What is a quick summary of each of the 66 books of the Bible? بائبل کی 66 کتابوں میں سے ہر ایک کا فوری خلاصہ کیا ہے؟

Here are quick summaries of the 66 books of the Bible:

Old Testament:

Genesis- God creates the universe and fashions humans in His own image and places them in a perfect environment. The humans rebel against God and lose their paradise. The rebellion gets so bad that God wipes out humanity with a flood, but He graciously preserves Noah and his family. Later, God chooses and blesses the family of Abraham, Isaac, and Jacob (or Israel) and promises them a land for their many descendants. Through this family, God plans to bring a Savior to reconcile the sinful world to Himself.

Exodus- The children of Israel, now living in Egypt, are forced into slavery. God prepares an Israelite named Moses to lead the people to freedom. The king is loath to let the slaves go, so God sends a series of plagues upon the Egyptians. Moses leads the Israelites through the Red Sea, which God miraculously parts for them, and to Mt. Sinai. Camped at Sinai, the Israelites receive the Law of God, including the Ten Commandments. The Law is the basis of a covenant between God and people He has rescued, with promised blessings for obedience. The people promise to uphold the covenant.

Leviticus- In the Law, God establishes a sacrificial system to atone for sins and a series of festivals for Israel to observe as days of worship. God gives Moses plans for a tabernacle, a tent where the sacrifices can be offered and God will meet with His people. God specifies that the rituals and ceremonies of the tabernacle are to be overseen by the family of Aaron, Moses’ brother.

Numbers– The Israelites arrive at the border of Canaan, the land God had earlier promised to Abraham. But the people following Moses refused to enter the land, due to their lack of faith and their fear of Canaan’s inhabitants. As a judgment, God consigns the Israelites to wander in the wilderness for 40 years, until the unbelieving generation passes away and a new generation takes their place. God sustains His rebellious people with miraculous provisions throughout their time in the wilderness.

Deuteronomy- The new generation of Israelites is now ready to take possession of the Promised Land. Moses gives a series of final speeches, in which he reiterates the Law of God and promises that one day God will send another Prophet reminiscent of the power and mission of Moses. Moses dies in Moab.

Joshua- Moses’ successor, Joshua, leads the children of Israel across the Jordan River (parted miraculously by God) and into Canaan. God overthrows the city of Jericho by knocking its walls down. Joshua leads the people in a successful campaign to conquer the whole of Canaan. With a few exceptions, the Israelites remain faithful to their promise to keep their covenant with God, and God blesses them with military victories. After the land is subdued, the Israelites divide Canaan into separate territories, giving each of the tribes of Israel a lasting inheritance.

Judges- Joshua dies, and, almost immediately, the people begin to turn away from the God who had blessed them. Rather than driving out all the land’s inhabitants, they allow some of the Canaanites to survive, and the Israelites begin to worship the gods of the Canaanites. True to the terms of the covenant, God sends enemies to oppress His people. The suffering they endure causes them to repent, and God responds by sending leaders to rally the people and defeat the enemies, bringing peace to the land again. This cycle is repeated several times over a span of about 300 years.

Ruth- During the time of the judges, a famine strikes the land, and a man of Bethlehem takes his family out of Israel to live in Moab. There, he and his two sons die. His widow, Naomi, returns to Israel along with one of her daughters-in-law, a Moabitess named Ruth. Back in Bethlehem, the two women face hardship, and Ruth gathers what food she can by gleaning in a barley field owned by a man named Boaz. Ruth is noticed by Boaz, and he gives her extra help. Since Boaz is related to Naomi’s late husband, he has the legal opportunity to redeem the family property and raise up an heir in the name of the deceased. Ruth asks Boaz to do just that, and Boaz agrees. He marries Ruth and purchases the property that had belonged to Naomi. Boaz and Ruth become the great-grandparents of Israel’s greatest king, David.

1 Samuel- In answer to prayer, Samuel is born to a barren woman, who then dedicates her young son to the tabernacle. Samuel is raised by the judge and high priest, Eli. Early on, Samuel begins to receive messages from God and becomes known as a prophet. After Eli’s death, Samuel becomes Israel’s final judge. The people demand a king to make them more like other nations. Samuel advises against it, but the Lord directs Samuel to grant their request. Samuel anoints Saul as the first king. Saul starts out well, but he soon begins to act in pride and ignore God’s commands. God rejects Saul as king and instructs Samuel to anoint another person to take Saul’s place: that person is David, chosen while still a youth. David becomes famous in Israel for slaying the Philistine warrior Goliath, and Saul grows jealous to the point of madness. The king begins to pursue David, whose life is in constant danger as he takes refuge in the wilderness. Men loyal to David gather to him. Samuel dies, and, later, Saul and his sons are killed in a battle with the Philistines.

2 Samuel- David is crowned king by his tribesmen in Judah, and they make the city of Hebron the capital of Judah. After a brief civil war, all the tribes of Israel united under the leadership of David, God’s choice. The capital is moved to Jerusalem. God makes a promise to David that a son of his will rule on the throne forever. David seeks to follow God’s will, and God blesses David with victories over foreign enemies. Sadly, David falls into the sin of adultery and tries to cover his sin by having the woman’s husband killed. God pronounces judgment on David’s house, and trouble begins. David’s daughter is raped by her half-brother, who is then killed by Absalom, another of David’s sons, in revenge. Absalom then plots to overthrow David and take the throne. He gains a following, and David and those loyal to him are forced to flee Jerusalem. Absalom is eventually killed in battle, and David returns home in sorrow. Near the end of his life, David disobeys God and takes a census of the people, a sin for which God sends judgment on the nation.

1 Kings- King David dies. His son Solomon takes the throne, but his brother Adonijah challenges him for it. After repeated attempts to usurp authority from his brother, Adonijah is executed. King Solomon is blessed by God with great wisdom, riches, and honor. He oversees the building of the temple in Jerusalem and dedicates it to the Lord in a grand ceremony. Later in life, Solomon forsakes the path of righteousness and serves other gods. After Solomon’s death, his son Rehoboam takes the throne, but his foolish choices lead to a civil war, and the nation is fractured in two. Rehoboam remains king of the southern kingdom, and a man named Jeroboam is crowned king of the ten tribes to the north. Both kings practice idolatry. Through the years, David’s dynasty in the southern kingdom occasionally produces a godly king; most of the kings are wicked, however. The northern kingdom is led by an unbroken series of wicked rulers, including the idolatrous Ahab and his wife Jezebel, during whose reign God sends a drought to punish Israel, along with a mighty prophet, Elijah, to point the people back to God.

2 Kings- Elijah is translated to heaven, and Elisha takes his place as God’s prophet in Israel. Jehu becomes Israel’s king and wipes out the wicked family line of Ahab. In Judah, Ahab’s daughter becomes queen and attempts to kill all of David’s heirs, but she fails. Wicked kings rule in both nations, with the exception, of Judah, of a few reformers such as Hezekiah and Josiah. Israel’s persistent idolatry finally exhausts God’s patience, and He brings the Assyrians against them to conquer the people of Israel. Later, God brings the Babylonians against Judah as a judgment, and Jerusalem is destroyed.

1 Chronicles- A genealogy traces God’s people from Adam to the kingdom years, with a focus on David’s family. The rest of the book covers much of the same material as 1 and 2 Samuel, with an emphasis on the life of David.

2 Chronicles- This book covers much the same material as 1 and 2 Kings, with an emphasis on David’s dynasty in Judah. The book begins with the construction of the temple under Solomon, and it ends with the destruction of the temple by the Babylonians, with a proclamation, in the last few verses, that the temple would be rebuilt.

Ezra- After 70 years of captivity in a foreign land, the people of Judah are allowed to return to their homeland to rebuild. A descendant of David named Zerubbabel, together with some priests, begins to rebuild the temple. Political opposition to the rebuilding forces a halt in construction for about 15 years. But then the work continues, encouraged by two prophets, Haggai and Zechariah. About 57 years after the temple is completed, Ezra the scribe arrives in Jerusalem, bringing with him about 2,000 people, including priests and Levites to serve in the temple. Ezra finds that the people living in Judah have lapsed into sin, and he calls the people to repentance and a return to the law of God.

Nehemiah- About 14 years after Ezra’s arrival in Jerusalem, Nehemiah, the king’s cupbearer in Persia, learns that the walls of Jerusalem are in a state of disrepair. Nehemiah travels to Jerusalem and oversees the construction of the city walls. He is opposed by enemies of the Jews, who try to thwart the work with various tactics, but the wall is finished with God’s blessings in time to observe the Feast of Tabernacles. Ezra reads the book of the law publicly, and the people of Judah rededicate themselves to following it. The book of Nehemiah begins with sadness and ends with singing and celebration.

Esther- Some exiled Jews have opted not to return to Jerusalem and have stayed in Persia instead. Xerxes, the king of Persia, chooses as his new queen a young woman named Esther. Esther is a Jewess, but she keeps her ethnicity secret at the behest of her cousin Mordecai, who has raised her. A high-ranking official in the kingdom, a man named Haman, plots a genocide against all the Jews in the kingdom, and he receives the king’s permission to carry out his plan—neither he nor the king knowing that the queen is Jewish. Through a series of divinely directed, perfectly timed events, Haman is killed, Mordecai is honored, and the Jews are spared, with Queen Esther being instrumental in it all.

Job- A righteous man named Job suffers a series of terrible tragedies that take away his wealth, his family, and his health. Even after losing everything, Job does not curse God. Three friends come to commiserate with Job, but they eventually speak their minds about the situation, advancing the notion that God is punishing Job for some secret sin. Job denies any sinfulness on his part, yet in his pain, he cries out to God for answers—he trusts God, but he also wants God to explain Himself. In the end, God shows up and overwhelms Job with His majesty, wisdom, and power. God restores Job’s fortune, health, and family, but the answer to why Job had suffered God never answers.

