاقت ہے اور نہ ہی اختیار، جب تک کہ یہ اعلان نہ کیا جائے کہ انہیں مقدس صحیفہ سے نکال لیا گیا ہے۔

یہ مضمون خود ساختہ ہے [sic]۔

XXII Purgatory کے. تعزیہ، معافی، عبادات اور تعظیم کے بارے میں رومی نظریہ، نیز مجسموں کی تصویروں کے بارے میں، اور سنتوں کی دعوت کے بارے میں، ایک پسندیدہ چیز ہے، جو فضول ایجاد کی گئی ہے، اور اس کی بنیاد صحیفے کی کوئی ضمانت نہیں ہے، بلکہ خدا کے کلام کے خلاف ہے۔ .

اصلاح کے وقت رومن کلیسیا کے متعدد غیر صحیفائی عقائد اور طریقوں سے متعلق ہے (دیکھیں عبرانیوں 9:27؛ کلسیوں 2:8-9 اور 18-19؛ خروج 20:4-5؛ زبور 34:17-18؛ زبور 49 :7-8؛ سینٹ میتھیو 4:10، 17؛ 5:17-18 اور 16:26؛ مکاشفہ 12-15؛ 19:10؛ 20:1-6؛ اور 22:8-9)۔

XXIII جماعت میں خدمت کرنے کا۔ کسی بھی آدمی کے لیے یہ جائز نہیں ہے کہ وہ اس پر عوامی تبلیغ کا عہدہ لے، یا جماعت میں مقدسات کی خدمت کرے، اس سے پہلے کہ اسے قانونی طور پر بلایا جائے، اور اسے انجام دینے کے لیے بھیجا جائے۔ اور جن کا ہمیں قانونی طور پر فیصلہ کرنا چاہیے کہ بلائے گئے اور بھیجے گئے، جن کو اس کام کے لیے منتخب اور بلایا جائے، جن کو کلیسیا میں عوامی اختیار دیا گیا ہے، وزیروں کو رب کے انگور کے باغ میں بلانے اور بھیجنے کے لیے۔

متعلقہ جماعت کے ویسٹری کے اختیار کی توثیق کرتا ہے کہ وہ ایسے مردوں کو جو مناسب طور پر اہل ہیں، ایپسکوپیٹ کے ذریعے، وزیر کے دفتر میں بلائیں۔ یہ مضمون خواتین، غیر اخلاقی یا دیگر انحطاط پذیر افراد کی تنظیم کو روکتا ہے (دیکھئے 1 سینٹ تیمتھیس 3:1-16؛ 4:14 اور سینٹ ٹائٹس 1:5-9)۔

ایکس ایکس

چہارم جماعت میں ایسی زبان میں بات کرنا جو لوگ سمجھتے ہیں۔ یہ ایک ایسی چیز ہے جو خدا کے کلام کے صریحاً منافی ہے، اور قدیم کلیسیا کا رواج چرچ میں عوامی دعا کرنا، یا ساکرامینٹس کی خدمت کرنا، ایسی زبان میں جو لوگوں کی سمجھ میں نہیں آتی۔

ایسی زبان میں بات کرنے سے منع کرتا ہے جسے لوگ واضح طور پر نہ سمجھیں۔

(سوالات ملے ہیں نوٹ: یہ “زبانوں میں بولنے” کے کرشماتی عمل کا حوالہ نہیں دے رہا ہے بلکہ لاطینی میں خدمات انجام دینے کا ہے، جو کیتھولک چرچ کا رواج تھا حالانکہ اوسط فرد لاطینی نہیں سمجھ سکتا تھا۔)

XXV ساکرامینٹس کے. مسیح کے مقرر کردہ مقدسات نہ صرف مسیحی مردوں کے پیشے کے بیجز یا نشانات ہیں، بلکہ وہ یقینی گواہ، اور فضل کے مؤثر نشان ہیں، اور ہمارے لیے خُدا کی بھلائی ہے، جس کے ذریعے وہ ہم میں پوشیدہ طور پر کام کرتا ہے، اور نہ صرف۔ تیز کریں، بلکہ اس پر ہمارے ایمان کو مضبوط اور مضبوط کریں۔

