Biblical Questions Answers

you can ask questions and receive answers from other members of the community.

Who was Amy Carmichael? ایمی کارمائیکل کون تھی

Amy Carmichael was a missionary to India in the first half of the twentieth century. She is best known today for her work among at-risk Indian children, founding the Dohnavur Fellowship, and her many influential writings.

Amy Carmichael was born in Millisle, County Down, Ireland, in 1867. Her churchgoing family ensured that young Amy was brought up knowing the Lord. In her teens, Amy developed a burden for the Shawlies in Belfast, poor mill girls who wore shawls instead of the more expensive hats. She started a Bible class for them, and the work grew, eventually needing a building to hold 500 people. Amy continued to work with the Shawlies in Belfast until she moved on to a similar work in Manchester in 1889.

Amy Carmichael began attending Keswick Convention meetings, where she heard the likes of D.L. Moody and Hudson Taylor, founder of the China Inland Mission. After hearing Taylor, Amy knew that God was calling her to foreign missions. In 1887, Amy Carmichael travelled to Japan, but she had to return home fifteen months later, due to illness. After a time of recovery and applying to a new mission board, Amy arrived in Bangalore, India, in 1895. At 28 years old, she was at the beginning of a groundbreaking and consequential missionary career. She never took a furlough and never returned home to Ireland.

Amy Carmichael settled in southern India where she served for a time with a missionary, Thomas Walker, and his wife. She applied herself to learning the Tamil language and the Indian customs and caste system. From the beginning, Amy bucked traditional missionary protocol by refusing to wear European clothing or to sleep in a bed, choosing instead to wear saris and sleep on a mat on the ground, like the Indian village women to whom she ministered.

In March 1901 a little girl named Preena (“Pearl-Eyes”) came to Amy. Preena was 7 years old and had just escaped from a nearby Hindu temple, where she had been held against her will. The Hindu temple system at that time had temple prostitutes, and Preena had been sold to the temple to be trained in prostitution. She had tried to escape twice before but was caught both times. As a punishment for her attempted escapes, Preena was beaten, and her hands were branded with hot irons.

On her third attempt to escape her misery, Preena ended up at the door of Amy Carmichael. It was a divinely appointed meeting, and Amy saw it as such. The young missionary determined to save Preena despite the protests of the local Hindu temple. Eventually, Amy was allowed to keep Preena. And so Amy Carmichael found what was to be her life’s work. For the next fifty years, she gave herself to saving unwanted, abandoned, and abused girls like Preena and the babies that were born to the temple prostitutes.

The Walkers helped Amy find a place where she could care for the girls who were coming for help. Amy’s new place of ministry was Dohnavur, situated in Tamil Nadu, thirty miles from the southern tip of India. Thus began the Dohnavur Fellowship. The children kept coming, and they called Amy “Amma,” the Tamil word for “mother.”

Amy Carmichael lived by the motto “Love to live, live to love.” She made sure that Dohnavur was a safe place for the children to learn about the love of Jesus. It was a happy place full of singing and learning and prayer. The children dressed in brightly colored clothing as they participated in chores and tended to their lessons.

Amy Carmichael insisted on telling the truth to people back home about work on the mission field, resisting the temptation to whitewash the facts or romanticize her occupation. Her unvarnished presentation of truth took form in her book Things As They Are: Mission Work in Southern India, published in 1905. Many back in England were appalled by her frankness concerning the conditions she faced and by her criticism of current missionary efforts. Some pushed to have Amy recalled from the mission field. Fortunately for the children of south India, Amma remained.

Amy Carmichael loved and respected Indian culture, insofar as it did not conflict with biblical principles. All members of the Dohnavur Fellowship wore Indian, not European dress, and the children were given Indian names. Amy often traveled long distances to rescue even one child from suffering. In 1904, Amma had 17 girls under her care. By 1913, the Dohnavur Fellowship was home to 130. In 1918, the family expanded even more, adding a home for young boys, most of whom were children of temple prostitutes.