Psalms- This collection of songs includes praise to the Lord, cries of the needy, worshipful adoration, lament, thanksgiving, prophecy, and the full spectrum of human emotion. Some of the songs were written for specific occasions, such as traveling to the temple or crowning a new king.

Proverbs- A collection of moral teachings and general observances about life, this book is directed to those in search of wisdom. Subjects include love, sex, marriage, money, work, children, anger, strife, thoughts, and words.

Ecclesiastes- A wise older man who calls himself the Preacher philosophizes about life, looking back over what he has learned from his experiences. The Preacher, having lived apart from God, recounts the futility of various dead-end paths. Nothing in this world satisfies riches, pleasure, knowledge, or work. Without God in the equation, all is vanity.

Song of Solomon- A king and a humble maiden express love and devotion to each other through their courtship, leading to a joyous and affirming consummation of the marriage on the wedding night. The song continues to depict some of the difficulties faced by the bridegroom and his bride in their married life, always coming back to the yearning the lovers have for each other and the undying strength of love.

Isaiah- Isaiah is called a prophet in Judah and brings God’s messages to several kings. God proclaims judgment against Judah for their religious hypocrisy. The prophet then delivers messages of warning to other nations, including Assyria, Babylon, Moab, Syria, and Ethiopia. For all of God’s anger against His people in Judah, He miraculously saves Jerusalem from an attack by the Assyrians. Isaiah predicts the fall of Judah at the hands of Babylon, but he also promises restoration to their land. Isaiah looks even farther ahead to the promised Messiah, who will be born of a virgin, be rejected by His people, and be killed in the process of bearing their iniquities—yet the Messiah, God’s righteous Servant, will also rule the world from Jerusalem in a kingdom of peace and prosperity.

Jeremiah- Jeremiah, living during the time of the Babylonian invasion of Judah, prophesies Babylon’s victory over Judah, a message that brings him much grief from the proud kings and false prophets in Jerusalem. Continually calling God’s people to repent, Jeremiah is regularly ignored and even persecuted. Through Jeremiah, God promises that He will one day establish a new covenant with Israel. The prophet lives to see the fall of Jerusalem and predicts that the people’s captivity in Babylon will last 70 years.

Lamentations- In a long acrostic poem, Jeremiah weeps over the destruction of the land of Judah. The reproach and shame of God’s people are overwhelming, and all seems lost. Yet God is just in His discipline, and He is merciful in not destroying the rebellious nation completely; God’s people will yet see God’s compassion.

Ezekiel- This is a book of prophecies written in Babylon by Ezekiel, a priest-turned-prophet. Ezekiel deals with the cause of God’s judgment against Judah, which is idolatry and the dishonor Judah had brought upon God’s name. Ezekiel also writes of judgment against other nations, such as Edom, Ammon, Egypt, and Philistia, and against the city of Tyre. Ezekiel then promises a miraculous restoration of God’s people to their land, the reconstruction of the temple, and God’s rule over all the nations of the earth.

Daniel- As a young man, Daniel is taken captive to Babylon, but he and three friends remain steadfast to the Lord’s commands, and God blesses them with honor and high rank in the Babylonian Empire. They have enemies, though: Daniel’s three friends are thrown into a fiery furnace, and Daniel into a den of lions, but God preserves their lives in each case and bestows even more honor upon them. Daniel survives the overthrow of Babylon and continues prophesying into the time of the Persian Empire. Daniel’s prophecies are far-reaching, accurately predicting the rise and fall of many nations and the coming rule of God’s chosen king, the Messiah.

Hosea- Hosea’s mission is to call Israel to repentance, as God is poised to judge them for their corruption and idolatry. At God’s command, Hosea marries a wife who is unfaithful to him, and then he must redeem her from prostitution. This sordid experience is an illustration of Israel’s spiritual adultery and the fact that a loving God is still pursuing them to redeem them and restore them to their proper place.

Joel- Joel ministers in Judah during a time of drought and a locust plague, events that are signs of God’s judgment on the nation. Joel uses the current judgment to point the people to the future, the worldwide judgment of the Day of the Lord, and he calls on everyone to repent. Joel’s final promise is that the Lord will dwell with His people in Zion and bring great blessing to the restored land.

Amos- Amos begins with pronouncing judgment against Damascus, Tyre, Edom, and Gaza, among other places. The prophet travels north from Judah to Israel to warn that nation of God’s judgment. He lists their sins and extends God’s invitation to repent and be forgiven. After the destruction of Israel, God promises, there will be a time of restoration.

Obadiah- From their seemingly secure, rock-bound homes, the Edomites had rejoiced at Judah’s fall, but Obadiah brings God’s sobering message: Edom, too, will be conquered, and that without remedy. God’s people will be the ultimate victors.

Jonah- Jonah, a prophet in Israel, is instructed by God to go to the Assyrian capital of Nineveh to prophesy against it. Jonah disobeys, attempting to travel away from Nineveh, but God intercepts him at sea. Jonah is thrown overboard and swallowed by a great fish. In the belly of the fish, Jonah repents, and the fish spits him back on dry ground. When Jonah prophesies in Nineveh, the Assyrians humble themselves before God and repent, and God does not bring judgment upon them. Jonah is angry that God has forgiven the people he hates, and God reasons with his obstinate prophet.

Micah- In a series of three messages, Micah calls on both Judah and Israel to hear the word of God. He prophesies coming judgment on both kingdoms and foresees the blessed kingdom of God, ruled by a king who would be born in Bethlehem. Micah ends his book with a promise that God’s anger will turn and that God’s people will be restored.

Nahum- Nahum’s prophecy concerns the destruction of Nineveh. Nahum gives the reasons for it and promises God’s judgment on this nation that had once terrorized the rest of the world. Unlike God’s judgment against Israel, the judgment against Nineveh will have no respite, and the destruction will not be followed by restoration.

Habakkuk- The prophet questions God about something he cannot understand: namely, how God can use the wicked Babylonians to punish God’s own people, Judah. The Lord answers by reminding Habakkuk of His sovereignty and faithfulness and that, in this world, the just will live by faith.

Zephaniah- Zephaniah warns of the coming Day of the Lord, a prophecy fulfilled, in part, by the invasion of Babylon and, more remotely, at the end of time. Other nations besides Judah are also warned of coming judgment, including Philistia, Moab, Cush, and Assyria. Jerusalem is called to repent, and the book ends with a promise from God to restore His people to favor and glory.

Haggai- Haggai lives and preaches during the time of Zerubbabel and Zechariah. The reconstruction of the temple had begun, but opposition from the Jews’ enemies has halted the work for about 15 years. Haggai preaches a series of four sermons to spur the people back to work so that the temple can be completed.

Zechariah- A contemporary of Haggai and Zerubbabel, Zechariah encourages the people of Jerusalem to finish the reconstruction of the temple, a work that has languished for about 15 years. Eight visions relate to God’s continuing plan for His people. Judgment on Israel’s enemies is promised, along with God’s blessings on His chosen people. Several messianic prophecies are included, predicting the Messiah’s coming, His suffering, and His eventual conquering glory.

Malachi- Ministering to post-exilic Israel, Malachi calls God’s people to repentance. The prophet condemns the sins of divorce, bringing impure sacrifices, withholding tithes, and profaning God’s name. The book, and the Old Testament, end with a description of the Day of the Lord and the promise that Elijah will come before that dreadful day.

New Testament:

Matthew- The ministry of Jesus Christ is presented from the point of view that Jesus is the Son of David and thus the rightful king to rule from Israel’s throne. Jesus offers the kingdom to His people, but Israel rejects Him as their king and crucifies Him. Jesus rises again and sends His disciples into all the world to proclaim His teaching.

Mark- The ministry of Jesus Christ is presented from the point of view that Jesus is the Righteous Servant of God. Jesus obeys the Father’s will and accomplishes all He had been sent to do, including dying for sinners and rising again from the dead.

Luke- The ministry of Jesus Christ is presented from the point of view that Jesus is the Son of Man who came to save the whole world. Jesus shows the love of God to all classes of people, regardless of race or gender. He is unjustly betrayed, arrested, and murdered, but He rises again.

John- The ministry of Jesus Christ is presented from the point of view that Jesus is the Son of God. Jesus speaks at length of His nature and work and the necessity of faith, and He proves that He is the Son of God through a series of public miracles. He is crucified and rises again.

Acts- This sequel to the life of Christ follows the ministry of the apostles following Jesus’ ascension. The Holy Spirit arrives to fill and empower Jesus’ followers, who begin to preach the gospel in the midst of mounting persecution. Paul, a former enemy of the Christians, is converted and called by Christ as an apostle. The church begins in Jerusalem, expands to Samaria, and spreads to the Roman world.

Romans- This theological treatise, written by Paul on one of his missionary journeys, examines the righteousness of God and how God can declare guilty sinners to be righteous based on the sacrifice of Jesus Christ. Having been justified by faith, believers live in holiness before the world.

1 Corinthians- The church in Corinth is riddled with problems, and the apostle Paul writes to give them God’s instructions on how to deal with various issues, including sin and division in the church, marriage, idolatry, spiritual gifts, the future resurrection, and the conduct of public worship.

2 Corinthians- The problems in the church in Corinth have for the most part been worked through, and Paul writes this letter to encourage them, to explain the love gift he is collecting for Judean Christians, and to defend his apostleship against critics who are speaking out against him.

Galatians- False teachers have infiltrated the churches in Galatia, falsely suggesting that works of the law (specifical circumcision) must be added to faith in Christ in order for salvation to be real. In no uncertain terms, Paul condemns the mixture of law and grace, showing that salvation and sanctification are all of grace. Christ’s salvation has set us free. We rely on the Spirit’s work, not our own.