انجیل میں ہمارے خُداوند مسیح کے دو مقدسات ہیں، یعنی بپتسمہ، اور خُداوند کا عشائیہ۔

جن پانچوں کو عام طور پر Sacraments کہا جاتا ہے، یعنی تصدیق، تپسیا، احکامات، شادی، اور انتہائی اتحاد، ان کو انجیل کے مقدسات میں شمار نہیں کیا جانا چاہئے، جیسا کہ جزوی طور پر رسولوں کی بدعنوان پیروی میں اضافہ ہوا ہے۔ صحیفوں میں زندگی کی حالتوں کی اجازت دی گئی ہے، لیکن ابھی تک بپتسمہ اور عشائے ربانی کے ساتھ ساکرامینٹس کی نوعیت پسند نہیں ہے، اس لیے ان کے پاس خدا کی طرف سے مقرر کردہ کوئی ظاہری نشان یا تقریب نہیں ہے۔

ساکرامینٹس مسیح کی طرف سے دیکھنے کے لیے نہیں بنائے گئے تھے، یا اس کو لے جایا جائے گا، بلکہ یہ کہ ہمیں ان کا صحیح استعمال کرنا چاہیے۔ اور اس طرح کے طور پر صرف وہی وصول کرتے ہیں، ان کا صحت مند اثر یا عمل ہوتا ہے: لیکن جو لوگ انہیں ناحق وصول کرتے ہیں، وہ اپنے لیے لعنت خریدتے ہیں، جیسا کہ سینٹ پال کہتے ہیں۔

چرچ کے اندر مقدسات کے مسئلے کو حل کرتا ہے۔ ایک ساکرامنٹ کو باطنی اور روحانی فضل کی ظاہری اور ظاہری علامت کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔ اینگلیکن روایتی طور پر صرف دو رسموں کو تسلیم کرتے ہیں: بپتسمہ اور عشائے ربانی۔

XXVI وزراء کی نا اہلی، جو مقدسات کے اثر میں رکاوٹ نہیں بنتی۔ اگرچہ مرئی کلیسیا میں برائی کو کبھی اچھائی کے ساتھ ملایا جاتا ہے، اور بعض اوقات برائی کو کلام اور مقدسات کی وزارت میں اعلیٰ اختیار حاصل ہوتا ہے، پھر بھی اس لیے کہ وہ اپنے نام پر نہیں، بلکہ مسیح کے ساتھ، اور خدمت کرتے ہیں۔ اس کے کمیشن اور اختیار سے، ہم ان کی وزارت کا استعمال کر سکتے ہیں، دونوں خدا کے کلام کو سننے میں، اور مقدسات حاصل کرنے میں۔ نہ تو مسیح کے حکم کا اثر ان کی شرارت سے چھین لیا گیا ہے، اور نہ ہی خُدا کے تحفوں کا فضل جیسے کہ ایمان سے کم ہوا ہے، اور بجا طور پر، اُن کی خدمت کی گئی مقدسات کو حاصل کرتے ہیں۔ جو مسیح کے ادارے اور وعدے کی وجہ سے کارآمد ہو، حالانکہ ان کی خدمت برے آدمی کرتے ہیں۔

بہر حال، یہ چرچ کے نظم و ضبط سے متعلق ہے، کہ برے وزیروں سے پوچھ گچھ کی جائے، اور یہ کہ ان پر الزام لگایا جائے جو ان کے جرائم کا علم رکھتے ہیں۔ اور آخر میں، مجرم پایا جا رہا ہے، صرف فیصلے کے ذریعے معزول کیا جائے گا.