In Amy Carmichael’s lifetime, the Dohnavur Fellowship helped approximately 2,000 children. The facilities grew to include nurseries, school buildings, boys’ and girls’ housing, a House of Prayer, and a hospital. Amy had a conviction against asking people for money, preferring to rely on prayer: “If we are about our Father’s business, He will take care of ours. There is no want in the fear of the Lord, and it needeth not to seek help” (Amy Carmichael, Nor Scrip, p. 92). Never did th

e Dohnavur Fellowship put out pleas for finances. In every circumstance, even with so many mouths to feed, the Lord always provided.

The ministry of Amy Carmichael, with her hundreds of children, illustrates the truth of Jesus’ words: “Truly I tell you, . . . no one who has left home or wife or brothers or sisters or parents or children for the sake of the kingdom of God will fail to receive many times as much in this age, and in the age to come eternal life” (Luke 18:29–30).

In 1932, Amy Carmichael was badly injured in a fall. Her injuries left her bedridden for almost 20 years, until her death. From her room, Amma continued to minister to the Dohnavur family, writing copiously and receiving many visitors. Amy Carmichael died in 1951 at the age of 83. She is buried at Dohnavur Fellowship; in accordance with Amy’s wishes, a simple birdbath marks her grave.

Today, the Dohnavur Fellowship is still in operation and still fulfilling Amy Carmichael’s vision to help needy children. The property covers over 400 acres, has over fifteen nurseries, and can house approximately 500 children at once.

Amy Carmichael wrote 35 books, including histories, biographies, and books of poetry. She was as eloquent as she was prolific. Besides Things As They Are, her books include Gold Cord, Raj: Brigand Chief, Lotus Buds, Toward Jerusalem, and the classic devotional If. Amy’s writings are full of the themes of commitment, surrender, love, and the deeper spiritual life. Here are some quotes from Amy Carmichael:

“If there be any reserve in my giving to Him who so loved that He gave His Dearest for me, then I know nothing of Calvary love” (If, p. 48).

“If I am content to heal a hurt slightly, saying Peace, peace, where there is no peace; if I forget the poignant word ‘Let love be without dissimulation’ and blunt the edge of truth, speaking not right things but smooth things, then I know nothing of Calvary love” (If, p. 25).

“If I covet any place on earth but the dust at the foot of the Cross, then I know nothing of Calvary love” (If, p. 68).

“Prayer is like a child who knows the way to his Father’s house and goes straight there . . . . Sometimes there are hindrances, and then an old story comes to mind: When he was yet a great way off, his father saw him, and had compassion” (Gold Cord, p. 358).

“To say that evil is rapidly disappearing does not make it disappear. But it charms the devil, who is never so pleased as when he and his doings are underrated or ignored” (Gold Cord, p. 29).

“We cannot love each other too much, for He said ‘Love one another as I have loved you.’ We cannot set the standard too high, for it is not ours to move about as we will: it is our Lord’s, and He has set it high” (Kohila, p. 46).

“Prayer is the core of our day. Take prayer out, and the day would collapse, would be pithless, a straw blown in the wind.”

“Ours should be the love that asks not ‘How little’ but ‘How much’; the love that pours out its all and revels in the joy of having something to pour on the feet of its beloved; love that laughs at limits—rather, does not see them, would not heed them if it did” (God’s Missionary p. 34).

“The amazing thing is that everyone who reads the Bible has the same joyful thing to say about it. In every land, in every language, it is the same tale: where that Book is read, not with the eyes only, but with the mind and heart, the life is changed. Sorrowful people are comforted, sinful people are transformed, peoples who were in the dark walk in the light. Is it not wonderful to think that this Book, which is such a mighty power if it gets a chance to work in an honest heart, is in our hands today?” (Thou Givest . . . They Gather, p. 7).