Ephesians- Salvation comes by grace through faith in Christ, and not by our own works. The life Jesus gives, to Jew and Gentile alike, results in a new heart and a new walk-in this world. The church is the Body of Christ, and marriage is a picture of Christ and the church. God has provided spiritual armor to wage spiritual battle.

Philippians- Writing this letter from a Roman prison, Paul thanks the church in Philippi for the love gift they had sent him. The gospel of Christ is advancing in the world, despite hardship, and Christians can rejoice in that. We are urged to humble ourselves as Christ did, be unified, and press toward the goal of pleasing the Lord in all things.

Colossians- Despite what false teachers might claim, Jesus Christ is the Savior, Lord, and Creator of all things. In Him, all believers are made alive and complete; they need not submit themselves to manmade regulations or the mandates of the Old Testament law. The new life we have in Christ will affect our relationships with spouses, parents, children, masters, and servants.

1 Thessalonians- Paul reviews the start of the church in Thessalonica, and he commends them for their steadfast faith. Believers are encouraged to live pure lives and to maintain the hope that Jesus will return. When Christ comes again, He will resurrect believers who have died and will rapture those still living to be with Him forever. The Day of the Lord is coming, which will result in the judgment of this world.

2 Thessalonians- The church of Thessalonica is enduring persecution, and some believers wonder if the Day of the Lord had already arrived. Paul assures them that what they are experiencing is not God’s judgment. Before that terrible day comes, there must be a worldwide rebellion, removal of the Restrainer, and the rise to power of the man of lawlessness. But God will protect His children. Until the time that Christ returns, keep doing what is right.

1 Timothy- Timothy, the pastor of the church in Ephesus, is the recipient of this letter from Paul. A pastor must be qualified spiritually, be on guard against false doctrine, pray, care for those in the church, train other leaders, and above all faithfully preach the truth.

2 Timothy- In this very personal letter at the end of his life, Paul encourages Timothy to hold fast to the faith, focus on what is truly important, persevere in dangerous times, and preach the Word of God.

Titus- Titus, an overseer of churches on the island of Crete, has the job of appointing elders in the churches there, making sure the men are qualified spiritually. He must beware of false teachers, avoid distractions, model the Christian life, and enjoin all believers to practice good works.

Philemon- In this short letter to Philemon, a believer in Colossae, the apostle Paul urges him to show the love of Christ and be reconciled to a runaway, thieving slave. Under Roman law, the slave could face severe punishment, but Paul urges grace for the sake of Christ. Philemon should welcome his slave back into the household, not as a slave now but as a beloved brother in Christ.

Hebrews- There are Jewish members of the church who are tempted to return to the Jewish law. The author of this epistle urges them not to look back but to move on to full spiritual maturity, by faith. Jesus Christ is better than angels and better than Moses, and He has provided a better sacrifice, a better priesthood, and a better covenant than anything in the Old Testament. Having left Egypt, we must enter the Promised Land, not continue to wander aimlessly in the wilderness.

James- In this very practical book, James shows what faith lived out looks like. True, saving faith will affect our prayer life, our words, our response to trials, and our treatment of others.

1 Peter- The apostle Peter writes to believers under persecution in Asia Minor, addressing them as “God’s elect, exiles scattered” (1 Peter 1:1). He reminds them of the grace of God, assures them of their heavenly home, teaches them to exhibit holiness, instructs them on marital relations, and encourages them as they face suffering.

2 Peter- With his death impending, Peter writes the churches, exhorting them to follow the Word of God, identify and avoid false teachers, and live in holiness as they await the second coming of Christ.

1 John- God is light, love, and truth. Those who truly belong to Christ will seek fellowship with His redeemed; walk in the light, not in darkness; confess sin; obey God’s Word; love God; experience a decreasing pattern of sin in their lives; demonstrate love for other Christians; and experience victory in their Christian walk.

2 John- The Christian life is a balance of truth and love. We cannot forsake truth in the name of love; neither can we cease loving because of a misdirected notion of upholding the truth.

3 John- Two men are contrasted: Gaius, who shows his commitment to truth and love through hospitality; and Diotrephes, who shows his malice and pride through a lack of hospitality.

Jude- The message of the gospel will not change. But there are men who attempt to pervert the message and teach false doctrines to benefit themselves and lead people astray. These men must be resisted in the truth.

Revelation- Jesus is the Lord of the church, and He knows the condition of each local body of believers. The end times will be marked by an increase in wickedness, the rise of the Antichrist’s one-world government, and the fury of Satan against God’s people on earth. God pours out His wrath on a rebellious and unrepentant world in a series of judgments that steadily increase in severity. Finally, the Lamb of God returns to earth with the armies of heaven, defeating the forces of evil arrayed against Him and setting up His kingdom of peace. Satan, the Antichrist, and the wicked of every age are thrown into the lake of fire, while the followers of Christ inherit a new heaven and new earth.

:بائبل کی 66 کتابوں کے فوری خلاصے یہ ہیں

:پرانا عہد نامہ

پیدائش – خدا کائنات کو تخلیق کرتا ہے اور انسانوں کو اپنی تصویر میں ڈھالتا ہے اور انہیں ایک بہترین ماحول میں رکھتا ہے۔ انسان خدا سے بغاوت کرتے ہیں اور اپنی جنت کھو دیتے ہیں۔ بغاوت اتنی بری ہو جاتی ہے کہ خدا انسانیت کو سیلاب سے مٹا دیتا ہے ، لیکن وہ نوح اور اس کے خاندان کو احسان سے محفوظ رکھتا ہے۔ بعد میں ، خدا ابراہیم ، اسحاق ، اور یعقوب (یا اسرائیل) کے خاندان کا انتخاب اور برکت دیتا ہے اور ان سے ان کی بہت سی اولادوں کے لیے زمین کا وعدہ کرتا ہے۔ اس خاندان کے ذریعے خدا گناہ گار دنیا کو اپنے آپ سے ملانے کے لیے ایک نجات دہندہ لانے کا ارادہ رکھتا ہے۔

خروج – اسرائیل کے بچے ، جو اب مصر میں رہ رہے ہیں ، غلامی پر مجبور ہیں۔ خدا موسیٰ نامی ایک اسرائیلی کو تیار کرتا ہے تاکہ لوگوں کو آزادی کی طرف لے جائے۔ بادشاہ غلاموں کو جانے سے نفرت کرتا ہے ، لہذا خدا مصریوں پر ایک طاعون بھیجتا ہے۔ موسیٰ بنی اسرائیل کو بحیرہ احمر کے راستے سے لے جاتا ہے ، جسے خدا نے معجزانہ طور پر ان کے لیے اور ماؤنٹ سینائی تک پہنچایا۔ سینا میں ڈیرے ڈالے ہوئے ، اسرائیلیوں کو خدا کا قانون ملتا ہے ، بشمول دس احکامات۔ قانون خدا اور لوگوں کے درمیان ایک عہد کی بنیاد ہے جسے اس نے بچایا ہے ، اطاعت کے لیے وعدہ کردہ نعمتوں کے ساتھ۔ عوام عہد کو برقرار رکھنے کا وعدہ کرتے ہیں۔

احبار – قانون میں ، خدا گناہوں کے کفارہ کے لیے قربانی کا نظام قائم کرتا ہے اور اسرائیل کے لیے تہواروں کا ایک سلسلہ عبادت کے دنوں کے طور پر مناتا ہے۔ خدا موسیٰ کو ایک خیمہ ، ایک خیمے کے منصوبے دیتا ہے جہاں قربانیاں پیش کی جا سکتی ہیں اور خدا اپنے لوگوں سے ملتا ہے۔ خدا بتاتا ہے کہ خیمے کی رسومات اور تقاریب کی نگرانی موسیٰ کے بھائی ہارون کے خاندان کو کرنی ہے۔

نمبر – بنی اسرائیل کنعان کی سرحد پر پہنچے ، وہ زمین جس کا خدا نے پہلے ابراہیم سے وعدہ کیا تھا۔ لیکن موسیٰ کی پیروی کرنے والے لوگ اپنے عقیدے کی کمی اور کنعان کے باشندوں کے خوف کی وجہ سے زمین میں داخل ہونے سے انکار کرتے ہیں۔ ایک فیصلے کے طور پر ، خدا اسرائیلیوں کو 40 سال تک بیابان میں گھومنے کے لیے بھیجتا ہے ، یہاں تک کہ کافر نسل ختم ہو جاتی ہے اور ایک نئی نسل ان کی جگہ لے لیتی ہے۔ خدا اپنے باغی لوگوں کو صحرا میں اپنے پورے عرصے میں معجزانہ رزق کے ساتھ برقرار رکھتا ہے۔

استثناء – اسرائیلیوں کی نئی نسل اب وعدہ شدہ زمین پر قبضہ کرنے کے لیے تیار ہے۔ موسیٰ آخری تقاریر کا ایک سلسلہ دیتا ہے ، جس میں وہ خدا کے قانون کا اعادہ کرتا ہے اور وعدہ کرتا ہے کہ ایک دن خدا موسیٰ کی طاقت اور مشن کی یاد دلاتے ہوئے ایک اور نبی بھیجے گا۔ موسیٰ موآب میں مر گیا۔