اس بات سے انکار کرتا ہے کہ ایک نااہل وزیر وفاداروں پر ساکرامینٹس کے اثر کو روکے گا۔ یہ چرچ کے اندر کسی بے دین، یا ناپاک آدمی کو ڈیکن، پادری، پریسبیٹر یا بشپ کے عہدے سے ہٹانے کی بھی اجازت دیتا ہے اگر یہ معروضی طور پر یہ ظاہر کیا جا سکتا ہے کہ وہ ایسے کردار کا ہے۔

XXVII بپتسمہ کے. بپتسمہ نہ صرف پیشے کی علامت ہے، اور فرق کا نشان، جس کے ذریعے عیسائی مردوں کو دوسرے لوگوں سے پہچانا جاتا ہے جو بپتسمہ نہیں لیتے ہیں، بلکہ یہ تخلیق نو یا نئے جنم کی علامت بھی ہے، جس کے تحت، ایک آلہ کے ذریعے، بپتسمہ لینے والے۔ بجا طور پر چرچ میں پیوند کر رہے ہیں; گناہ کی معافی کے وعدے، اور روح القدس کے ذریعہ خدا کے بیٹے بننے کے لئے ہمارے گود لینے کے وعدے، ظاہری طور پر دستخط اور مہربند ہیں، ایمان کی تصدیق کی گئی ہے، اور خدا سے دعا کی فضیلت سے فضل میں اضافہ ہوا ہے۔

چھوٹے بچوں کا بپتسمہ کسی بھی لحاظ سے چرچ میں برقرار رکھا جانا ہے، جیسا کہ مسیح کے ادارے کے ساتھ سب سے زیادہ متفق ہے۔

بپتسمہ کے ساکرامنٹ سے خطاب کرتا ہے۔

XXVIII رب کے عشائیہ کا۔ خُداوند کا عشائیہ نہ صرف اُس محبت کی علامت ہے جو مسیحیوں کو آپس میں ایک دوسرے کے ساتھ ہونی چاہیے، بلکہ یہ مسیح کی موت کے ذریعے ہمارے مخلصی کا ایک ساکرامنٹ ہے: یہاں تک کہ ایسے لوگوں کے لیے جو صحیح، لائق، اور ایمان کے ساتھ، وہی حاصل کریں، جو روٹی ہم توڑتے ہیں وہ مسیح کے جسم کا حصہ ہے۔ اور اسی طرح برکت کا پیالہ مسیح کے خون کا حصہ ہے۔

رب کے عشائیہ میں تبدیلی (یا روٹی اور شراب کے مادے کی تبدیلی) کو ہولی رٹ سے ثابت نہیں کیا جا سکتا۔ لیکن صحیفے کے صاف لفظوں کے خلاف ہے، ایک ساکرامنٹ کی نوعیت کو ختم کر دیتا ہے، اور بہت سے توہمات کو موقع فراہم کرتا ہے۔

عشائیہ میں مسیح کا جسم صرف آسمانی اور روحانی طریقے سے دیا جاتا ہے، لیا جاتا ہے اور کھایا جاتا ہے۔ اور وہ مطلب جس کے ذریعے مسیح کا جسم عشائیہ میں وصول اور کھایا جاتا ہے، ایمان ہے۔

خُداوند کے عشائیہ کی تدفین مسیح کے مخصوص آرڈیننس سے نہیں تھی۔

, ارد گرد لے جایا, اٹھایا, یا پوجا.

اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ عشائے ربانی صرف آسمانی اور روحانی طریقے سے کھایا جاتا ہے۔ ہم یہ بھی سیکھتے ہیں کہ خُداوند کے عشائیہ کی تدفین کو عام مقاصد کے لیے الگ نہیں کیا جانا چاہیے، اس کے بارے میں کیا جانا چاہیے، اور اسے مسیح کے اصل جسم اور خون کے طور پر پوجا نہیں جانا چاہیے۔

XXIX. شریروں میں سے، جو عشائے ربانی کے استعمال میں مسیح کے جسم کو نہیں کھاتے۔ بدکار، اور ایسے جیسے زندہ ایمان سے خالی ہیں، حالانکہ وہ جسمانی طور پر اور ظاہری طور پر اپنے دانتوں سے دباتے ہیں (جیسا کہ سینٹ آگسٹین کہتے ہیں) مسیح کے جسم اور خون کا ساکرامنٹ؛ پھر بھی وہ کسی بھی طرح سے مسیح کے شریک نہیں ہیں: بلکہ، ان کی مذمت کے لیے، اتنی بڑی چیز کی نشانی یا تدفین کھاتے پیتے ہیں۔