ایمی کارمائیکل بیسویں صدی کے پہلے نصف میں ہندوستان میں ایک مشنری تھیں۔ وہ آج خطرے سے دوچار ہندوستانی بچوں کے درمیان اپنے کام، ڈوہناور فیلوشپ کی بنیاد رکھنے، اور اپنی بہت سی بااثر تحریروں کے لیے مشہور ہیں۔

ایمی کارمائیکل 1867 میں آئرلینڈ کے کاؤنٹی ڈاون کے ملیسلے میں پیدا ہوئیں۔ اس کے چرچ جانے والے خاندان نے اس بات کو یقینی بنایا کہ نوجوان ایمی کی پرورش خداوند کو جانتے ہوئے ہوئی۔ اپنی نوعمری میں، ایمی نے بیلفاسٹ میں شالیوں کے لیے ایک بوجھ تیار کیا، غریب مل لڑکیاں جو زیادہ مہنگی ٹوپیوں کے بجائے شال پہنتی تھیں۔ اس نے ان کے لیے بائبل کی ایک کلاس شروع کی، اور کام بڑھتا گیا، آخر کار 500 لوگوں کو رکھنے کے لیے ایک عمارت کی ضرورت پڑی۔ ایمی نے بیلفاسٹ میں شالیز کے ساتھ کام جاری رکھا یہاں تک کہ وہ 1889 میں مانچسٹر میں اسی طرح کے کام پر چلی گئیں۔

ایمی کارمائیکل نے کیسوک کنونشن کے اجلاسوں میں شرکت کرنا شروع کی، جہاں اس نے ڈی ایل کی پسندوں کو سنا۔ موڈی اور ہڈسن ٹیلر، چائنا ان لینڈ مشن کے بانی۔ ٹیلر کی بات سننے کے بعد، ایمی جان گئی کہ خدا اسے غیر ملکی مشنوں پر بلا رہا ہے۔ 1887 میں ایمی کارمائیکل نے جاپان کا سفر کیا لیکن بیماری کی وجہ سے انہیں پندرہ ماہ بعد وطن واپس آنا پڑا۔ صحت یاب ہونے اور نئے مشن بورڈ کے لیے درخواست دینے کے ایک وقت کے بعد، ایمی 1895 میں بنگلور، انڈیا پہنچی۔ 28 سال کی عمر میں، وہ ایک شاندار اور نتیجہ خیز مشنری کیریئر کے آغاز پر تھی۔ اس نے کبھی فرلو نہیں لیا اور نہ ہی کبھی آئرلینڈ اپنے گھر لوٹی۔

ایمی کارمائیکل جنوبی ہندوستان میں آباد ہوئیں جہاں انہوں نے ایک مشنری، تھامس واکر اور ان کی اہلیہ کے ساتھ کچھ عرصہ خدمت کی۔ اس نے خود کو تامل زبان اور ہندوستانی رسم و رواج اور ذات پات کے نظام کو سیکھنے کے لیے لگایا۔ شروع سے ہی، ایمی نے روایتی مشنری پروٹوکول کو یورپی لباس پہننے یا بستر پر سونے سے انکار کرتے ہوئے، ساڑھی پہننے اور زمین پر چٹائی پر سونے کے بجائے، ہندوستانی گاؤں کی خواتین کی طرح، جن کی وہ خدمت کرتی تھیں۔

مارچ 1901 میں پرینا (“پرل آئیز”) نامی ایک چھوٹی لڑکی ایمی کے پاس آئی۔ پرینا کی عمر 7 سال تھی اور وہ صرف ایک قریبی ہندو مندر سے فرار ہوئی تھی، جہاں اسے اس کی مرضی کے خلاف رکھا گیا تھا۔ اس وقت کے ہندو مندر کے نظام میں مندر کی طوائفیں تھیں، اور پرینا کو جسم فروشی کی تربیت حاصل کرنے کے لیے مندر میں فروخت کر دیا گیا تھا۔ اس نے پہلے بھی دو بار فرار ہونے کی کوشش کی لیکن دونوں بار پکڑی گئی۔ اس کے فرار کی کوشش کی سزا کے طور پر، پرینا کو مارا پیٹا گیا، اور اس کے ہاتھ گرم استری سے داغے گئے۔