جوشوا – موسیٰ کا جانشین ، جوشوا ، بنی اسرائیل کو دریائے اردن کے اس پار (خدا کی طرف سے معجزانہ طور پر جدا) اور کنعان کی طرف لے جاتا ہے۔ خدا نے یریحو شہر کو اس کی دیواریں گرا کر اکھاڑ دیا۔ جوشوا پورے کنعان کو فتح کرنے کی کامیاب مہم میں لوگوں کی رہنمائی کرتا ہے۔ کچھ استثناء کے ساتھ ، بنی اسرائیل خدا کے ساتھ اپنے عہد کو برقرار رکھنے کے اپنے وعدے کے ساتھ وفادار رہتے ہیں ، اور خدا انہیں فوجی فتوحات سے نوازتا ہے۔ زمین کو زیر کرنے کے بعد ، اسرائیلیوں نے کنعان کو الگ الگ علاقوں میں تقسیم کیا ، جس سے اسرائیل کے ہر قبیلے کو ایک دائمی وراثت ملی۔

ججز – جوشوا مر جاتا ہے ، اور ، تقریبا immediately فورا، ، لوگ اس خدا سے منہ موڑنے لگتے ہیں جس نے انہیں برکت دی تھی۔ تمام زمین کے باشندوں کو نکالنے کے بجائے ، وہ کچھ کنعانیوں کو زندہ رہنے دیتے ہیں ، اور بنی اسرائیل کنعانیوں کے دیوتاؤں کی پرستش کرنے لگتے ہیں۔ عہد کی شرائط کے مطابق ، خدا اپنے لوگوں پر ظلم کرنے کے لیے دشمن بھیجتا ہے۔ جو تکلیف وہ برداشت کرتے ہیں وہ ان کے لیے توبہ کا باعث بنتی ہے ، اور خدا لوگوں کو ریلی کرنے اور دشمنوں کو شکست دینے کے لیے لیڈر بھیج کر جواب دیتا ہے ، اور زمین میں دوبارہ امن لاتا ہے۔ یہ چکر تقریبا 300 300 سال کے عرصے میں کئی بار دہرایا گیا ہے۔

روتھ – ججوں کے زمانے میں ، ملک میں قحط پڑتا ہے ، اور بیت المقدس کا ایک آدمی اپنے خاندان کو موآب میں رہنے کے لیے اسرائیل سے باہر لے جاتا ہے۔ وہاں ، وہ اور اس کے دو بیٹے مر جاتے ہیں۔ اس کی بیوہ نومی اپنی ایک بہو ، روتھ نامی موآبی خاتون کے ساتھ اسرائیل واپس آئی۔ واپس بیت لحم میں ، دونوں خواتین کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے ، اور روتھ بوز نامی شخص کی ملکیت میں جو کے کھیت میں اکٹھا ہو کر کیا کھانا کھا سکتی ہے۔ روتھ کو بوز نے دیکھا ، اور وہ اس کی اضافی مدد کرتا ہے۔ چونکہ بوز نومی کے مرحوم شوہر سے متعلق ہے ، اس لیے اسے قانونی موقع ہے کہ وہ خاندانی جائیداد چھڑائے اور میت کے نام پر وارث بنائے۔ روتھ نے بوز سے صرف اتنا کرنے کو کہا ، اور بوز اس سے اتفاق کرتا ہے۔ اس نے روتھ سے شادی کی اور وہ جائیداد خریدی جو نومی کی تھی۔ بوعز اور روتھ اسرائیل کے سب سے بڑے بادشاہ ڈیوڈ کے پردادا بن گئے۔

1 سموئیل – دعا کے جواب میں ، سموئیل ایک بانجھ عورت سے پیدا ہوا ، جو پھر اپنے جوان بیٹے کو خیمے کے لیے وقف کرتی ہے۔ سموئیل کی پرورش جج اور اعلیٰ پادری ، ایلی نے کی ہے۔ ابتدائی طور پر ، سموئیل خدا کی طرف سے پیغامات وصول کرنا شروع کرتا ہے اور ایک نبی کے طور پر جانا جاتا ہے۔ ایلی کی موت کے بعد ، سموئیل اسرائیل کا آخری جج بن گیا۔ لوگ ایک بادشاہ سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ انہیں دوسری قوموں کی طرح بنائے۔ سموئیل اس کے خلاف مشورہ دیتا ہے ، لیکن رب سموئیل کو ہدایت دیتا ہے کہ وہ ان کی درخواست قبول کرے۔ سموئیل نے ساؤل کو پہلے بادشاہ کے طور پر شامل کیا۔ ساؤل نے اچھی شروعات کی ، لیکن وہ جلد ہی فخر سے کام کرنے لگا اور خدا کے احکامات کو نظر انداز کرنے لگا۔ خدا ساؤل کو بادشاہ ماننے سے انکار کرتا ہے اور سموئیل کو ہدایت دیتا ہے کہ وہ کسی دوسرے شخص کو ساؤ لینے کے لیے مسح کرے۔

میری جگہ: وہ شخص ڈیوڈ ہے ، جوانی کے دوران منتخب کیا گیا۔ ڈیوڈ اسرائیل میں فلسطینی جنگجو گولیت کو قتل کرنے کے لیے مشہور ہوا ، اور ساؤل پاگل پن کی حد تک حسد کرنے لگا۔ بادشاہ نے داؤد کا تعاقب شروع کیا ، جس کی زندگی مسلسل خطرے میں ہے جب وہ بیابان میں پناہ لیتا ہے۔ ڈیوڈ کے وفادار مرد اس کے پاس جمع ہوتے ہیں۔ سموئیل مر گیا ، اور ، بعد میں ، ساؤل اور اس کے بیٹے فلستیوں کے ساتھ لڑائی میں مارے گئے۔

2 سموئیل – ڈیوڈ کو یہوداہ میں اس کے قبائلیوں نے بادشاہ بنایا ، اور انہوں نے حبرون شہر کو یہوداہ کا دارالحکومت بنایا۔ ایک مختصر خانہ جنگی کے بعد ، اسرائیل کے تمام قبائل خدا کی مرضی سے ڈیوڈ کی قیادت میں متحد ہو گئے۔ دارالحکومت یروشلم منتقل کر دیا گیا ہے۔ خدا داؤد سے وعدہ کرتا ہے کہ اس کی مرضی کا ایک بیٹا ہمیشہ تخت پر حکومت کرے گا۔ ڈیوڈ خدا کی مرضی پر چلنے کی کوشش کرتا ہے ، اور خدا داؤد کو غیر ملکی دشمنوں پر فتح سے نوازتا ہے۔ افسوس کی بات ہے کہ ڈیوڈ زنا کے گناہ میں پڑتا ہے اور عورت کے شوہر کو قتل کروا کر اپنے گناہ کو چھپانے کی کوشش کرتا ہے۔ خدا داؤد کے گھر پر فیصلہ سناتا ہے ، اور مصیبت شروع ہوتی ہے۔ ڈیوڈ کی بیٹی کو اس کے سوتیلے بھائی نے زیادتی کا نشانہ بنایا ، جس کے بعد ابی سلوم ، جو کہ داؤد کے دوسرے بیٹوں میں سے تھا ، نے انتقام کے طور پر قتل کر دیا۔ ابی سلوم نے ڈیوڈ کو ہٹانے اور تخت لینے کی سازش کی۔ اس نے ایک پیروی حاصل کی ، اور ڈیوڈ اور اس کے وفادار یروشلم سے بھاگنے پر مجبور ہوگئے۔ ابی سلوم بالآخر جنگ میں مارا گیا ، اور ڈیوڈ غم میں گھر واپس آیا۔ اپنی زندگی کے اختتام کے قریب ، ڈیوڈ خدا کی نافرمانی کرتا ہے اور لوگوں کی مردم شماری کرتا ہے ، ایک ایسا گناہ جس کے لیے خدا قوم پر فیصلہ بھیجتا ہے۔

1 بادشاہ – بادشاہ ڈیوڈ مر گیا۔ اس کا بیٹا سلیمان تخت سنبھالتا ہے ، لیکن اس کا بھائی ادونیاہ اسے اس کے لیے چیلنج کرتا ہے۔ اپنے بھائی سے اتھارٹی پر قبضہ کرنے کی بار بار کوششوں کے بعد ، ادونیاہ کو پھانسی دے دی گئی۔ بادشاہ سلیمان کو خدا نے بڑی حکمت ، دولت اور عزت سے نوازا ہے۔ وہ یروشلم میں ہیکل کی عمارت کی نگرانی کرتا ہے اور اسے ایک عظیم الشان تقریب میں رب کے لیے وقف کرتا ہے۔ بعد کی زندگی میں ، سلیمان راستبازی کا راستہ چھوڑ دیتا ہے اور دوسرے دیوتاؤں کی خدمت کرتا ہے۔ سلیمان کی موت کے بعد ، اس کا بیٹا رحبعام تخت سنبھالتا ہے ، لیکن اس کے احمقانہ انتخاب خانہ جنگی کا باعث بنتے ہیں ، اور قوم دو ٹکڑے ہو جاتی ہے۔ رحبعام جنوبی بادشاہی کا بادشاہ بنی ہوئی ہے ، اور یربعام نامی شخص کو شمال میں دس قبیلوں کا بادشاہ بنایا گیا ہے۔ دونوں بادشاہ بت پرستی کی مشق کرتے ہیں۔ سالوں کے دوران ، جنوبی بادشاہی میں ڈیوڈ کا خاندان کبھی کبھار ایک خدا پرست بادشاہ پیدا کرتا ہے۔ تاہم ، زیادہ تر بادشاہ بدکار ہیں۔ شمالی بادشاہت کی قیادت بُرے حکمرانوں کی ایک نہ ٹوٹنے والی سیریز سے ہوتی ہے ، بشمول بت پرست احاب اور اس کی بیوی ایزبل ، جن کے دور میں خدا اسرائیل کو سزا دینے کے لیے قحط بھیجتا ہے ، ایک طاقتور نبی ، ایلیاہ کے ساتھ ، لوگوں کو خدا کی طرف اشارہ کرنے کے لیے۔