غیر تخلیق شدہ اور بدکاروں کے مسئلے کو حل کرتا ہے جو عشائے ربانی میں حصہ لیتے ہیں۔

XXX دونوں قسم کے۔ خُداوند کے پیالے سے عام لوگوں کے لیے انکار نہیں کیا جانا چاہیے: کیونکہ خُداوند کے ساکرامنٹ کے دونوں حصوں کو، مسیح کے حکم اور حکم کے ذریعے، تمام مسیحی مردوں کے لیے یکساں طور پر خدمت کی جانی چاہیے۔

عام لوگوں کے لئے اجتماعی پیالہ کی پیش کش کی تصدیق کرتا ہے کیونکہ ہمارے رب نے ہدایت کی ہے کہ ہم دونوں کو بےخمیری روٹی کھائیں اور پیالہ پینا چاہئے جب تک کہ وہ دوبارہ نہ آجائے۔

XXXI صلیب پر ختم ہونے والے مسیح کے ایک نذرانے میں سے۔ مسیح کی پیشکش ایک بار کی گئی ہے وہ کامل چھٹکارا، کفارہ، اور اطمینان، پوری دنیا کے تمام گناہوں کے لیے، اصل اور حقیقی دونوں؛ اور گناہ کی تسکین کے سوا کوئی اور نہیں ہے۔ اس لیے عوام کی قربانیاں، جن میں عام طور پر کہا جاتا تھا کہ پادری نے مسیح کو جلد اور مُردوں کے لیے پیش کیا، درد یا جرم کی معافی کے لیے، گستاخانہ افسانے اور خطرناک فریب تھے۔

اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ ہمارے خداوند یسوع مسیح نے پوری دنیا کے گناہوں کے لئے اپنے آپ کو ایک قربانی پیش کی۔ یہ اس بات کی طرف اشارہ کرتا ہے کہ رومن ماس کا استعمال کلام پاک کے خلاف ہے کیونکہ یہ مسیح کے جسم اور خون کو عبادت کے لیے موجود لوگوں تک پہنچانے کی کوشش کرتا ہے حالانکہ ہمارا رب جسمانی طور پر آسمان پر خدا کے دائیں ہاتھ پر موجود ہے ( دیکھیں عبرانیوں 9:24-28)۔

XXXII پادریوں کی شادی کا۔ بشپ، پادریوں اور ڈیکنز، کو خدا کے قانون کے ذریعے حکم نہیں دیا گیا ہے کہ وہ یا تو واحد زندگی کی جائیداد کی منت مانیں، یا شادی سے پرہیز کریں؛ اس لیے یہ ان کے لیے جائز ہے، جیسا کہ دوسرے تمام عیسائی مردوں کے لیے، اپنی صوابدید پر شادی کرنا، جیسا کہ وہ خدا پرستی کی بہتر خدمت کرنے کے لئے اسی کا فیصلہ کریں گے۔

چرچ کے اندر بشپ، پادریوں اور ڈیکن کی شادی کی اجازت دیتا ہے۔

XXXIII۔ خارج کرنے والے افراد کے بارے میں، ان سے کیسے بچنا ہے۔ وہ شخص جسے کلیسیا کی کھلی مذمت کے ذریعے کلیسیا کے اتحاد سے منقطع کر دیا جاتا ہے، اور خارج کر دیا جاتا ہے، اسے وفاداروں کی پوری جماعت سے، ایک ہیتھن اور پبلکن کے طور پر لیا جانا چاہیے، جب تک کہ وہ توبہ کے ذریعے کھلے عام صلح نہ کر لے، اور چرچ میں ایک جج کے ذریعہ موصول ہوا جس کے پاس اس کا اختیار ہے۔

مسیحی ہونے کے ناطے ہمیں بے دینوں اور گمراہیوں سے بچنے کی یاد دلاتا ہے (دیکھیں II کرنتھیوں 6:14-18)۔