اپنی مصیبت سے بچنے کی تیسری کوشش پر، پرینا ایمی کارمائیکل کے دروازے پر پہنچ گئی۔ یہ ایک خدائی مقرر کردہ میٹنگ تھی، اور امی نے اسے ایسے ہی دیکھا۔ نوجوان مشنری نے مقامی ہندو مندر کے احتجاج کے باوجود پرینا کو بچانے کا عزم کیا۔ بالآخر امی کو پرینا کو رکھنے کی اجازت مل گئی۔ اور یوں ایمی کارمائیکل نے پایا کہ اس کی زندگی کا کام کیا ہونا تھا۔ اگلے پچاس سالوں تک، اس نے پرینا جیسی ناپسندیدہ، لاوارث اور زیادتی کا شکار لڑکیوں اور مندر کی طوائفوں کے ہاں پیدا ہونے والے بچوں کو بچانے کے لیے خود کو دے دیا۔

واکرز نے ایمی کو ایک ایسی جگہ تلاش کرنے میں مدد کی جہاں وہ مدد کے لیے آنے والی لڑکیوں کی دیکھ بھال کر سکیں۔ ایمی کی وزارت کا نیا مقام ڈوہناور تھا جو ہندوستان کے جنوبی سرے سے تیس میل کے فاصلے پر تامل ناڈو میں واقع تھا۔ اس طرح دوہناور فیلوشپ کا آغاز ہوا۔ بچے آتے جاتے رہے، اور انہوں نے امی کو “امّا” کہا، جو “ماں” کے لیے تامل لفظ ہے۔

ایمی کارمائیکل “جینے سے پیار کریں، پیار سے جیو” کے نعرے کے مطابق زندگی گزاریں۔ اس نے اس بات کو یقینی بنایا کہ دوہناور بچوں کے لیے یسوع کی محبت کے بارے میں جاننے کے لیے ایک محفوظ جگہ ہے۔ یہ گانا اور سیکھنے اور دعا سے بھرا ہوا ایک خوشگوار مقام تھا۔ بچے چمکدار رنگ کے لباس میں ملبوس تھے جب وہ کام میں حصہ لیتے تھے اور اپنے اسباق کی طرف مائل ہوتے تھے۔

ایمی کارمائیکل نے مشن کے میدان میں کام کے بارے میں گھر واپس لوگوں کو سچ بتانے پر اصرار کیا، حقائق کو سفید کرنے یا اپنے پیشے کو رومانوی بنانے کے لالچ کی مزاحمت کی۔ اس کی سچائی کی بے ساختہ پیش کش اس کی کتاب Things As they Are: Mission Work in Southern India، جو 1905 میں شائع ہوئی، میں سامنے آئی۔ انگلینڈ میں بہت سے لوگ اس کی بے تکلفی سے ان حالات کے بارے میں حیران رہ گئے جن کا اسے سامنا کرنا پڑا اور موجودہ مشنری کوششوں پر اس کی تنقید سے۔ کچھ لوگوں نے ایمی کو مشن کے میدان سے واپس بلانے پر زور دیا۔ خوش قسمتی سے جنوبی ہندوستان کے بچوں کے لیے اماں ہی رہیں۔

ایمی کارمائیکل ہندوستانی ثقافت سے محبت اور احترام کرتی تھی، جہاں تک یہ بائبل کے اصولوں سے متصادم نہیں تھی۔ ڈوہناور فیلوشپ کے تمام ممبران ہندوستانی پہنتے تھے، یورپی لباس نہیں، اور بچوں کے نام ہندوستانی رکھے گئے تھے۔ امی اکثر ایک بچے کو بھی تکلیف سے بچانے کے لیے طویل سفر کرتی تھیں۔ 1904 میں اماں کی نگہداشت میں 17 لڑکیاں تھیں۔ 1913 تک، ڈوہناور فیلوشپ میں 130 افراد شامل تھے۔ 1918 میں، خاندان میں اور بھی اضافہ ہوا، جس میں نوجوان لڑکوں کے لیے ایک گھر کا اضافہ ہوا، جن میں سے زیادہ تر مندر کی طوائفوں کے بچے تھے۔