2 بادشاہ – ایلیاہ کا ترجمہ آسمان پر کیا گیا ہے ، اور الیشع نے اسرائیل میں خدا کے نبی کی حیثیت سے اپنی جگہ لی۔ جیہو اسرائیل کا بادشاہ بن گیا اور اخیب کے شریر خاندان کا صفایا کر دیا۔ یہوداہ میں ، اخاب کی بیٹی ملکہ بن گئی اور ڈیوڈ کے تمام وارثوں کو قتل کرنے کی کوشش کی ، لیکن وہ ناکام رہی۔ شریر بادشاہ حزقیاہ اور یوسیاہ جیسے چند اصلاح پسندوں کے علاوہ ، یہوداہ میں ، دونوں قوموں پر حکومت کرتے ہیں۔ اسرائیل کی مسلسل بت پرستی بالآخر خدا کا صبر ختم کر دیتی ہے ، اور وہ اسرائیلیوں کو فتح کرنے کے لیے اسوریوں کو ان کے خلاف لاتا ہے۔ بعد میں ، خدا بابل کے لوگوں کو یہوداہ کے خلاف ایک فیصلے کے طور پر لاتا ہے ، اور یروشلم تباہ ہو جاتا ہے۔

1 تاریخ – ایک نسب خدا کے لوگوں کو آدم سے لے کر بادشاہت کے سالوں تک کا پتہ لگاتا ہے ، جس میں ڈیوڈ کے خاندان پر توجہ دی جاتی ہے۔ باقی کتاب میں 1 اور 2 سموئیل جیسا مواد شامل ہے ، جس میں ڈیوڈ کی زندگی پر زور دیا گیا ہے۔

2 تواریخ – یہ کتاب یہوداہ میں داؤد کے خاندان پر زور دیتے ہوئے 1 اور 2 بادشاہوں کی طرح کے مواد پر محیط ہے۔ کتاب سلیمان کے تحت مندر کی تعمیر کے ساتھ شروع ہوتی ہے ، اور یہ بابلیوں کی طرف سے مندر کی تباہی کے ساتھ ختم ہوتی ہے ، ایک اعلان کے ساتھ ، آخری چند آیات میں ، کہ مندر دوبارہ تعمیر کیا جائے گا۔

عزرا – غیر ملکی سرزمین میں 70 سال کی قید کے بعد ، یہوداہ کے لوگوں کو دوبارہ تعمیر کے لیے اپنے وطن واپس جانے کی اجازت ہے۔ زیروبابل نامی داؤد کی اولاد نے کچھ پجاریوں کے ساتھ مل کر ہیکل کی تعمیر نو شروع کی۔ تعمیر نو کی سیاسی مخالفت تقریبا forces 15 سالوں سے تعمیرات کو روک رہی ہے۔ لیکن پھر کام جاری رہتا ہے ، جس کی حوصلہ افزائی دو نبیوں ، ہگئی اور زکریا نے کی۔ ہیکل کی تکمیل کے تقریبا 57 57 سال بعد ، عزرا یروشلم پہنچا ، اپنے ساتھ تقریبا 2،000 2000 لوگوں کو لے کر آیا جن میں پادری اور لاوی بھی شامل تھے۔ عزرا کو پتہ چلا کہ یہوداہ میں رہنے والے لوگ گناہ میں مبتلا ہو چکے ہیں ، اور وہ لوگوں کو توبہ اور خدا کے قانون کی طرف لوٹنے کی طرف بلاتا ہے۔

نحمیاہ – عزرا کے یروشلم میں پہنچنے کے تقریبا 14 14 سال بعد ، فارس میں بادشاہ کا پیالہ نحمیاہ کو معلوم ہوا کہ یروشلم کی دیواریں خراب حالت میں ہیں۔ نحمیاہ یروشلم کا سفر کرتا ہے اور شہر کی دیواروں کی تعمیر کی نگرانی کرتا ہے۔ اس کی مخالفت یہودیوں کے دشمنوں نے کی ہے ، جو کام کو مختلف حربوں سے ناکام بنانے کی کوشش کرتے ہیں ، لیکن دیوار خدا کی برکتوں کے ساتھ وقت پر ختم ہو جاتی ہے تاکہ عید کا جشن منایا جا سکے۔ عزرا قانون کی کتاب کو عوامی طور پر پڑھتا ہے ، اور یہوداہ کے لوگ خود کو اس پر عمل کرنے کے لیے دوبارہ سرشار کرتے ہیں۔ نہیمی کی کتاب۔

آہ اداسی سے شروع ہوتی ہے اور گانے اور جشن کے ساتھ ختم ہوتی ہے۔

ایسٹر – کچھ جلاوطن یہودیوں نے یروشلم واپس نہ آنے کا انتخاب کیا ہے اور اس کے بجائے فارس میں قیام کیا ہے۔ فارس کا بادشاہ ، ایکسیرکس اپنی نئی ملکہ کے طور پر ایک نوجوان خاتون کا انتخاب کرتا ہے جس کا نام ایسٹر ہے۔ ایسٹر ایک یہودی ہے ، لیکن وہ اپنے کزن Mordecai کے کہنے پر اپنی نسل کو خفیہ رکھتی ہے ، جس نے اس کی پرورش کی ہے۔ مملکت کا ایک اعلیٰ عہدیدار ، ہامان نامی شخص ، بادشاہی میں تمام یہودیوں کے خلاف نسل کشی کی سازش کرتا ہے ، اور اسے بادشاہ کی اجازت حاصل ہوتی ہے کہ وہ اپنا منصوبہ پورا کرے-نہ وہ اور نہ ہی بادشاہ یہ جانتے ہوئے کہ ملکہ یہودی ہے۔ خدائی ہدایت ، مکمل طور پر وقتی واقعات کی ایک سیریز کے ذریعے ، ہامان کو قتل کیا گیا ، موردیکائی کو عزت دی گئی اور یہودیوں کو بچایا گیا ، ملکہ ایسٹر اس سب میں اہم کردار ادا کر رہی ہیں۔

جاب – ایوب نامی ایک راستباز آدمی خوفناک سانحات کا شکار ہے جو اس کی دولت ، اس کے خاندان اور اس کی صحت کو چھین لیتا ہے۔ سب کچھ کھونے کے بعد بھی ایوب خدا پر لعنت نہیں کرتا۔ تین دوست ایوب کے ساتھ تعزیت کرنے آتے ہیں ، لیکن وہ بالآخر صورتحال کے بارے میں اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہیں ، اس خیال کو آگے بڑھاتے ہیں کہ خدا ایوب کو کسی خفیہ گناہ کی سزا دے رہا ہے۔ ایوب اپنی طرف سے کسی گناہ سے انکار کرتا ہے ، پھر بھی اس کے درد میں وہ خدا سے فریاد کرتا ہے – وہ خدا پر بھروسہ کرتا ہے ، لیکن وہ یہ بھی چاہتا ہے کہ خدا اپنی وضاحت کرے۔ آخر میں ، خدا اپنی عظمت ، حکمت اور طاقت کے ساتھ ایوب کو ظاہر کرتا ہے اور اسے غالب کرتا ہے۔ خدا ایوب کی قسمت ، صحت اور خاندان کو بحال کرتا ہے ، لیکن ایوب نے خدا کو کیوں تکلیف دی اس کا جواب کبھی نہیں ملتا۔

زبور – گانوں کے اس مجموعے میں خداوند کی حمد ، ضرورت مندوں کی فریاد ، عبادت کی پرستش ، نوحہ ، شکریہ ، پیشن گوئی ، اور انسانی جذبات کا مکمل حصہ شامل ہے۔ کچھ گانے مخصوص مواقع کے لیے لکھے گئے تھے ، جیسے مندر کا سفر یا نئے بادشاہ کی تاج پوشی۔

امثال – اخلاقی تعلیمات اور زندگی کے بارے میں عمومی مشاہدات کا مجموعہ ، یہ کتاب ان لوگوں کے لیے ہے جو حکمت کی تلاش میں ہیں۔ مضامین میں محبت ، جنس ، شادی ، پیسہ ، کام ، بچے ، غصہ ، جھگڑا ، خیالات اور الفاظ شامل ہیں۔

واعظ – ایک عقلمند بوڑھا آدمی جو اپنے آپ کو مبلغ کہتا ہے زندگی کے بارے میں فلسفہ کرتا ہے ، اس نے اپنے تجربات سے جو کچھ سیکھا ہے اس پر پلٹ کر دیکھا۔ مبلغ ، خدا سے الگ رہنے کے بعد ، مختلف مردہ راستوں کی بیکاریت کو بیان کرتا ہے۔ اس دنیا میں کوئی بھی چیز مطمئن نہیں ہوتی: دولت ، لذت ، علم یا کام۔ مساوات میں خدا کے بغیر ، سب باطل ہے۔

سلیمان کا گانا – ایک بادشاہ اور ایک عاجز لڑکی اپنی محبت کے ذریعے ایک دوسرے سے محبت اور عقیدت کا اظہار کرتی ہے ، جس کی وجہ سے شادی کی رات شادی کی خوشی اور تصدیق ہوتی ہے۔ یہ گانا دلہا اور اس کی دلہن کو ان کی شادی شدہ زندگی میں درپیش مشکلات میں سے کچھ کو دکھا رہا ہے ، جو ہمیشہ محبت کرنے والوں کی ایک دوسرے کے لیے تڑپ اور محبت کی لازوال طاقت کی طرف لوٹتا ہے۔