XXXIV چرچ کی روایات میں سے۔ یہ ضروری نہیں ہے کہ روایات اور تقریبات تمام جگہوں پر ایک یا بالکل اسی طرح ہوں۔ کیونکہ وہ ہر زمانے میں متنوع رہے ہیں، اور مختلف ممالک، اوقات اور مردوں کے آداب کے مطابق بدلے جا سکتے ہیں، تاکہ کچھ بھی خدا کے کلام کے خلاف نہ ٹھہرایا جائے۔ جو کوئی بھی اپنے ذاتی فیصلے کے ذریعے، خوشی سے اور جان بوجھ کر، کلیسیا کی روایات اور تقاریب کو کھلم کھلا توڑتا ہے، جو کہ خدا کے کلام کے منافی نہیں ہیں، اور عام اتھارٹی کے ذریعہ مقرر اور منظور شدہ ہیں، اسے کھلے عام سرزنش کی جانی چاہیے، (کہ دوسرے ایسا کرنے سے ڈر سکتا ہے،) جیسا کہ وہ جو کلیسیا کے عام حکم کی خلاف ورزی کرتا ہے، اور مجسٹریٹ کے اختیار کو ٹھیس پہنچاتا ہے، اور کمزور بھائیوں کے ضمیروں کو زخمی کرتا ہے۔

ہر مخصوص یا قومی چرچ کے پاس کلیسیا کی تقاریب یا رسومات کو ترتیب دینے، تبدیل کرنے اور ختم کرنے کا اختیار صرف انسان کے اختیار سے ہے، تاکہ تمام چیزیں اصلاح کے لیے کی جائیں۔

اینگلیکن کمیونین میں موجود مختلف روایات اور تقریبات کو قبول کرتا ہے جب تک کہ وہ خدا کے لکھے ہوئے لفظ سے متفق ہوں۔

XXXV Homilies کے. ہومیلیز کی دوسری کتاب، کئی عنوانات جن کے ہم اس آرٹیکل کے تحت شامل ہوئے ہیں، ایک خدائی اور صحت بخش نظریہ پر مشتمل ہے، اور اس زمانے کے لیے ضروری ہے، جیسا کہ ہومیلیز کی سابقہ ​​کتاب، جو ایڈورڈ چھٹے کے زمانے میں ترتیب دی گئی تھی۔ ; اور اس لیے ہم فیصلہ کرتے ہیں کہ ان کو گرجا گھروں میں وزراء کے ذریعہ پڑھا جائے، مستعدی اور واضح طور پر، تاکہ وہ لوگوں کو سمجھ سکیں۔

Homilies کے ناموں میں سے۔

1 چرچ کے صحیح استعمال کا۔
2 بت پرستی کے خطرے کے خلاف۔
3 گرجا گھروں کی مرمت اور صفائی کا۔
4 نیک کاموں میں سے: پہلا روزہ۔
5 پیٹو اور شرابی کے خلاف۔
6 ملبوسات کی زیادتی کے خلاف۔
7 نماز۔
8 نماز کی جگہ اور وقت۔
9 کہ عام دعاؤں اور مقدسات کی خدمت ایک معروف زبان میں کی جانی چاہیے۔
10 خُدا کے کلام کے قابلِ احترام اندازے کا۔
11 صدقہ کرنے کا۔
12 مسیح کی پیدائش کا۔
13 مسیح کے جذبے کا۔
14 کری کی قیامت کا

st
15 مسیح کے جسم اور خون کے ساکرامنٹ کے قابل قبول ہونے کا۔
روح القدس کے تحفوں میں سے 16۔
17 روگیشن دنوں کے لیے۔
18 ازدواجی ریاست کا۔
19 توبہ۔
20 سستی کے خلاف۔
21 بغاوت کے خلاف۔

اصلاح کے وقت ایسے پادریوں کی کمی تھی جو پروٹسٹنٹ عقائد میں صحیح طور پر تربیت یافتہ تھے، اس لیے ضروری تھا کہ تعلیمات کا ایک مجموعہ ہو جو لوگوں کو پڑھا جائے جو اینگلیکن چرچ کے خصوصی طور پر پروٹسٹنٹ نظریات کی وضاحت کرتی ہو۔ Homilies نے ایک مخصوص شکل میں ایسا نظریہ فراہم کیا جو لوگوں کو پڑھنا تھا۔