ایمی کارمائیکل کی زندگی میں، ڈوہناور فیلوشپ نے تقریباً 2,000 بچوں کی مدد کی۔ ان سہولیات میں نرسری، اسکول کی عمارتیں، لڑکوں اور لڑکیوں کی رہائش، نماز کا گھر، اور ایک اسپتال شامل ہو گیا۔ ایمی لوگوں سے پیسے مانگنے کے خلاف یقین رکھتی تھی، اور دعا پر انحصار کرنے کو ترجیح دیتی تھی: “اگر ہم اپنے والد کے کاروبار کے بارے میں ہیں، تو وہ ہمارا خیال رکھیں گے۔ خُداوند کے خوف میں کوئی ضرورت نہیں ہے، اور اسے مدد لینے کی ضرورت نہیں ہے” (ایمی کارمائیکل، نور سکریپ، صفحہ 92)۔ کبھی نہیں کیا

ای ڈوہناور فیلوشپ نے مالی معاملات کے لیے درخواستیں پیش کیں۔ ہر حال میں، کھانے کے لیے اتنے منہ سے بھی، رب نے ہمیشہ مہیا کیا۔

ایمی کارمائیکل کی وزارت، اپنے سینکڑوں بچوں کے ساتھ، یسوع کے الفاظ کی سچائی کو واضح کرتی ہے: ”میں تم سے سچ کہتی ہوں، . . . کوئی بھی جس نے خدا کی بادشاہی کی خاطر گھر یا بیوی یا بھائی یا بہن یا ماں باپ یا بچوں کو چھوڑا ہے وہ اس زمانے میں اور آنے والے زمانے میں ابدی زندگی حاصل کرنے سے کئی گنا زیادہ حاصل کرنے میں ناکام رہے گا‘‘ (لوقا 18:29۔ -30)۔

1932 میں ایمی کارمائیکل گرنے سے بری طرح زخمی ہو گئیں۔ اس کی چوٹوں نے اس کی موت تک اسے تقریباً 20 سال تک بستر پر چھوڑ دیا۔ اپنے کمرے سے، امّاں دوہناور خاندان کی خدمت کرتی رہیں، بہت زیادہ لکھتی رہیں اور بہت سے مہمانوں کو موصول ہوئیں۔ ایمی کارمائیکل کا انتقال 1951 میں 83 سال کی عمر میں ہوا۔ امی کی خواہش کے مطابق، ایک سادہ پرندوں کا غسل اس کی قبر کو نشان زد کرتا ہے۔

آج، Dohnavur فیلوشپ ابھی بھی کام کر رہی ہے اور ضرورت مند بچوں کی مدد کے لیے ایمی کارمائیکل کے وژن کو پورا کر رہی ہے۔ یہ پراپرٹی 400 ایکڑ سے زیادہ پر محیط ہے، اس میں پندرہ سے زیادہ نرسریاں ہیں، اور ایک ہی وقت میں تقریباً 500 بچے رہ سکتے ہیں۔

ایمی کارمائیکل نے 35 کتابیں لکھیں جن میں تاریخ، سوانح حیات اور شاعری کی کتابیں شامل ہیں۔ وہ جتنی فصیح و بلیغ تھی۔ The Things As they Are کے علاوہ، اس کی کتابوں میں گولڈ کورڈ، راج: بریگینڈ چیف، لوٹس بڈز، ٹوورڈ یروشلم، اور کلاسک دیوشنل اگر شامل ہیں۔ ایمی کی تحریریں عزم، ہتھیار ڈالنے، محبت اور گہری روحانی زندگی کے موضوعات سے بھری ہوئی ہیں۔ ایمی کارمائیکل کے کچھ اقتباسات یہ ہیں:

’’اگر اس کو دینے میں میرے پاس کوئی ذخیرہ ہے جس نے اتنا پیار کیا کہ اس نے اپنے عزیز کو میرے لیے دے دیا، تو میں کلوری محبت کے بارے میں کچھ نہیں جانتا ہوں‘‘ (اگر، صفحہ 48)۔