یسعیاہ – یسعیاہ کو یہوداہ میں نبی کہا جاتا ہے اور کئی بادشاہوں کو خدا کے پیغامات پہنچاتا ہے۔ خدا یہوداہ کے خلاف ان کی مذہبی منافقت کی وجہ سے فیصلے کا اعلان کرتا ہے۔ اس کے بعد نبی اسور ، بابل ، موآب ، شام اور ایتھوپیا سمیت دیگر اقوام کو انتباہ کے پیغامات دیتا ہے۔ یہوداہ میں اپنے لوگوں کے خلاف خدا کے تمام غصے کے لیے ، اس نے معجزانہ طور پر یروشلم کو اسوریوں کے حملے سے بچایا۔ یسعیاہ نے بابل کے ہاتھوں یہوداہ کے زوال کی پیش گوئی کی ہے ، لیکن وہ ان کی سرزمین کی بحالی کا بھی وعدہ کرتا ہے۔ یسعیاہ اس وعدہ کردہ مسیحا سے بہت آگے دیکھتا ہے ، جو ایک کنواری سے پیدا ہوگا ، اس کے لوگوں کے ذریعہ مسترد کیا جائے گا ، اور ان کے گناہوں کو برداشت کرنے کے عمل میں مارا جائے گا – پھر بھی مسیح ، خدا کا نیک بندہ ، یروشلم سے دنیا پر حکومت کرے گا امن اور خوشحالی کی بادشاہی میں

یرمیاہ – یرمیاہ ، جو یہوداہ پر بابلیوں کے حملے کے وقت میں رہتا ہے ، یہوداہ پر بابل کی فتح کی پیشن گوئی کرتا ہے ، یہ ایک پیغام ہے جو اسے یروشلم کے مغرور بادشاہوں اور جھوٹے نبیوں سے بہت زیادہ دکھ پہنچاتا ہے۔ خدا کے لوگوں کو مسلسل توبہ کرنے کے لیے پکارنا ، یرمیاہ کو باقاعدگی سے نظر انداز کیا جاتا ہے اور یہاں تک کہ وہ ستایا جاتا ہے۔ یرمیاہ کے ذریعے ، خدا وعدہ کرتا ہے کہ وہ ایک دن اسرائیل کے ساتھ ایک نیا عہد قائم کرے گا۔ نبی یروشلم کا زوال دیکھنے کے لیے زندہ ہے اور پیش گوئی کرتا ہے کہ بابل میں لوگوں کی قید 70 سال تک رہے گی۔

نوحہ – ایک طویل صوتی نظم میں ، یرمیاہ یہوداہ کی سرزمین کی تباہی پر روتا ہے۔ خدا کے لوگوں کی ملامت اور شرمندگی بہت زیادہ ہے ، اور سب کھویا ہوا لگتا ہے۔ پھر بھی خدا صرف اپنے نظم و ضبط میں ہے ، اور وہ باغی قوم کو مکمل طور پر تباہ نہ کرنے پر مہربان ہے خدا کے لوگ ابھی تک خدا کی شفقت دیکھیں گے۔

حزقی ایل-یہ پیشن گوئیوں کی ایک کتاب ہے جو بابل میں حزقی ایل ، ایک پادری سے بنے نبی کی لکھی ہوئی ہے۔ حزقی ایل یہوداہ کے خلاف خدا کے فیصلے کی وجہ سے نمٹتا ہے ، جو بت پرستی ہے اور یہوداہ نے خدا کے نام پر بدنامی کی ہے۔ حزقی ایل دیگر قوموں ، جیسے ادوم ، عمون ، مصر اور فلستیا کے خلاف اور صور کے شہر کے خلاف فیصلے کے بارے میں بھی لکھتا ہے۔ حزقی ایل پھر خدا کے لوگوں کی اپنی زمین پر معجزانہ بحالی ، ہیکل کی تعمیر نو اور زمین کی تمام قوموں پر خدا کی حکمرانی کا وعدہ کرتا ہے۔

ڈینیل – ایک نوجوان کی حیثیت سے ، ڈینیل کو بابل لے جایا گیا ، لیکن وہ اور تین دوست اس پر ثابت قدم رہے۔

رب کے احکامات ، اور خدا انہیں بابل کی سلطنت میں عزت اور اعلیٰ مقام سے نوازتا ہے۔ ان کے دشمن ہیں ، اگرچہ: دانیال کے تین دوست ایک بھٹی بھٹی میں اور ڈینیل کو شیروں کی ماند میں ڈال دیا گیا ہے ، لیکن خدا ہر معاملے میں ان کی جانوں کو محفوظ رکھتا ہے اور ان کو اور بھی عزت دیتا ہے۔ ڈینیل بابل کے خاتمے سے بچ گیا اور فارسی سلطنت کے زمانے میں نبوت جاری رکھتا ہے۔ دانیال کی پیشگوئیاں بہت دور رس ہیں ، بہت سی قوموں کے عروج و زوال اور خدا کے منتخب بادشاہ مسیح کی آنے والی حکمرانی کی درست پیش گوئی کر رہی ہیں۔

ہوشیا – ہوشیا کا مشن اسرائیل کو توبہ کی طرف بلانا ہے ، کیونکہ خدا ان کی بدعنوانی اور بت پرستی کے لیے ان کا فیصلہ کرنے کے لیے تیار ہے۔ خدا کے حکم پر ، ہوشیا نے ایک بیوی سے شادی کی جو اس کے ساتھ بے وفائی کرتی ہے ، اور پھر اسے اسے جسم فروشی سے چھڑانا ہوگا۔ یہ گھٹیا تجربہ اسرائیل کی روحانی زنا کی ایک مثال ہے اور یہ حقیقت ہے کہ ایک محبت کرنے والا خدا ان کو چھڑانے اور انہیں ان کی مناسب جگہ پر بحال کرنے کے لیے ان کا تعاقب کر رہا ہے۔

جوئیل – خشک سالی اور ٹڈیوں کے طاعون کے وقت یہوداہ میں جویل وزیر ، ایسے واقعات جو قوم پر خدا کے فیصلے کی علامت ہیں۔ جوئیل موجودہ فیصلے کو لوگوں کو مستقبل کی طرف اشارہ کرنے کے لیے استعمال کرتا ہے ، خداوند کے دن کے عالمی فیصلے ، اور وہ ہر ایک سے توبہ کی اپیل کرتا ہے۔ جوئیل کا آخری وعدہ یہ ہے کہ خداوند اپنے لوگوں کے ساتھ صیون میں رہائش پذیر ہو گا اور بحال شدہ زمین کو بڑی برکت دے گا۔

اموس – اموس کا آغاز دیگر مقامات کے علاوہ دمشق ، صور ، ادوم اور غزہ کے خلاف فیصلہ سنانے سے ہوتا ہے۔ نبی یہوداہ سے اسرائیل کا شمال کا سفر کرتا ہے تاکہ اس قوم کو خدا کے فیصلے سے خبردار کرے۔ وہ ان کے گناہوں کی فہرست بناتا ہے اور توبہ اور معافی کے لیے خدا کی دعوت کو بڑھاتا ہے۔ اسرائیل کی تباہی کے بعد ، خدا وعدہ کرتا ہے ، بحالی کا وقت آئے گا۔

عبدیاہ-اپنے بظاہر محفوظ ، چٹانوں سے جڑے گھروں سے ، ادومیوں نے یہوداہ کے زوال پر خوشی منائی تھی ، لیکن عبدیاہ خدا کا سنجیدہ پیغام لاتا ہے: ادوم بھی فتح ہو جائے گا ، اور وہ بھی بغیر علاج کے۔ خدا کے لوگ حتمی فاتح ہوں گے۔

یوناہ – یونس ، اسرائیل میں ایک نبی ، خدا کی طرف سے ہدایت کی گئی ہے کہ وہ اسور کے دارالحکومت نینوا جا کر اس کے خلاف نبوت کرے۔ یونس نے نافرمانی کی ، نینوا سے دور جانے کی کوشش کی ، لیکن خدا نے اسے سمندر میں روک لیا۔ یوناہ کو سمندر میں پھینک دیا گیا اور ایک بڑی مچھلی نے اسے نگل لیا۔ مچھلی کے پیٹ میں ، یونس توبہ کرتا ہے ، اور مچھلی اسے خشک زمین پر تھوک دیتی ہے۔ جب یونس نینوا میں نبوت کرتا ہے تو اسوری اپنے آپ کو خدا کے سامنے عاجز کرتے ہیں اور توبہ کرتے ہیں اور خدا ان پر فیصلہ نہیں کرتا۔ یونس ناراض ہے کہ خدا نے ان لوگوں کو معاف کر دیا ہے جن سے وہ نفرت کرتا ہے ، اور خدا اس کے ضدی نبی کی وجہ سے ہے۔

میکاہ – تین پیغامات کی ایک سیریز میں ، میکاہ نے یہوداہ اور اسرائیل دونوں کو خدا کا کلام سننے کے لیے بلایا۔ وہ دونوں بادشاہتوں پر آنے والے فیصلے کی پیشگوئی کرتا ہے اور خدا کی مبارک بادشاہی کی پیش گوئی کرتا ہے ، جس پر ایک بادشاہ کی حکومت ہوتی ہے جو بیت المقدس میں پیدا ہوگا۔ میکاہ اپنی کتاب کا اختتام اس وعدے کے ساتھ کرتا ہے کہ خدا کا غصہ ختم ہو جائے گا اور خدا کے لوگ بحال ہو جائیں گے۔

نہم – نحم کی پیشگوئی نینوا کی تباہی سے متعلق ہے۔ نہم اس کی وجوہات بتاتا ہے اور اس قوم پر خدا کے فیصلے کا وعدہ کرتا ہے جس نے ایک بار باقی دنیا کو دہشت زدہ کردیا تھا۔ اسرائیل کے خلاف خدا کے فیصلے کے برعکس ، نینوا کے خلاف فیصلے میں کوئی مہلت نہیں ہوگی ، اور بحالی کے بعد تباہی نہیں ہوگی۔