XXXVI۔ بشپ اور وزراء کے تقدس کا۔ بشپس کی تقدیس کی کتاب، اور پادریوں اور ڈیکنوں کی ترتیب، جیسا کہ 1792 میں اس کلیسیا کے جنرل کنونشن کے ذریعے بیان کیا گیا ہے، اس طرح کی تقدیس اور ترتیب کے لیے ضروری تمام چیزیں شامل ہیں۔ نہ ہی اس میں کوئی ایسی چیز ہے جو خود توہم پرست اور بے دین ہو۔ اور، اس لیے، جس کو بھی تقدیس کی گئی ہے یا مذکورہ شکل کے مطابق حکم دیا گیا ہے، ہم ان سب کو صحیح، منظم، اور قانونی طور پر تقدیس اور حکم دینے کا حکم دیتے ہیں۔

اس آرٹیکل کا اصل 1571، 1662 کا متن اس طرح پڑھتا ہے: “آرچ بشپس اور بشپس کے تقدس کی کتاب، اور پادریوں اور ڈیکنوں کی ترتیب، حال ہی میں ایڈورڈ چھٹے کے زمانے میں ترتیب دی گئی، اور اسی وقت اس کی تصدیق کی گئی۔ پارلیمنٹ، اس طرح کی تقدیس اور ترتیب کے لئے ضروری تمام چیزوں پر مشتمل ہے: نہ ہی اس میں کوئی چیز ہے، جو خود توہم پرست اور بے دین ہے۔ اور اس لیے جو کوئی بھی اس کتاب کی رسومات کے مطابق تقدیس یا حکم دیا گیا ہے، نامزد کنگ ایڈورڈ کے دوسرے سال سے لے کر اس وقت تک، یا اس کے بعد انہی رسومات کے مطابق تقدیس یا حکم دیا جائے گا۔ ہم ان سب کو صحیح، منظم اور قانونی طور پر تقدیس اور حکم دینے کا حکم دیتے ہیں۔

چرچ کے منظور شدہ فارمولریوں کے ذریعہ بشپ اور وزراء کے تقدس کے حکم کی توثیق کرتا ہے اور یہ کہ ان تمام چیزوں کو جو تقدس یا مقرر کیا گیا ہے چرچ کے جائز وزراء کے طور پر تسلیم کیا جائے گا۔

XXXVII سول مجسٹریٹس کی طاقت کا۔ سول مجسٹریٹ کی طاقت تمام مردوں کے ساتھ ساتھ پادریوں کے طور پر عام لوگوں تک، ہر وقتی چیزوں میں؛ لیکن خالص روحانی چیزوں میں کوئی اختیار نہیں ہے۔ اور ہم اسے ان تمام مردوں کا فرض سمجھتے ہیں جو انجیل کے پروفیسر ہیں، باقاعدہ اور قانونی طور پر تشکیل دی گئی سول اتھارٹی کی باعزت اطاعت کریں۔

اس آرٹیکل کا اصل 1571، 1662 کا متن اس طرح پڑھتا ہے: “شاہ کی عظمت انگلینڈ کے اس دائرے میں، اور اس کے دوسرے ڈومینینز میں اعلیٰ اختیارات رکھتی ہے، جن کے پاس اس دائرے کی تمام ریاستوں کی سربراہ حکومت، چاہے وہ کلیسیائی ہوں یا سول۔ تمام وجوہات میں کسی غیر ملکی دائرہ اختیار کے تابع ہے، اور نہیں ہے، اور نہ ہی ہونا چاہیے۔ جہاں ہم بادشاہ کی اعلیٰ حکومت کی طرف منسوب کرتے ہیں، جس کے عنوان سے ہم کچھ بدزبانوں کے ذہنوں کو ناراض کرنا سمجھتے ہیں۔ ہم اپنے شہزادوں کو خدا کے کلام یا مقدسات کی خدمت نہیں دیتے ہیں، جس چیز کو ہماری ملکہ الزبتھ کے ذریعہ حال ہی میں مقرر کردہ احکام بھی واضح طور پر گواہی دیتے ہیں۔ لیکن یہ صرف خصوصیت ہے، جسے ہم دیکھتے ہیں کہ مقدس صحیفوں میں خود خدا کی طرف سے ہمیشہ تمام خدا پرست شہزادوں کو دیا گیا ہے۔ یعنی وہ تمام جائیدادوں اور درجات پر حکومت کریں جو خدا کی طرف سے ان کے چارج پر ہیں، خواہ وہ کلیسائی ہوں یا وقتی، اور ضدی اور بدکاروں کو سول تلوار سے روکیں۔