“اگر میں کسی چوٹ کو تھوڑا سا ٹھیک کرنے پر راضی ہوں، امن، امن، جہاں امن نہیں ہے؛ اگر میں متشدد لفظ ‘محبت کو بے ہنگم رہنے دو’ بھول جاؤں اور سچائی کے کنارے کو دو ٹوک کہہ دوں، صحیح باتیں نہیں بلکہ ہموار باتیں کہوں، تو میں کلوری محبت کے بارے میں کچھ نہیں جانتا” (اگر، صفحہ 25)۔

’’اگر میں کراس کے دامن کی خاک کے علاوہ زمین پر کسی بھی جگہ کی خواہش رکھتا ہوں، تو میں کلوری کی محبت کے بارے میں کچھ نہیں جانتا‘‘ (اگر، صفحہ 68)۔

“دعا اس بچے کی طرح ہے جو اپنے باپ کے گھر کا راستہ جانتا ہے اور سیدھا وہاں جاتا ہے۔ . . . کبھی کبھی رکاوٹیں آتی ہیں، اور پھر ایک پرانی کہانی ذہن میں آتی ہے: جب وہ ابھی بہت دور تھا، اس کے والد نے اسے دیکھا، اور ان پر ترس آیا” (گولڈ کورڈ، صفحہ 358)۔

“یہ کہنا کہ برائی تیزی سے ختم ہو رہی ہے اسے غائب نہیں کر دیتی۔ لیکن یہ شیطان کو دلکش بنا دیتا ہے، جو کبھی اتنا خوش نہیں ہوتا جتنا کہ جب اسے اور اس کے اعمال کو کم تر کیا جاتا ہے یا نظر انداز کیا جاتا ہے” (گولڈ کورڈ، صفحہ 29)۔

“ہم ایک دوسرے سے بہت زیادہ محبت نہیں کر سکتے، کیونکہ اس نے کہا ہے کہ ‘ایک دوسرے سے محبت کرو جیسا کہ میں نے تم سے محبت کی ہے۔’ ہم معیار کو بہت اونچا نہیں رکھ سکتے، کیونکہ یہ ہمارے بس میں نہیں ہے کہ ہم جیسے چاہیں آگے بڑھیں: یہ ہمارے رب کا ہے، اور وہ اسے بلند کر دیا ہے” (کوہیلا، صفحہ 46)۔

“دعا ہمارے دن کا مرکز ہے۔ نماز کو باہر نکالو، دن ٹوٹ جائے گا، بے ڈھنگ ہو جائے گا، ہوا میں اڑا ہوا تنکا ہو جائے گا۔”

“ہماری محبت ہونی چاہیے جو پوچھے ‘کتنا کم’ نہیں ‘کتنا’۔ وہ محبت جو اپنا سب کچھ بہا دیتی ہے اور اپنے محبوب کے قدموں پر کچھ ڈالنے کی خوشی میں خوش ہوتی ہے۔ محبت جو حد سے زیادہ ہنستی ہے — بلکہ، انہیں نہیں دیکھتی، ان پر دھیان نہیں دے گی اگر ایسا ہو” (خدا کا مشنری صفحہ 34)۔

“حیرت انگیز بات یہ ہے کہ ہر ایک جو بائبل پڑھتا ہے اس کے بارے میں کہنے کے لئے ایک ہی خوشی کی بات ہے۔ ہر سرزمین، ہر زبان میں ایک ہی کہانی ہے کہ جہاں وہ کتاب پڑھی جائے، صرف آنکھوں سے نہیں، دل و دماغ سے، زندگی بدل جاتی ہے۔ غم زدہ لوگوں کو تسلی ملتی ہے، گنہگار لوگ بدل جاتے ہیں، وہ لوگ جو اندھیرے میں تھے روشنی میں چلتے ہیں۔ کیا یہ سوچنا حیرت انگیز نہیں ہے کہ یہ کتاب جو اتنی زبردست طاقت ہے اگر اسے سچے دل سے کام کرنے کا موقع ملے تو آج ہمارے ہاتھ میں ہے؟ (آپ دیتے ہیں … وہ جمع کرتے ہیں، صفحہ 7)۔

Spread the love