حبقوق – نبی خدا سے کسی ایسی چیز کے بارے میں سوال کرتا ہے جسے وہ نہیں سمجھ سکتا: یعنی ، خدا کس طرح بابل کے لوگوں کو خدا کے اپنے لوگوں ، یہوداہ کو سزا دینے کے لیے استعمال کر سکتا ہے۔ رب جواب دیتا ہے حبقوق کو اس کی حاکمیت اور وفاداری کی یاد دلاتے ہوئے اور یہ کہ ، اس دنیا میں ، راستباز ایمان سے زندہ رہے گا۔

صفانیا – صفنیاہ نے خداوند کے آنے والے دن کے بارے میں خبردار کیا ، ایک پیشگوئی جزوی طور پر بابل پر حملہ کرکے اور زیادہ دور سے ، وقت کے اختتام پر پوری ہوئی۔ یہوداہ کے علاوہ دیگر اقوام کو بھی آنے والے فیصلے سے خبردار کیا گیا ہے ، جن میں فلستیا ، موآب ، کوش اور اسور شامل ہیں۔ یروشلم کو توبہ کے لیے بلایا گیا ہے ، اور کتاب کا اختتام خدا کی طرف سے اپنے لوگوں کو احسان اور عظمت کے لیے بحال کرنے کے وعدے کے ساتھ ہے۔

ہاگائی – ہگئی زربابیل اور زکریا کے زمانے میں رہتا ہے اور تبلیغ کرتا ہے۔ مندر کی تعمیر نو شروع ہوچکی تھی ، لیکن یہودیوں کے دشمنوں کی مخالفت نے تقریبا 15 15 سالوں سے کام روک دیا ہے۔ ہگئی چار خطبات کی ایک سیریز کی تبلیغ کرتا ہے تاکہ لوگوں کو کام پر واپس آنے کی ترغیب دی جائے تاکہ مندر مکمل ہو سکے۔

زکریا – ہگائی اور زروبیل کے ہم عصر ، زکریا یروشلم کے لوگوں کو مندر کی تعمیر نو مکمل کرنے کی ترغیب دیتے ہیں ، یہ کام جو تقریبا 15 15 سال سے التوا کا شکار ہے۔ آٹھ نظارے خدا کے اپنے لوگوں کے لیے جاری منصوبے سے متعلق ہیں۔ اسرائیل کے دشمنوں پر فیصلے کا وعدہ کیا گیا ہے ، اس کے ساتھ ساتھ خدا کے برگزیدہ لوگوں پر بھی۔ مسیحا کے آنے ، اس کی تکلیف اور اس کی حتمی فتح والی شان کی پیش گوئی کرتے ہوئے کئی مسیحی پیشگوئیاں شامل ہیں۔

ملاکی-جلاوطنی کے بعد اسرائیل کی خدمت کرتے ہوئے ، ملاکی خدا کے لوگوں کو توبہ کی طرف بلاتا ہے۔ نبی طلاق کے گناہوں کی مذمت کرتا ہے ، ناپاک قربانیاں لاتا ہے ، دسواں حصہ روکتا ہے اور خدا کے نام کو بدنام کرتا ہے۔ کتاب ، اور پرانا عہد نامہ ، خداوند کے دن کی وضاحت اور اس وعدہ کے ساتھ ختم ہوتا ہے کہ ایلیا اس خوفناک دن سے پہلے آئے گا

:نیا عہد نامہ

میتھیو – یسوع مسیح کی وزارت کو اس نقطہ نظر سے پیش کیا گیا ہے کہ یسوع داؤد کا بیٹا ہے اور اس طرح اسرائیل کے تخت سے حکومت کرنے کا صحیح بادشاہ ہے۔ یسوع اپنے لوگوں کو بادشاہت پیش کرتا ہے ، لیکن اسرائیل اسے اپنے بادشاہ کے طور پر مسترد کرتا ہے اور اسے مصلوب کرتا ہے۔ یسوع دوبارہ اُٹھا اور اپنے شاگردوں کو پوری دنیا میں اپنی تعلیم کا اعلان کرنے کے لیے بھیجا۔

مارک – یسوع مسیح کی وزارت کو اس نقطہ نظر سے پیش کیا گیا ہے کہ یسوع خدا کا نیک بندہ ہے۔ یسوع باپ کی مرضی کی تعمیل کرتا ہے اور وہ سب کچھ پورا کرتا ہے جو اسے کرنے کے لیے بھیجا گیا تھا ، بشمول گنہگاروں کے لیے مرنا اور مردوں میں سے جی اٹھنا۔

لوقا – یسوع مسیح کی وزارت کو اس نقطہ نظر سے پیش کیا گیا ہے کہ یسوع انسان کا بیٹا ہے جو پوری دنیا کو بچانے آیا ہے۔ یسوع خدا کی محبت کو ہر طبقے کے لوگوں کو دکھاتا ہے ، قطع نظر نسل یا جنس کے۔ اسے ناحق دھوکہ دیا گیا ، گرفتار کیا گیا اور قتل کیا گیا ، لیکن وہ دوبارہ جی اٹھا۔

جان – یسوع مسیح کی وزارت کو اس نقطہ نظر سے پیش کیا گیا ہے کہ یسوع خدا کا بیٹا ہے۔ یسوع اپنی فطرت اور کام کی لمبائی اور ایمان کی ضرورت پر بات کرتا ہے ، اور وہ ثابت کرتا ہے کہ وہ عوامی معجزات کی ایک سیریز کے ذریعے خدا کا بیٹا ہے۔ وہ سولی پر چڑھایا گیا اور دوبارہ جی اٹھا۔

اعمال – مسیح کی زندگی کا یہ سلسلہ یسوع کے چڑھنے کے بعد رسولوں کی وزارت کی پیروی کرتا ہے۔ روح القدس یسوع کے پیروکاروں کو بھرنے اور بااختیار بنانے کے لیے پہنچتا ہے ، جو بڑھتے ہوئے ظلم و ستم کے درمیان انجیل کی تبلیغ شروع کرتے ہیں۔ پال ، جو کہ عیسائیوں کا سابقہ ​​دشمن ہے ، مسیح کے ذریعے تبدیل ہو کر اسے رسول کہتا ہے۔ چرچ یروشلم سے شروع ہوتا ہے ، سامریہ تک پھیلتا ہے ، اور رومی دنیا میں پھیلتا ہے۔

رومیوں – یہ مذہبی مقالہ ، جو پولس نے اپنے ایک مشنری سفر پر لکھا تھا ، خدا کی راستبازی کا جائزہ لیتا ہے اور خدا کس طرح مجرم گنہگاروں کو یسوع مسیح کی قربانی کی بنیاد پر راستباز قرار دے سکتا ہے۔ ایمان سے راستباز ہونے کے بعد ، مومن دنیا کے سامنے تقدس میں رہتے ہیں۔

1 کرنتھیوں – کرنتھس میں کلیسیا مسائل سے گھرا ہوا ہے ، اور پولس رسول ان کو خدا کی ہدایات دینے کے لیے لکھتا ہے کہ مختلف مسائل سے کیسے نمٹا جائے ، بشمول چرچ میں گناہ اور تقسیم ، شادی ، بت پرستی ، روحانی تحائف ، مستقبل کی قیامت ، اور عوامی عبادت کا انتظام

2 کرنتھیوں – کرنتھس کے چرچ میں زیادہ تر مسائل کو حل کیا گیا ہے ، اور پال یہ خط ان کی حوصلہ افزائی کے لیے لکھتا ہے ، جو یہودی عیسائیوں کے لیے جمع کیے جانے والے پیار کے تحفے کی وضاحت کرتا ہے ، اور ناقدین کے خلاف اپنی رسالت کا دفاع کرتا ہے جو بول رہے ہیں۔ اس کے خلاف باہر

گلیٹین – جھوٹے اساتذہ نے گلیٹیا کے گرجا گھروں میں گھس گئے ہیں ، جھوٹے طریقے سے مشورہ دیتے ہیں کہ قانون کے کام (خاص طور پر ختنہ) کو مسیح پر ایمان میں شامل کرنا ضروری ہے تاکہ نجات حقیقی ہو۔ بغیر کسی غیر یقینی شرائط کے ، پول قانون اور فضل کے مرکب کی مذمت کرتا ہے ، یہ ظاہر کرتا ہے کہ نجات اور تقدیس سب فضل ہیں۔ مسیح کی نجات نے ہمیں آزاد کیا ہے۔ ہم روح کے کام پر بھروسہ کرتے ہیں ، اپنے کام پر نہیں۔

افسیوں – نجات مسیح پر ایمان کے ذریعے فضل سے آتی ہے ، نہ کہ ہمارے اپنے کاموں سے۔ یہودی اور یہودیوں کو یسوع جو زندگی دیتا ہے ، اس کے نتیجے میں اس دنیا میں ایک نیا دل اور نئی سیر ہوتی ہے۔ چرچ مسیح کا جسم ہے ، اور شادی مسیح اور چرچ کی تصویر ہے۔ خدا نے روحانی جنگ لڑنے کے لیے روحانی کوچ فراہم کیا ہے۔

فلپین – رومن جیل سے یہ خط لکھتے ہوئے ، پولس نے فلپی کے چرچ کا شکریہ ادا کیا جس نے انہیں بھیجا تھا۔ مسیح کی خوشخبری مشکلات کے باوجود دنیا میں آگے بڑھ رہی ہے اور عیسائی اس میں خوش ہو سکتے ہیں۔ ہم پر زور دیا جاتا ہے کہ ہم اپنے آپ کو عاجز کریں جیسا کہ مسیح نے کیا تھا ، متحد ہو جائیں اور ہر چیز میں رب کو خوش کرنے کے مقصد کی طرف بڑھیں۔