“روم کے بشپ کا انگلینڈ کے اس دائرے میں کوئی دائرہ اختیار نہیں ہے۔

“دائرے کے قوانین عیسائی مردوں کو گھناؤنے اور سنگین جرائم کے لیے موت کی سزا دے سکتے ہیں۔

“مجسٹریٹ کے حکم پر عیسائی مردوں کے لیے ہتھیار پہننا اور جنگوں میں خدمت کرنا جائز ہے۔”

بیان کرتا ہے کہ چرچ کے پادری نہ صرف کلیسیائی عدالتوں کے تابع ہیں بلکہ ریاست کی سول عدالتوں کے تابع ہیں۔

XXXVIII۔ عیسائی مردوں کے سامان میں سے، جو عام نہیں ہیں۔ عیسائیوں کی دولت اور سامان عام نہیں ہیں، جیسا کہ حق، لقب اور ملکیت کو چھونے سے۔ جیسا کہ بعض انابپٹسٹ جھوٹی فخر کرتے ہیں۔ اس کے باوجود، ہر آدمی کو چاہیے کہ جو کچھ اس کے پاس ہے، اس میں سے، اپنی استطاعت کے مطابق غریبوں کو خیرات دے۔

سوشلسٹ تصورات کے ساتھ منقطع ہے کہ تمام مردوں کے سامان مشترک ہیں یا تمام عیسائیوں کے درمیان ہونے چاہئیں۔

XXXIX ایک عیسائی آدمی کے حلف کا۔ جیسا کہ ہم اقرار کرتے ہیں کہ ہمارے خداوند یسوع مسیح اور اس کے رسول جیمز کی طرف سے عیسائی مردوں کو بیہودہ اور بے ہودہ قسمیں کھانے سے منع کیا گیا ہے، لہذا ہم فیصلہ کرتے ہیں کہ عیسائی مذہب اس سے منع نہیں کرتا، لیکن یہ کہ جب کوئی شخص مجسٹریٹ کی ضرورت ہو تو ایمان کی وجہ سے قسم کھائے۔ اور صدقہ، تو یہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی تعلیم کے مطابق انصاف، فیصلہ اور سچائی کے ساتھ کیا جائے۔

اس بات کی توثیق کرتا ہے کہ ایک عیسائی عدالت یا دوسری جگہ حلف اٹھا سکتا ہے اور خدا کے لکھے ہوئے کلام کی خلاف ورزی کیے بغیر ایسا یا ایسا کرنے کی قسم کھا سکتا ہے۔

گوٹ سوالات میں، ہم ان مضامین کی اکثریت کے ساتھ متفق ہوں گے، جس میں سب سے قابل ذکر استثناء شاید آرٹیکل 27 ہے۔ جیسا کہ زیادہ تر گرجا گھروں کے ساتھ، بیان کردہ نظریاتی پوزیشن کے درمیان بہت زیادہ فرق ہو سکتا ہے۔مقامی کلیسیا میں اس کے ساتھ آئی ٹیشنز اور اصل طریقوں اور تاکید۔ کچھ اینگلیکن اور ایپسکوپل گرجا گھر مکمل طور پر انجیلی بشارت کے حامل ہو سکتے ہیں جبکہ دیگر مذہبی اور سماجی/سیاسی دونوں لحاظ سے انتہائی آزاد خیال ہو سکتے ہیں۔ ہمیشہ کی طرح، ایک فرد کو کلیسیا سے وابستگی سے پہلے نظریاتی بیان اور بیان کردہ عقائد دونوں کی تحقیق کرنی چاہیے کہ اصل میں مقامی جماعت میں لاگو ہوتے ہیں۔

Spread the love