کولسیوں – جھوٹے اساتذہ کے دعوے کے باوجود ، یسوع مسیح ہر چیز کا نجات دہندہ ، رب اور خالق ہے۔ اس میں ، تمام مومن زندہ اور مکمل بنائے گئے ہیں۔ انہیں اپنے آپ کو انسانی ساختہ ضابطوں یا عہد نامہ قدیم کے حکم کے سامنے پیش کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ مسیح میں ہماری نئی زندگی میاں بیوی ، والدین ، ​​بچوں ، آقاؤں اور نوکروں کے ساتھ ہمارے تعلقات کو متاثر کرے گی۔

1 تھیسالونیکیوں – پولس نے تھیسالونیکا میں چرچ کے آغاز کا جائزہ لیا ، اور وہ ان کے ثابت قدم ایمان پر ان کی تعریف کرتا ہے۔ مومنوں کو خالص زندگی گزارنے اور اس امید کو برقرار رکھنے کی ترغیب دی جاتی ہے کہ یسوع واپس آئیں گے۔ جب مسیح دوبارہ آئے گا ، وہ ان مومنوں کو زندہ کرے گا جو مر چکے ہیں اور ان لوگوں کو جوش میں لائیں گے جو اب بھی اس کے ساتھ ہمیشہ رہیں گے۔ رب کا دن آنے والا ہے ، جس کے نتیجے میں اس دنیا کا فیصلہ ہوگا۔

2 تھیسالونیکی – تھیسالونیکا کا چرچ ظلم و ستم برداشت کر رہا ہے ، اور کچھ مومن حیران ہیں کہ کیا خداوند کا دن پہلے ہی آچکا ہے۔ پولس نے انہیں یقین دلایا کہ جو کچھ وہ محسوس کر رہے ہیں وہ خدا کا فیصلہ نہیں ہے۔ اس سے پہلے کہ وہ خوفناک دن آئے ، دنیا بھر میں بغاوت ہونی چاہیے ، روکنے والے کو ہٹانا چاہیے ، اور لاقانونیت کے آدمی کی طاقت میں اضافہ ہونا چاہیے۔ لیکن خدا اپنے بچوں کی حفاظت کرے گا۔ اس وقت تک جب مسیح واپس آئے گا ، صحیح کام کرتے رہیں۔

1 تیمتھیس – افیسس میں چرچ کا پادری ، تیمتھیس ، پولس کے اس خط کا وصول کنندہ ہے۔ ایک پادری روحانی طور پر کوالیفائیڈ ہونا چاہیے۔

جھوٹے نظریے سے بچو ، دعا کرو ، چرچ میں رہنے والوں کی دیکھ بھال کرو ، دوسرے رہنماؤں کی تربیت کرو ، اور سب سے بڑھ کر سچائی کی تبلیغ کرو۔

2 تیمتھیس – اپنی زندگی کے اختتام پر اس بہت ہی ذاتی خط میں ، پولس تیمتھیس کی حوصلہ افزائی کرتا ہے کہ وہ ایمان کو مضبوطی سے تھامے رکھے ، جو واقعی اہم ہے اس پر توجہ دے ، خطرناک اوقات میں ثابت قدم رہے اور خدا کے کلام کی تبلیغ کرے۔

ٹائٹس – کریٹس جزیرے کے گرجا گھروں کا نگران ، ٹائٹس کا کام وہاں کے گرجا گھروں میں بزرگوں کو مقرر کرنا ہے ، اس بات کو یقینی بناتے ہوئے کہ مرد روحانی طور پر اہل ہیں۔ اسے جھوٹے اساتذہ سے ہوشیار رہنا چاہیے ، خلفشار سے بچنا چاہیے ، مسیحی زندگی کا نمونہ بنانا چاہیے ، اور تمام مومنین کو نیک کام کرنے کی تلقین کرنا چاہیے۔

فلیمون – کولیسے میں ایک مومن ، فیلمون کو لکھے گئے اس مختصر خط میں ، پولس رسول نے اس پر زور دیا کہ وہ مسیح سے محبت کا اظہار کرے اور بھاگنے والے ، چوری کرنے والے غلام سے صلح کرلے۔ رومن قانون کے تحت ، غلام کو سخت سزا کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے ، لیکن پال مسیح کی خاطر فضل کی درخواست کرتا ہے۔ فلیمون کو اپنے غلام کو گھر میں واپس خوش آمدید کہنا چاہیے ، نہ کہ اب غلام کے طور پر بلکہ مسیح میں ایک پیارے بھائی کے طور پر۔

عبرانی – چرچ کے یہودی ارکان ہیں جنہیں یہودی قانون کی طرف لوٹنے کا لالچ دیا جاتا ہے۔ اس خط کے مصنف نے ان پر زور دیا ہے کہ وہ پیچھے مڑ کر نہ دیکھیں بلکہ مکمل روحانی پختگی کی طرف بڑھیں ، ایمان سے۔ یسوع مسیح فرشتوں سے بہتر اور موسیٰ سے بہتر ہے ، اور اس نے پرانے عہد نامے کی کسی بھی چیز سے بہتر قربانی ، بہتر پادری اور بہتر عہد فراہم کیا ہے۔ مصر سے نکلنے کے بعد ، ہمیں وعدہ شدہ سرزمین میں داخل ہونا چاہیے ، بیابان میں بے مقصد گھومنا جاری نہیں رکھنا چاہیے۔

جیمز – اس انتہائی عملی کتاب میں ، جیمز ظاہر کرتا ہے کہ ایمان کس طرح زندہ رہتا ہے۔ سچ ہے ، ایمان کو بچانے سے ہماری نماز کی زندگی ، ہمارے الفاظ ، آزمائشوں کے جواب اور دوسروں کے ساتھ ہمارے سلوک پر اثر پڑے گا۔

1 پیٹر – پیٹر رسول ایشیا مائنر میں ظلم و ستم کے تحت مومنوں کو لکھتا ہے ، انہیں “خدا کے منتخب کردہ ، جلا وطن جلا وطن” کہہ کر مخاطب کرتا ہے (1 پیٹر 1: 1) وہ انہیں خدا کے فضل کی یاد دلاتا ہے ، انہیں ان کے آسمانی گھر کی یقین دہانی کراتا ہے ، انہیں پاکیزگی کا مظاہرہ کرنا سکھاتا ہے ، ازدواجی تعلقات کی ہدایات دیتا ہے ، اور ان کی حوصلہ افزائی کرتا ہے جب وہ مصائب کا سامنا کرتے ہیں۔

2 پیٹر – اس کی موت کے آنے کے ساتھ ، پیٹر گرجا گھروں کو لکھتا ہے ، ان کو نصیحت کرتا ہے کہ وہ خدا کے کلام پر عمل کریں ، جھوٹے اساتذہ کو پہچانیں اور ان سے بچیں ، اور جب وہ مسیح کے دوسرے آنے کے منتظر ہیں تو پاکیزگی میں رہیں۔

1 جان – خدا روشنی ، محبت اور سچائی ہے۔ جو لوگ واقعی مسیح سے تعلق رکھتے ہیں وہ اس کے چھڑائے ہوئے کے ساتھ رفاقت کی تلاش کریں گے۔ روشنی میں چلنا ، اندھیرے میں نہیں گناہ کا اعتراف خدا کے کلام کی اطاعت خدا سے محبت ان کی زندگی میں گناہ کے کم ہوتے ہوئے نمونے کا تجربہ دوسرے مسیحیوں کے لیے محبت کا مظاہرہ اور ان کی مسیحی واک میں فتح کا تجربہ کریں۔

2 جان – مسیحی زندگی سچ اور محبت کا توازن ہے۔ ہم محبت کے نام پر سچائی کو نہیں چھوڑ سکتے۔ نہ ہی ہم محبت کو ترک کر سکتے ہیں کیونکہ سچ کو برقرار رکھنے کے غلط خیال کی وجہ سے۔

3 جان – دو آدمی متضاد ہیں: گاؤس ، جو مہمان نوازی کے ذریعے سچائی اور محبت سے وابستگی ظاہر کرتا ہے۔ اور دیوٹریفس ، جو مہمان نوازی کے فقدان کے ذریعے اپنی بدنیتی اور فخر کو ظاہر کرتا ہے۔

یہود – انجیل کا پیغام تبدیل نہیں ہوگا۔ لیکن ایسے لوگ ہیں جو پیغام کو بگاڑنے کی کوشش کرتے ہیں اور اپنے آپ کو فائدہ پہنچانے اور لوگوں کو گمراہ کرنے کے لیے جھوٹے عقائد سکھاتے ہیں۔ ان لوگوں کو سچائی میں مزاحمت کرنی چاہیے۔

وحی – یسوع چرچ کا رب ہے ، اور وہ مومنوں کے ہر مقامی ادارے کی حالت جانتا ہے۔ اختتامی اوقات بدی میں اضافے ، دجال کی ایک عالمی حکومت کے عروج اور زمین پر خدا کے لوگوں کے خلاف شیطان کے قہر سے نشان زد ہوں گے۔ خدا اپنے غضب کو ایک باغی اور پشیمان دنیا پر ایسے فیصلوں کے سلسلے میں ڈالتا ہے جو شدت میں مسلسل اضافہ کرتے ہیں۔ آخر میں ، خدا کا برہ آسمان کی فوجوں کے ساتھ زمین پر لوٹتا ہے ، اس کے خلاف صف آرا ہونے والی بری قوتوں کو شکست دیتا ہے اور اس کی امن کی بادشاہی قائم کرتا ہے۔ شیطان ، دجال ، اور ہر دور کے شریر آگ کی جھیل میں ڈالے جاتے ہیں ، جبکہ مسیح کے پیروکار ایک نئے آسمان اور نئی زمین کے وارث ہوتے ہیں۔

Spread the love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •